فرض کرو ابھی اور ہو اتنی آدھی ہم نے چھپائی ہو

ڈاکٹر مجاہد مرزا بیسویں صدی کی چھٹی اور ساتویں دہائی کے معروف ترقی پسند طالب علم رہنماؤں میں شمار ہوئے۔ ان کی آب بیتی ”پریشاں سا پریشاں“ پر سادہ لفظوں میں ابنِ انشا کے بقول یہی کہا جا سکتا ہے کہ

”فرض کرو یہ جی کی بپتا جی سے جوڑ سنائی ہو۔
فرض کرو ابھی اور ہو اتنی، آدھی ہم نے چھپائی ہو ”

Read more