قتل سے منسوب گاؤں اور اپنے دور کی مہنگی شادی!

اٹھارویں صدی کے آخری دہائیوں کی بات ہے۔ موجودہ راجستھان اور گجرات کے چند علاقوں کو لٹیروں اور ڈاکوؤں نے اپنا مسکن بنا لیا تھا۔ مگر حیرت کی بات یہ تھی کہ وہ نواحی علاقوں میں واردات نہیں کیا کرتے تھے، بلکہ دور کسی علاقے سے اپنا ہدف منتخب کیا کرتے تھے۔ اس زمانی میں…

Read more

کاپی سے کرپشن تک سندھ میں تعلیم کا حشر!

یوں تو ایک عرصے سے سندھ میں تعلیم کی صورتحال بدتر چلی آ رہی ہے، مگر پچھلے چند برسوں سے سول سوسائٹی اور میڈیا کے اثر انگیز کردار کے باعث سندھ حکومت کی متعلقہ وزارت بھی متحرک ہونے لگی۔ بند اسکولوں کی عمارتوں سے وڈیروں کے قبضے ختم کرانے کی کوششیں کی گئیں۔ غیر حاضری کے عادی اساتذہ کے خلاف بھی مہم چلائی گئی۔ مئجسٹریٹ کو بھی اسکول وزٹ کے پاور دیے گئے اور بجٹ بڑھانے کے ساتھ ساتھ، تعلیم کا معیار بہتر بنانے کے لیے کئی منصوبے بنائے گئے، مگر تاحال نتیجہ وہی ہے، جو برسوں سے نظر آتا رہا ہے۔

Read more

ایک قدیم دیہاتی کی عالمی مفکرین سے حیرت انگیز مماثلت

تقریباً چار صدیاں قبل صحرائے تھر میں ایک ایسا دیہاتی شخص موجود تھا، جو یوں تو مویشی چراتا تھا مگر اسے جانوروں اور جنگلات سے عشق تھا۔ پالتو جانوروں کے رویوں اور رہن سہن کو وہ عام لوگوں کی نسبت مختلف نظر اور سائنٹیفک انداز سے دیکھا کرتا تھا۔ ہمارے ہاں آج بھی جانوروں کی…

Read more

کیا سندھ میں ہر عوامی مسئلے کا حل احتجاج سے ہی مشروط ہے؟

اگرچہ آئین پاکستان میں عوامی حقوق اور حکومتی فرائض کے حدود کا تعین واضح طور پر موجود ہے۔ ہر ادارہ اور ہر فرد ان حدود میں رہ کر اپنا اپنا کام کرنے کے لیے پابند بھی ہے۔ مگر بدقسمتی سے ہمارے ہاں حکومتی نظام سے معاشرتی رویوں تک کہیں بھی کوئی توازن اور انصاف نظر نہیں آتا۔ چنانچہ معاملات میرٹ کے بجائے دیگر ترجیحات کے محتاج بنتے جا رہے ہیں۔پچھلے کئی برس سے سندھ حکومت کی انتظامی مشینری جس طرح اپنے فرائض میں فاش غفلتوں کی مرتکب ہوتی ہوئی نظر آئی ہے۔ اس طرز عمل نے حکومتی اداروں سے عوامی اعتماد کو تیزی سے متزلزل کیا ہے۔ چنانچہ عوامی سطح پر یہ رجحان تیزی سے پروان چڑھہ رہا ہے کہ حکومت اپنا فرض سمجھ کر کوئی مسئلہ حل نہیں کرے گی، بلکہ احتجاج کے ذریعے ہی حکومت کو مسائل کے حل کے لیے مجبور کیا جا سکتا ہے۔

Read more

سندھ میں اقتدار سے باہر ذاتی ووٹ بینک بچانے کے خواہاں سیاستدان!

 یوں تو پاکستان بھر میں عوام کی اکثریت کو ووٹ کاسٹ کرنے سے قبل یہ سوال ضرور متاثر کرتا ہے کہ ہمارا منتخب امیدوار/ پسندیدہ پارٹی آئندہ اقتداری سیٹ اپ میں پہنچنے کے کتنے امکانات رکھتے ہیں مگر یہ سوال سندھ میں اپنی شدت کئی گنا بڑھا لیتا ہے۔ کیونکہ سندھ میں عام آدمی کی…

Read more

دہشت گردی اور انسانیت کے نئے زاویے!

