‘دوسرے صفحے’ کے لوگوں کا وارث کون؟

سوالات اٹھ رہے تھے۔ کوئی تو ہو جو آگے بڑھ کر محض بات ہی کرلے۔ گھٹن اور تاریکی اتنی کہ کوئی رستہ نہ دکھ رہا تھا۔ ہوا بھی ایک ہی سمت میں چل رہی تھی۔ احتساب کے دل آویز نعروں سے مہنگائی کی چکی میں پستے عوام کو 'محظوظ' کیا جا رہا تھا۔ صاحب اقتدار…

Read more

نواز شریف کے پاس ہارنے کے لیے کچھ نہیں

ہوا میں خنکی شروع ہوتے ہی سیاسی موسم کی حدت میں بھی تبدیلی محسوس ہونا شروع ہوگئی ہے۔ نواز شریف کی خرابی صحت نے حکومت کو دفاعی پوزیشن میں ڈال دیا ہے۔ حکومت نے حالات کی سنگینی کا درست اندازہ ہونے کے بعد نواز شریف کو فوری طور ہر ہسپتال منتقل کیا۔ پہلے ایک دو…

Read more

مولانا فضل الرحمن، شہباز شریف اور نئی دلہن

پاکستان مسلم لیگ ن کے ایک سینئر رہنما کہتے ہیں کہ ان کی پارٹی کا حال اس بیوی جیسا ہے جس کا شوہر دوسری  شادی کر کے نئی نویلی دلہن گھر لے آیا ہے، اس کی خوب خاطرمدارت کی جا رہی ہے، نازنخرے اٹھائے جا رہے ہیں۔ اب پہلی بیوی اندر ہی اندر سے انتہائی…

Read more

وزیراعظم بے بس کیوں ہے؟

پاکستان کے عوام اکثر بات کرتے ہیں کہ ہماری قوم ڈنڈے کی زبان سمجھتی ہے۔ کاش ایران کی طرح کوئی خمینی آئے جو ہزاروں بے ایمان اور کرپٹ لوگوں کو سمندر میں پھینک دے یا انہیں سرعام پھانسیاں دے پھردیکھیں اس ملک سے جرائم اور بدعنوانی کا ہمیشہ کے لیے خاتمہ کیسے نہیں ہوتا۔ اور…

Read more

دنیا ہماری پکار کب سنے گی؟

نیویارک میں عمران خان سے سوال ہوا کہ ہم پکار پکار کر عالمی برادری کو کشمیر میں بھارتی جارحیت کے بارے میں آگاہ کررہے ہیں مگر کیا وجہ ہے کہ جوابأ ہمیں کسی ملک کی طرف سے کوئی حوصلہ افزا اشارے نہیں مل رہے۔ وزیراعظم نے جواب دیا کہ اور اس کے سوا ہم کربھی کیا سکتے ہیں۔ بھارت پر حملہ کرنے سے تو رہے۔ جنگ کے سوا ہم نے ہر ممکن کوشش کرکے کشمیر کے مسئلے کو اقوام عالم کے سامنے رکھ دیا ہے۔ بین الاقوامی میڈیا بھی مثبت کردار ادا کررہا ہے اگر ایسے ہی میڈیا کشمیر پر شورمچاتا رہا تو شاید بوسنیا کی طرح کشمیر پربھی عالمی برادری کوئی ایکشن لے لے۔

Read more

عثمان بزدار سیکھ رہے ہیں؟

ایک سال بیت گیا مگر عثمان بزدار وسیم اکرم پلس نہ بن سکے۔ آج بھی تحریک انصاف کے رہنماء اورکارکن چاہتے ہیں کسی طرح سے عثمان بزدار کی جگہ کوئی اور وزیراعلیٰ بنا دیا جائے۔ مگر اکیلے وزیراعظم عمران خان ماننے کے لیے تیار نہیں۔ وہ بضد ہیں کہ عثمان بزدار پنجاب کی تاریخ کا بہترین وزیراعلیٰ ثابت ہو گا۔

