نیا امتحان۔ حکومت جائے گی یا ممبران اسمبلی؟

حکومت خطرے میں ہے اور وزیراعظم اراکین اسمبلی کا اعتماد حاصل کرنے کے لئے خوب تگ و دو کر رہے ہیں۔ وزیراعظم نے جہاں عوام کی فلاح و بہبود کے لئے تاریخی اقدامات کیے وہیں ان سے متعدد ایسی غلطیاں بھی سرزد ہوئیں جن کی وجہ سے اندر ہی اندر لاوہ پکتا رہا جو بالآخر آتش فشاں بن کر نمودار ہوا ہے۔

Read more

عمران خان: تارکین وطن کو لوٹا جا رہا ہے

یورپین ممالک میں جانے والے اکثر پاکستانی غیرقانونی طریقوں سے یورپ پہنچتے ہیں اور وہاں جا کر طویل جدوجہد کرنے اور بھوک اور تکالیف دیکھنے کے بعد ان ممالک میں سکونت کے کاغذات حاصل کرتے ہیں۔ کچھ پاکستانی تو ایجنٹوں کے ساتھ ڈنکی لگا کر جاتے ہیں اور کئی ممالک کی بارڈرز اپنی جان خطروں…

Read more

ساہیوال: کیا آپ چین سے سو جائیں گے؟

عام سا ایک واقعہ ہے ہزاروں خون آلود واقعات میں سے ایک۔ کٹے پھٹے لاشے دیکھ دیکھ کر یہ واقعہ بھی معمولی سا ہے چھوڑیں اس واقعے کو بھول جاتے ہیں۔ کون سا ہمارے اپنے بچے تھے۔ کون سا ہم مرے ہیں چھوڑیں سو جاتے ہیں

بچے ہی تو تھے دھکے دُھکے کھا کر پل جائیں گے ہمارے بچے تو ہمارے پاس ہیں چپکے سے سو رہے ہیں۔ سونے دیتے ہیں بس چپ چاپ سو جاتے ہیں صبح آنکھ کھلے گی تو نیا واقعہ ہو گا نیا مباحثہ اور نئی ہمدردیاں۔

چلیں سو جاتے ہیں۔ پھر ایک دن آئے گا۔ جب میں میں اور آپ اپنے بچوں کو گاڑی میں بٹھا کر کہیں جا رہے ہوں گے۔ ہلکی سی آواز میں ٹیپ پر گانے بج رہے ہوں گے، بچوں کے قہقہے اور ان کی ماں کی مسکراہٹ گاڑی کا اندرونی ماحول خوشگوار بنا رہی ہو گی۔ پاپا وہ دیکھیں کھیت کتنے پیارے ہیں۔ پاپا گاڑی روکیں میں نے یہاں سے چیز لینی ہے۔ بچے شور مچا دیں گے۔

Read more

کیا ڈاکٹر شاہد مسعود ڈارک نیٹ کے نشانے پر ہیں؟

ڈاکٹر شاہد مسعود پاکستان کے صف اول کے اینکرز میں شمار ہوتے تھے، ان کے نقطہ نظر کی نفی کرنے والوں کی تعداد بھی لاکھوں میں تھی اور ان کے حامی بھی لاکھوں میں ہیں۔ ڈاکٹر شاہد مسعود نے قیامت پر قیاس آرائیوں پر مبنی پروگرام سے شہرت حاصل کی۔ بلاشبہ معلومات سے بھرپور ان کے پروگرام نے وسیع پیمانے پر لوگوں کو متاثر کیا اور عوام الناس میں قیامت کے موضوع پر ایک معلوماتی مباحثے کا آغاز ہوا جو کافی لمبے عرصے تک جاری رہا۔

ڈاکٹر صاحب پھر حالات حاضرہ کے پروگرام پر آ گئے اور انہوں نے بلاشبہ اچھے پروگرام بھی کیے اور انہیں ملک بھر میں خوب پزیرائی بھی ملی۔