اگرچہ دنیا کے لیے دہشت گردی کے واقعات کوئی نئی بات نہیں، مگر سانحہ کرائسٹ چرچ کے بعد دنیا کے سامنے دہشتگردی اور انسانیت کے کچھ نئے زاویے ضرور نمودار ہوئے ہیں۔ دہشت گردی کو عام طور پر مسلمانوں سے منسوب کیا جاتا رہا ہے، مگر سانحہ کرائسٹ چرچ کے بعد اس خیال کو مزید تقویت ملی ہے کہ دہشت گردی کا کوئی مذہب نہیں ہوتا دہشتگردی مذہب، نسل یا قومیت وغیرہ کے سائے میں، کہیں بھی اور کبھی بھی رونما ہوسکتی ہے۔ سفید فام دہشت گردی کے تذکرے پہلے بھی ہوتے تھے مگر دنیا نے اس کی بھیانک شکل کرائسٹ چرچ میں دیکھی۔

Read more

سیاست میں جھوٹ کو کیش کروانے کے ایسے ویسے تماشے!

یوں تو عام طور پر سیاست میں سچ کا سکا ذرا کم ہی چلتا ہے۔ تقاریر سے بیانات تک کئی سیاستدان تھوڑا تھوڑا جھوٹ کا سہارا لیتے نظر آتے ہیں۔ مگر ایسا بھی نہیں ہے کہ سیاست کو تمام اخلاقی اور انسانی اقدار سے بھی الگ رکھا جائے یا پھر سیاستدانوں کو بول چال کے…

Read more

صحرا میں سونا، خوابوں سے حقیقت تک!

سونے کی تلاش انسانی فطرت کے لیے ہمیشہ متجسس مشغلہ رہا ہے۔ یہ قیمتی دھات کبھی ملکیت پسند آنکھوں میں دلربا خواب بن کر چمکتی رہی ہے، تو کبھی لوگوں کے لبوں سے دلچسپ موضوع بن کر اچھلتی رہی ہے۔ ایسے ہی لبوں نے کئی عشرے قبل یہ بات پھیلائی تھی کہ صحرائے تھر کے جنوب مشرق میں واقع کارونجھر کے پھاڑوں میں پارس پتھر موجود ہے، جو لوہے کو سونا بنا سکتا ہے۔ اس کے علاوہ ان پہاڑوں میں ایسی نایاب جڑی بوٹیاں بھی موجود ہیں، جو لاعلاج بیماریوں میں شفا بخش ہونے کے ساتھ ساتھ سونا بنانے میں بھی مددگار ثابت ہوتی ہیں۔

Read more

ٹرینڈ میکر پارٹی اور سندھ میں نئے کلچر کی افزائش

اس میں کوئی شک نہیں کہ پاکستان میں جمہوریت کے لئے سب سے زیادہ قربانیاں کسی پارٹی کے کارکنان نے اگر دی ہیں، تو وہ پاکستان پیپلز پارٹی کے جیالے ہیں۔ اس میں بھی کوئی شک نہیں کہ عوامی طاقت کے مظاہروں سے لے کر مزاحمتی سیاست کے طریقوں تک پیپلز پارٹی ایک ٹرینڈ میکر پارٹی رہی ہے۔ اس میں بھی کوئی مبالغہ نہیں کہ پیپلز پارٹی کی تاریخ مضبوط وفاق کی علامتوں اور سیاست کے روشن خیال حوالوں سے بھی عبارت ہے! مگر پ پ پ نے، بی بی کی شہادت کے بعد جس طرح بالائی ایوانوں سے عوامی دفاتر تک کرپشن کلچر کی ترویج روا رکھی ہے، اس نے سندھ کا ترقیاتی سفر بیحد سست کرنے کے ساتھہ ساتھہ، عوامی سطح پے جائز نائز، صحیح غلط اور اہل نا اہل کے درمیان تمیز کو بھی دھندلا کر دیا ہے۔

Read more

جسٹس مرکنڈے کا یوٹرن اور چند سوالات

ہمارے ہاں مفادات کے کاروبار میں یوٹرن تو لگتے رہتے ہیں، مگر علمی اور عقلی بنیادوں پے، سابقہ موقف سے دستبردار ہونا، اپنی غلطی تسلیم کرنا، یا پھر اپنے خیالات میں، حالات سے حاصل شدہ مشاھدات پے مبنی ترامیم کرنے کو معیوب سمجھا جاتا ہے۔ حالانکہ عقلی بنیادوں پے یوٹرن لینا خالص سائنسی عمل ہے۔…

Read more