مولانا کے کنٹینر کی چھت کمزور ہے!

ہر زبان پر مولانا فضل الرحمن کا آزادی مارچ ہے۔ لوگ پوچھتے ہیں مولانا کتنی دیر کے لیے آئے ہیں، کب واپس جائیں گے، کیا لے کر جائیں گے؟ یہ چند سوالات ہیں جو ہر کوئی جاننا چاہتا ہے۔ مجھے متحدہ اپوزیشن کے اس مارچ کو لاہور اور بعد ازاں اسلام آباد میں کور کرنے…

Read more

رانا ثنا اللہ جیل میں کیوں خوش ہیں؟

شہریار آفریدی کا اصرار مجھے لاہور کی احتساب عدالت کھیینچ کرلے گیا۔ وطن عزیز کی خوش قسمتی ہے کہ اس وقت پاکستان پر صالح اور پاکباز حکمران حکومت کر رہے ہیں، کوہاٹ کے شہریار آفریدی انہی میں سے ایک ہیں۔ آفریدی قبیلے کے اس فرزند کا یہ قول ”میں نے جان رب کو دینی ہے“…

Read more

نواز شریف کی غیرت اور عدالت کا دروازہ

میاں نواز شریف کو ایک بار پھرکوٹ لکھپت جیل سے گرفتار کر کے لاہور کی احتساب عدالت لایا گیا تو عدالت میں سانس لینا مشکل تھا۔ یہی وجہ ہے کہ عین اس وقت جب نیب حکام نواز شریف کو عدالت میں لے کر پہنچے تو امیر مقام اور برجیس طاہر سمیت پنجاب اسمبلی کے کئی اراکین عدالت سے باہر آچکے تھے۔ نواز شریف عدالت میں جانے سے پہلے اپنے دکھ کا اظہار کرگئے کہ کاش انہوں نے مولانا فضل الرحمن کی بات مان کر اسمبلیوں سے استعفی دے دیا ہوتا۔ اب مولانا کے آزادی مارچ میں شرکت کے حوالے سے وہ تمام تر ہدایات تحریری طور پر اپنے چھوٹے بھائی شہباز شریف کو دے چکے ہیں۔

Read more

پانچ من مینڈک کہاں جارہے تھے؟

20 ستمبر کی صبح شاہدرہ کے رہائشی اظہر اسحاق اور پرنس مسیح کو پولیس ناکے پر روکا گیا۔ دونوں کے پاس موجود تھیلوں کی تلاشی لی گئی تو پولیس اہلکار دنگ رہ گئے ان تھیلوں میں بڑی تعداد میں مینڈک موجود تھے۔ پولیس اہلکاروں نے ان سے پوچھ گچھ کی تو پتا چلا یہ مینڈک…

Read more

پنجاب میں 8 ماہ کے دوران پولیس کے زیر حراست 16 ملزمان کی ہلاکت

میڈیا نے رپورٹ کیا، سوشل میڈیا پر کچھ لوگوں نے ویڈیوز پوسٹ کیں اور یہ باور کروایا کہ پولیس حراست میں وفات پانے والا صلاح الدین ایک پاگل، چور، ڈکیت، جھوٹا، دھوکے باز، مجرم تھا۔ ایک لمحے کے لیے مان لیا جائے کہ اس کے بارے میں کی جانے والی ساری باتیں ٹھیک ہیں تو کیا اس کے بعد اس کو مارنا فرض ہوچکا تھا؟ اب تو خود مجھے بھی یقین ہونے لگا ہے وہ پاگل تھا۔ آپ اس کے پاگل پن کا اندازہ یہاں سے لگائیں کہ تھانے میں بیٹھ کر پولیس والوں سے کہہ رہا تسی مارنا کتھوں سکھیا (آپ نے مارنا کہاں سے سیکھا؟ ) ۔ صلاح الدین نے وہ سب پوچھ لیا جو ہم نہیں پوچھ سکے۔