Read more

شمال کا حسن توجہ مانگتا ہے

گزشتہ ہفتے وادی کاغان جانے کا پروگرام بنا۔ لاہور سے بذریعہ موٹروے ایبٹ آباد سے 30 کلومیٹر پہلے شاہ مقصود تک کا سفر تو پرسکون رہا۔ اس کے بعد تقریباّ 6 گھنٹے کا وہی روایتی سفر، بے ہنگم ٹریفک اور قیام و طعام کی جگہوں کے فقدان جیسی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ فیملی کے ساتھ سفر کرتے وقت موٹروے کے انتخاب کا مقصد یہ بھی ہوتا ہے کہ راستے میں قیام و طعام کی سہولت موجود ہوتی ہے جو کسی نعمت سے کم نہیں جہاں کم از کم آپ بچوں کے ہمراہ نسبتاّ صاف ستھرے واش رومز استعمال کرسکتے ہیں اور قدرے بہتر کھانے پینے کی اشیاء میسر ہوتی ہیں۔

Read more

سراب کا تعاقب

72 سال سے سرابوں کا پیچھا کررہے ہیں کہ ہمارے ہاتھ کچھ نہیں آرہا۔ ہم کوئی بھی کام شروع کرنے سے پہلے اس کی پوری جانچ پڑتال اور تحقیق نہیں کر پاتے یا پھر ہمارے مشیر نالائق ہیں یا ہم کسی کی بات نہیں سنتے اور ٹھوکر کھا کر ہی واپس مڑتے ہیں جسے یو ٹرن بولتے ہیں۔ پھر ہم معصوم بن کر یہ عذر پیش کرتے ہیں کہ ہمیں تو اس کا اندازہ ہی نہیں تھا۔

سابق وزیراعظم نواز شریف نے مئی 2013 کے انتخابات کے بعد اپنا پہلا خطاب کرنے میں تین مہینے لگا دیے اس خطاب میں انہوں انتہائی حیرانی کا اظہار کیا کہ انہیں اندازہ ہی نہیں تھا کہ ملک کے حالات اتنے زیادہ خراب ہیں کیونکہ اپوزیشن میں رہتے ہوئے فرضی کابینہ بنانے کا یہاں رواج ہی نہیں۔ ہم تو صرف آخری لمحے جاگنے والی قوم ہیں۔ پنجابی میں کہتے ہیں ’بُوہے آئی جنج تے ونہو کڑی دے کن‘ یعنی دروازے پر بارات کھڑی ہے اوردلہن کے کان ابھی چھدوانے ہیں۔

Read more

آخری جنگ

شیخ رشید کہتے ہیں کہ پاکستان نے اپنی افواج کو 72 سال سے آج کے دن کے لیے تیار کیا ہے اور اب بھارت کے ساتھ آخری جنگ ہو گی۔ شعلہ بیاں وزیر ریلوے ہمیشہ سے ہی کشمیر کے معاملے میں انتہائی جذبات کا مظاہرہ کرتے رہے ہیں۔ اگرچہ 1998 میں جب پاکستان نے ایٹمی دھماکے کیے تو اپنے آپ کو سب سے دبنگ قرار دینے والے موصوف نے ڈر کے مارے جہاز کی فلائِٹ پکڑی اور ملک سے باہر چلے گئے جہاں انہوں ایک سفیر کے کمرے میں بیٹھ کر خبر سنی کے پاکستان نے کامیاب ایٹمی دھماکے کر دیے ہیں اور سب ٹھیک ٹھاک ہے۔

Read more

پاکستان تنہا کیوں رہ گیا ہے؟

جنوبی ایشیا آج پھر ایک دوراہے پر کھڑا ہے۔ ایک طرف دنیا کی طاقت ور ترین جمہوری قوت امریکہ افغانستان کی لمبی اور تھکا دینے والی جنگ سے نکلنے کے لیے بے چین ہے۔ ناقدین مختلف دھڑوں میں ایک لمبی لڑائی کا عندیہ دے رہے ہیں۔ دوسری طرف ایک فاشسٹ اور قوم پرست وزیراعظم نریندر مودی طاقت کے نشے میں دنیا کی سب سے بڑی جمہوری اور سیکولر ریاست میں اقلیتوں بالخصوص مسلمانوں کے بنیادی حقوق سلب کرنے پر تلا ہے۔ پوری دنیا کہ لبرل حلقوں میں تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے کہ کشمیرمیں بنتی نئی صورت حال کے بعد خطے میں پُرتشدد کارروائیاں مزید تیز ہو سکتی ہیں۔ جموں و کشمیر میں کرفیو اٹھنے کے بعد شدید ردعمل آنے کا خدشہ ہے۔

Read more