پشتون تحفظ موومنٹ کو ریاست کی مسیحائی درکار ہے، جراحی نہیں

پاکستان نے وجود میں آنے کے بعد جن دو چیزوں میں بے پناہ ترقی کی ہے وہ غداری اور کفر کی اسناد بنانا اور انہیں تقسیم کرنا ہے۔ 50 کی دہائی سے غدار اور کافر کافر کا یہ کھیل رچایا گیا اور آج اکیسویں صدی کی دوسرے دہائی کے اختتام کے قریب بھی یہ کھیل…

Read more

جسٹس قاضی فائز عیسی اور عدلیہ کی متنازع تاریخ

ایک ایسا عدالتی نظام جو معاشرے کو مثالی انصاف دینے میں ناکام ہو جائے اور ایک ایسی عدلیہ جس کے ماتھے پر جسٹس منیر سے لے کر جسٹس ثاقب نثار جیسے منصف آمریت کی راہ ہموار کرنے میں پیش پیش رہ کر داغ لگا چکے ہوں وہاں جسٹس قاضی فائز عیسی جیسے منصف کی موجودگی عدالتی نظام اور عدلیہ کی بقا کے لئے آکسیجن کا کام انجام دیتی ہے۔ جسٹس قاضی فائز عیسی اپنے بے باک اور نڈر فیصلوں کے باعث ان حلقوں کو کھٹکتے ہیں جنہوں نے دن رات ایک کر کے مصنوعی سیاسی عمل کو جنم دیا۔

قاضی فائز عیسی کا تحریک لبیک کے فیض آباد دھرنے سے متعلق فیصلہ ایک ایسا عدالتی فیصلہ ہے جس کی نظیر ہمیں پاکستان کی عدالتی تاریخ میں بہت کم دکھائی دیتی ہے۔ جس انداز سے قاضی فائز عیسی نے اس مقدمے کو ماہرانہ قانونی اور آئینی انداز سے نبٹایا اور مقتدر حلقوں کو فیض آباد دھرنے کی پشت پناہی کا ذمہ دار اٹھایا اسے دیکھ کر اندازہ ہوتا ہے کہ پاکستان کی دھرتی ابھی نڈر اور سچ بولنے والے افراد کے معاملے میں بانجھ نہیں ہوئی ہے۔ خیر قاضی فائز عیسی اس فیصلے کے بعد سے کچھ حلقوں کو کھٹکنے لگ گئے کیونکہ ایسا بہت کم ہوتا ہے کہ اعلی عدالتوں میں کوئی ایسا منصف آئے جو کسی بھی قسم کے دباؤ کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے آزادانہ اور منصفانہ قانونی فیصلے کرے۔

Read more

اسد عمر یا عمران خان نہیں، پس پردہ سیاسی کھیل ناکام ہوا ہے

سیاست کی روایت یہی ہے کہ یہاں پلک جھپکنے میں بساط الٹ جایا کرتی ہے۔ چند ماہ قبل “مقتدر حلقوں” کی راج دلاری تحریک انصاف کے ساتھ بھی کچھ یہی ہوا ہے اور تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان نوشتہ دیوار پڑھنے کی بجائے کبوتر کی مانند آنکھیں بند کر کے خود کو اس خوش…

Read more

ہوا تبدیل ہو چکی ہے

اقتدار کا کھیل سانپ اور سیڑھی کی مانند ہوتا ہے جہاں کب اور کیسے مسند اقتدار پر فائز بزرجمہروں کو ان کی نادانی یا سانپ سیڑھی کا کھیل رچانے والے ڈس لیں بالکل پتا نہیں چلتا۔ ملک میں آج کل بالکل ہی ایک ایسا منظر نامہ تشکیل پاتا جا رہا ہے۔ عمران خان کو اقتدار میں لانے والی قوتیں ان سے کام لے چکی ہیں۔ عمران خان کے ذریعے پورے سیاسی نظام پر کالک تھوپی گئی اور دانستاً منتخب رہنماؤں کو نیچا دکھایا گیا۔ عمران خان اور تحریک انصاف کی ریاست چلانے کی نا اہلیت کو مقتدر قوتیں بھی پہلے سے جانتی تھیں اور بہت سے نقاد بھی۔

لیکن انہیں اس لئے میدان میں اتارا گیا کہ ایک طرف تو مسلم لیگ نواز کو اس کی نافرمانی کی سزا دی جائے اور دوسری جانب جمہوریت کے نظام سے عوام کو مزید بدظن کیا جائے۔ وہ پیج جس پر حکومت وقت اور مقتدر قوتیں اکٹھا ہونے کا دعوی کرتے تھے اب سرے سے ہی پھاڑ پھینکا گیا ہے۔ پنجاب میں عثمان بزدار کی نا اہل حکومت اور وفاق میں اسد عمر کی ناقص معاشی حکمت عملی نے تحریک انصاف کی حکومت کو چند ماہ کے اندر ہی غیر مقبول بنا دیا ہے۔