Read more

وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار کو رہا کرو

1973 ء میں جب ذوالفقار علی بھٹو نے سویلین چیف مارشل لا ء ایڈمنسٹریٹر کا عہدہ چھوڑ کر آئینی وزیراعظم کا منصب سنبھالا تو گجرات کے بوڑھے سیاست دان فضل الٰہی چوہدری کو صدارت کے منصب سے نوازا 1973 کے نئے آئین کے مطابق صدر کا عہدہ علامتی سربراہ مملکت کا تھا۔ صدر اتنا بے اختیار تھا کہ وزیراعظم اس کے دستخطوں کی تصدیق کرتا۔ جس تقریب میں صدر اور وزیراعظم دونوں نے شرکت کرنا ہوتی، بھٹو صاحب تقریب میں، اس وقت پہنچتے جب، صدر فضل الٰہی چوہدری پہنچ چکے ہوتے مقصد یہ ہوتا کہ انہیں اٹھ کر صدر کا استقبال نہ کرنا پڑے۔

Read more

کائرہ صاحب ہمیں معاف کردیجیے

چودھریوں کے گجرات سے ذرا ٓگے لالہ موسی ہے۔ جی ٹی روڈ کے ان راستوں سے کئی بار گزرنے کا اتفاق ہوا۔ مگر اس بار لالہ موسی کے قریب پہنچ کر مجھے اپنے سینے پر دباؤ سا محسوس ہونے لگا تھا۔ مین سڑک پر دور سے اس وسیع گھر پر لہراتا ہوا بھٹو کی پارٹی کا جھنڈا کوئی بھی دیکھ سکتا ہے۔ جی وہی لالہ موسی جب پنجاب کے بلدیاتی انتخابات میں پیپلز پارٹی کا صفایا ہوچکا تھا تو بھی لالہ موسی کے عوام نے جیالوں کو اپنی خدمت کے لیے چنا تھا۔ سڑک کے ایک طرف قمرالزمان کائرہ کی رہائش گاہ جبکہ دوسری جانب ڈیرہ ہے۔ ویسے تو یہاں ہمیشہ چہل پہل رہتی ہے مگر اس مرتبہ فضاء میں کچھ عجیب سا غم تھا۔

Read more

اللہ جی مجھے معاف کردیں گے؟

آفس سے فارغ ہوا تو گھر جانے کی جلدی تھی صبح دوست کے ساتھ طے ہوا تھا کہ رات کو ملاقات ہوگی۔ مجھے آفس سے پہلے گھر جانا تھا وہاں سے دوست نے میری طرف آنا تھا یہی پلان تھا۔ گھر جانے کے لیے میں نے اوبر ایپ کے ذریعے گاڑی منگوائی۔ گاڑی میں بیٹھتے ہی ڈرائیور نے پوچھا کہاں جانا ہے؟ میں نے راستہ سمجھانا شروع کردیا، اس نے سر کے اشارے سے بتایا کہ وہ راستہ سمجھ چکا ہے۔ گاڑی نے سفر شروع کیا تو ڈرائیورنے دوبارہ مجھے مخاطب کیا ”کیا یہاں پر کوئی مسجد ہے؟جی آگے کا پتا نہیں میرے آفس کے ساتھ ہی مسجد ہے میں نے جواب دیا۔ او ہ آگے کسی مسجد کا نہیں پتا آپ کو؟ چلیں میں خود ہی ڈھونڈ لیتا ہوں ڈرائیور نے سوال کر کے اس کا جواب بھی دے دیا۔ ”آ پ نے نماز پڑھنی ہے، کون سی نماز پڑھنی ہے؟ اس مرتبہ سوال میں نے پوچھا۔ عشاء کی نماز مختصر جواب آیا۔ مگر عشاء کی نماز تو آپ آرام سے پڑھ سکتے ہیں اس کا وقت تو ابھی ہے آ پ میرے گھر کے پاس والی مسجد میں نماز ادا کر لیجیے گا میں نے گاڑی چلانے والے لڑکے کی مشکل آسان کرنے کی کوشش کی۔

Read more

میں ہوں موٹیوشنل سپیکر

صبح دفتر جانے کے لیے تیار ہو رہا تھا۔ فون کی گھنٹی بجی میں نے جلدی سے کال ریسیو کی۔ جی میں موٹیویشنل سپیکرحامد بول رہا ہوں، مجھے آپ سے ایک ضروری بات کرنی ہے۔ جی بتائیے حامد صاحب موٹیویشنل سپیکر کا لفظ سن کر میں نے سنبھل کر جواب دیا۔ ”مجھے پتا چلا ہے…

Read more