آزادی مارچ اور آئین میں موجود اسلامی شقوں کا دفاع

ایک جمہوری ملک میں موجود متفقہ آئین اور اس آئین کی اسلامی شقوں کا دفاع جبکہ ملک کے مقتدر حلقوں، حکمرانوں، میڈیا اور عدلیہ پر بیرونی دباؤ کے مبینہ الزامات ہو، ایک مشکل کاز ہے۔ مگر اس مشکل کاز کو جمعیت علماء اسلام اور اس کی قیادت کی پارلیمانی جدوجہد، سیاسی زندگی اور حکومتوں کے…

Read more

پاکستان کی نظریاتی اساس کا تعین آئین کرے گا یا بانیان پاکستان کا ناشتہ؟

روزنامہ جنگ میں آج کی سب سے بڑی خبر یہ ہے کہ عمرہ زائرین کی تعداد ٹیکس دہندگان سے زیادہ ہے۔ خبر کے مطابق اس سیزن میں کم وبیش 16 لاکھ پاکستانیوں نے عمرہ کی سعادت حاصل کی ہے (لفظ سعادت میری جانب سے ہے ) جبکہ ٹیکس ادا کرنے والے پاکستانیوں کی تعداد بارہ سے چودہ لاکھ کے درمیان ہے۔

Read more

پی ٹی ایم اور فوج: لڑائی کے فوائد

پی ٹی ایم اور فوج کے درمیان ہونے والے جھگڑے میں ظاہر ہے قصور وار پی ٹی ایم نے ہی ٹھہرنا ہے کہ کمزور ہے اور منصب، طاقت والوں سے مقابلہ ہے۔ جھگڑا ہونے یا نہ ہونے کے بارے میں ہمیشہ سے ایک ہی رائے چلی آتی رہی ہے کہ نہیں ہونا چاہیے۔ لیکن اگر…

Read more

جھوٹے سیاستدان اور نرم دل چیئرمین نیب

ہمارے سیاستدان سفید جھوٹ بھی اس خوبصورتی سے بولتے ہیں کہ اس پرسچے سچ کا گمان ہونے لگتا ہے۔ ان ظالموں نے نرم اور پیار کرنے والے دل کے مالک چئرمین نیب جاوید اقبال کو بھی معاف نہیں ان کو خواہ مخواہ ایک سفاک، ظالم اور جابر شخصیت کے روپ میں پیش کیا، ان کے مظالم بیان کیے، ان کی سنگدلی اور سیاستدان ان کی سفاکیت پر طرح طرح کی دلیلیں پیش کرتے رہے۔ اب تک حالات و واقعات سیاستدانوں کے اس الزام کی تائید کرتے رہے۔ اور ہر شخص جاوید اقبال صاحب کو سنگدل اور سفاک ہی سمجھتا رہا۔

Read more

مفتی تقی عثمانی پر حملہ، علم اور تہذیب پر حملہ

شیخ الاسلام مفتی محمد تقی عثمانی دامت برکاتہم علم، تقوی امن، شائستگی اور تہذیب کی علامت ہیں۔ کسی کو کبھی کوئی اذیت کیا پہنچائی ہوگی شاید کبھی سخت سست بھی نہ کہا ہو۔ مفتی صاحب کا اوڑھنا بچھوناعلم ہے درس وتدریس ہے تحقیق و جستجو ہے وعظ و نصیحت ہے تفسیر قرآن ہے حدیث ہے فقہ ہے اور دارالعلوم کراچی ہے۔ علمی دنیا میں عالم اسلام کے بلند پایہ متبحرعالم، فاضل اور رہنما ہیں۔ گذشتہ جمعہ جامعہ فریدیہ تشریف لائے۔

آپ سے علماء اور طلباء حد درجہ عقیدت رکھتے ہیں اور اس کا اظہار کم تر درجے میں مصافحے سے کرتے ہیں لیکن جامعہ فریدیہ کے منتظمین مفتی صاحب کے ضعف اور ایذاء سے بچاؤ کے لئے مسلسل اعلان کرتے رہے کہ کوئی مصافحہ کی کوشش نہ کرے طلباء اور علماء نے اپنی خواہشات کو قابو میں رکھا اور مصافحہ کے لئے کوئی دھکم پیل نہیں کی اور مصافحہ کرنے کی زحمت سے بھی مفتی صاحب کو محفوظ رکھا تاہم ان کی گاڑی کے نظروں سے اوجھل ہونے تک گاڑی کے ساتھ ساتھ رہے۔

Read more