ڈالر کی اونچی اڑان ہو یا سونے کے بڑھتی قیمتیں، سوئی گیس اور بجلی کے بلوں میں اضافہ ہو یا ادویات کی بڑھتی ہوئی قیمتیں، تحریک انصاف کی حکومت کسی بھی مسئلے سے نبرد آزما ہونے میں ناکام دکھائی دیتی ہے۔ دوسری جانب آئی ایم ایف کی جانب سے بھی واضح پیغام دیا جا چکا ہے کہ جب تک پاکستان فنانشلُ ایکشن ٹاسک فورس کو شدت پسند تنظیموں کے مالیاتی امور کے خلاف کارروائی کے حوالے سے مطمئن نہیں کرے گا اس وقت تک آئی ایم ایف سے پاکستان کو قرضہ فراہم نہیں کیا جائے گا

Read more

دی ڈونکی کنگ

 بچوں کیلئے بننے والی فلم دی ڈانکی کنگ کا ٹریلر کیا جاری ہوا پاکستان کے ایوان اقتدار اور موجودہ حکومت کے ہمدرد ٹی وی چینلوں پر ایک قیامت بپا ہو گئ۔ دی ڈونکی کنگ کے کرداروں سے خود ہی اپنی اپنی مماثلت ڈھونڈنے والے حکمران، صحافی اور مقتدر قوتوں کو چائیے کہ وہ آئینے میں…

Read more

حقائق اور نظریات بھی بھلا قید کیے جا سکتے ہیں؟

عوامی سیاست کرنا تو وطن عزیز میں روز اول ہی سے گناہ کبیرہ کی فہرست میں شمار کیا جاتا تھا لیکن اب معروضی حقائق پر مبنی صحافت بھی گناہ کبیرہ کی اس فہرست میں شامل کر دی گئی ہے۔ خلیل میاں جیسے صحافیوں اور پیرا شوٹ ٹی وی اینکرز کو جھوٹ کی فاختائیں اڑانے کی…

Read more

کٹھ پتلی حکومتوں کی خارجہ پالیسی میں کوئی ساکھ نہیں ہوتی

اپوزیشن میں رہ کر جذباتی قسم کی باتیں اور بچگانہ حرکتیں کر کے ایک برین واش نسل کو اپنا مرید بنانا بے حد آسان کام ہے جبکہ حکومت میں آ کر پوری دنیا کو بیوقوف بنانا ایک ناممکن کام ہے۔ دھیرے دھیرے یہ حقیقت عمران خان اور ان کی جماعت تحریک انصاف پر آشکار ہوتی…

Read more

ہم انگریز راج کی غلام رعایا یا ڈھور ڈنگر نہیں ہیں، مائی لارڈ

قانون اندھا ہوتا ہے یہ تو سن رکھا تھا اور دیکھ بھی رکھا تھا لیکن قانون کی تشریح کرنے والے کو تو ہمیشہ بابصیرت سمجھا گیا۔ معزز چیف جسٹس آف پاکستان نے دیامیر بھاشا ڈیم کی تعمیر پر پہلے تنقید کرنے والوں کو وارننگ دی اور اب محترم ثاقب نثار نے ڈیم کی تعمیر میں…

Read more

جنگجوئی پھیلانے کی بجائے امن اور انسان دوستی کو اجاگر کرنا چاہیے

جنگ ہمیشہ تباہی و بربادی کا نشان سمجھی جاتی ہے اور جنگوں کو گلوریفائ کر کے ان کی یاد میں مخصوص دن منانا اس بات کی غمازی کرتا ہے کہ قتل و غارت گری اور سلحے کے دم پر دشمن پر غلبہ پانے کے فرسودہ نظریات آج بھی سماج میں بھرپور قوت سے پنپ رہے…

Read more

عمران خان کو ووٹ چور کے نعروں کی گونج میں ہی کام کرنا پڑے گا

بالآخر عمران خان پاکستان کے بائیسویں وزیراعظم منتخب ہونے میں کامیاب ہو گئے۔ عمران خان نے وزارت عظمی کی کرسی تک رسائی کے لئے جن کاندھوں پر سوار ہو کر کامیابی حاصل کی اصل مبارکباد کے مستحق بھی وہی ہیں۔ خیر چونکہ اب عمران خان نے جیسے تیسے کر کے اور ایمپائر کو ساتھ ملا…

Read more