Read more

ڈی پی او ماریہ محمود کا ماتھا: دوسرا رخ

  صبح سے خاتون ڈی پی او پاک پتن کی جانب سے ایک بزرگ تاجر رہنماء کو گرفتار کروانے پر کافی لے دے ہو رہی ہے۔ صبح سے کوئی آدمی ایسا نہیں دکھائی دیا جس نے اس معاملے پر ڈی پی او کا ساتھ دیا ہو سب اس کی مذمت کر رہے ہیں۔ میرا نقطہ…

Read more

المشہور لارڈ نذیر احمد: بالآخر سیکٹر بی 5 کلیال پہنچ گئے

لارڈ صاحب برطانوی ہاوس آف لارڈز کے پہلے تاحیات رکن بنے تھے۔ پاکستان بھر میں انکے انتخاب پر خوب جشن منایا گیا اس وقت کے صدر پاکستان جنرل پرویز مشرف نے انہیں ریڈکارپٹ ویلکم دیا خوب پروٹوکول دیا مگر لارڈ صاحب کی بے چین طبیعت نے انہیں کبھی لارڈ نہیں بننے دیا وہ ہمیشہ بیرسٹر…

Read more

مشرقی پاکستان سے مغربی سرحد تک

وہ کالے بونے بدشکل بنگالی کہلائے جاتے تھے، تحریک پاکستان ڈھاکہ سے ہی شروع ہوئی تھی جب 27 تا 30 دسمبر 1906 کو ہندوستان بھر سے تین ہزار کے قریب مسلمان وفود نے ڈھاکہ میں منعقدہ کانفرنس میں شرکت کی جہاں تین روز کی طویل مشاورت کے بعد آل انڈیا مسلم لیگ کا قیام عمل میں لایا گیا، اجلاس کی صدارت نواب وقار الملک اور نواب محسن الملک (سیکرٹری محمڈن ایجوکیشنل کانفرنس) نے کی۔ محمڈن ایجوکیشن کانفرنس کے اس سے قبل شملہ اور لکھنو میں ہونے والے اجلاسوں میں برصغیر کے مسلمانوں کے لئے ایک نمائندہ سیاسی جماعت کے قیام پر فیصلہ ہو چکا تھا جس کو ڈھاکہ میں عملی جامہ پہنایا گیا۔ یہی مسلم لیگ بعد میں قیام پاکستان کی موجب بنی۔

Read more

تحریک لبیک پاکستان تنہائی کا شکار کیوں؟

پاکستان تحریک لبیک غازی ممتاز قادری کی شہادت کے نتیجے میں حادثاتی طور پر معرض وجود میں آئی تھی۔ ابھی تک یہ سوال اپنی جگہ موجود ہے اور جواب طلب بھی ہے کہ ممتازقادری کی پھانسی کے بارے میں جب پورے ملک میں کسی کو خبر نہیں تھی سوائے چند افراد کے تو پھر پھانسی…

Read more

وہ تیرہواں بچہ راہنما بنے گا یا نائب قاصد؟

حسب معمول ڈھلتی شام کے وقت عزیزم ثاقب جاوید راجہ کے ساتھ مقامی ریستوران میں چائے نوشی کے مابین گپ شپ جاری تھی کہ میری نظر ہمارے ٹیبل کے پاس ایک قدرے بڑے ٹیبل پر پڑی۔ 15 سال کی عمر کے نظر آنے والے کچھ بچے شاید ریسٹورنٹ پر چائے پینے آئے تھے تعداد میں…

Read more

قرض لینے دو!

وفاقی وزیرخزانہ اسد عمر تقریباً دو دہائیوں سے پاکستانی عوام کو قرضوں کے نقصانات اور معیشت کی زبوں حالی میں قرضوں کے کردار پر طویل لیکچر دیتے آ رہے ہیں، کبھی کبھار تو یہ عالم ہوتا کہ ایک ٹی وی چینل پر ایک گھنٹہ معیشت پر گفتگو کے بعد وہ دوسرے پر پہنچ جاتے اور…

Read more