آئنہ نما کی آئینہ کہانیاں

اگر کسی افسانہ نگار کو یہ ادراک ہو جائے، کہ اُس کے اندر قدرت نے کہانی کہنے کا کون سا ٹول رکھ دیا ہے، تو پھر وہ کہانی کار اِدھر اُدھر کی مارا ماری سے بچ جاتا ہے اور شروع ہی میں اس کے شہرِ ادراک میں، اُس کہانی کار کے لئے ایک راستہ بِچھ…

Read more

ہمارے اساتذہ کیا کر رہے ہیں؟

بریک ختم ہوتے ہی میں اپنا اردو کا پیریڈ لینے ساتویں کلاس کی طرف بڑھ گیا۔ پتہ نہیں کیوں آج میرا پڑھانے کو بالکل بھی جی نہیں کر رہا تھا بلکہ ہلکی پھلکی گپ شپ کے ساتھ ساتھ طالب علموں سے کچھ سننے سنانے کا موڈ بنا ہوا تھا جو میں اکثر کیا کرتا تھا، جس کی وجہ سے لڑکے بہت خوش رہتے تھے اور مجھے اپنے بہت قریب سمجھتے تھے۔ شاید یہی وجہ تھی کہ وہ مجھے اپنا دوست سمجھ کر مجھ سے کوئی بھی بات بلاجھجک کہہ دیتے تھے۔چہرے پر مسکراہٹ سجائے میں کلاس میں داخل ہوا تو سبھی طلباء احتراما ًاٹھ کھڑے ہوئے۔ کرسی پر بیٹھنے سے قبل میں نے ایک طائرانہ نگاہ دوڑا کر تمام لڑکوں کے چہروں کی تلاشی لی کہ کہاں کیا چل رہا ہے؟ میں ابھی پوری طرح سے ان کے چہروں کو پڑھ نہیں پایا تھا کہ اچانک کلاس کا سب سے دراز قد لڑکا ہاشم اپنی جگہ سے اٹھتے ہوئے بولا:”سر۔ ! آج کینٹین پر بہت رش تھا۔ عدیل نے مجھے پیچھے سے دھکا دیتے ہوئے کہا ہٹو آگے سے شیعہ کافر۔ “

Read more