ہندستانی انتخابات میں نریندر مودی کی پوزیشن کا جائزہ

ہندستانی تاریخ کے طویل ترین انتخا بات کے چھٹے مرحلے کے اختتام پر زمینی حقائق اورسیاسی تجزیہ نگاروں کے اندازوں کے مطابق ملک کے سیاسی منظر نامے میں ایک تبدیلی کی آہٹ سنائی دینے لگی ہے۔ تیسرے مرحلے کے انتخابات تک جس خوشگوار تبدیلی کا ہلکا سا احساس ہونے لگا تھا، چھٹے مرحلے کی پولنگ کے بعد اب یہ احساس مزید قوی ہو چلا ہے کہ نریندر مودی کی قیادت میں دوبارہ سے مرکزمیں حکومت سازی کے منصوبوں پر پانی پھر سکتا ہے۔

اب تک جن 844 نشستوں پر انتخابات ہوچکے ہیں اُن میں 2014 کے مقابلے بی جے پی کو کم ازکم پچاس سے ساٹھ سیٹوں کے نقصان کا اندازہ لگا یا جا رہا ہے۔ جن ریاستوں میں بی جے پی اوراس کے اتحادیوں کو سب سے زیادہ نقصان کا اندیشہ ہے، اُتر پردیش ان میں سر فہرست ہے جس میں عظیم اتحاد کے مسلم، یادو، دلت، جاٹ اور دیگر پسماندہ طبقات کے ووٹوں کے یکجا ہونے کی وجہ سے اور کانگریس کی دو درجن سے زیادہ سیٹوں پر بی جے پی کے خلاف اُمیدواروں کے انتخاب میں ٹیکٹیکل سلیکشن کی پالیسی اپنائے جانے سے بی جے پی کو بھاری نقصان اُٹھانا پڑ سکتا ہے۔

Read more

لوک سبھا الیکشن : مسلمانوں کے لیے آزمائش کی گھڑی

لمحہ بہ لمحہ بدلتے سیاسی منظر نامے اور اور بنتے بگڑتے سیاسی محاذ نے جہاں ایک طرف ملک کے سیکولر اور امن پسند طبقے کو تشویش میں مبتلا کر رکھا ہے وہیں بڑے بڑے صحافی اور ماہر تجزیہ نگار بھی اب تک اس بات کا صحیح اندازہ لگا پانے سے قاصر ہیں کہ 2019 کے…

Read more

2019 الیکشن: شہ اور مات کا کھیل تو ابھی شروع ہوا ہے

سیاست امکانات اور ممکنات کا بے کراں سمندر ہے۔ اس میں جتنی گنجائشیں اور متبادل ہوتے ہیں شاید عام انسانی ذہن اس کا تصور بھی نہیں کرسکتا۔ 2019 کی آمد سے قبل بی جے پی اُتر پردیش کے تعلق سے کافی مطمئن نظرآرہی تھی۔ تمام سروے اور میڈیا رپورٹس اُتر پردیش میں بے جی پی…

Read more

لمحہ فکریہ: فرقہ بندی کے خلاف قرآن کا انتباہ اور مولویوں کی فتنہ انگیزی

(ادارتی نوٹ: ہم سب کی ادارتی ٹیم نئی دلی سے موصول ہونے والے اس مضمون کو نیک نیتی کے جذبے سے شائع کر رہی ہے اور تمام مسالک کا یکساں احترام کرتی ہے۔ اہل علم اس مضمون میں اٹھائے گئے نکات کی تائید یا تردید کرنا چاہیں تو ہم سب کے صفحات حاضر ہیں) حضرت…

Read more
––>