مذہب کے نام پر دوہرے معیار

اس سے قبل کہ اصل معاملے کا ذکر ہو قارئین سے ایک سوال ہے کیا یہ سچ نہیں ہے کہ ہمارے ٹی وی کے اینکرز ہمارے کالم نگار ہمارے سیاستدان دن رات قوم کی کمزوریاں اور برائیاں اچھالتے اور قوم کو بدنام کرتے رہتے ہیں؟ یہ تو ایک قومی فریضہ اور شعار بن چکا ہے۔…

Read more

بچوں سے زیادتی کے کیسز میں والدین کا کردار

آج کل ہر چند دن کے بعد انٹرنیٹ پر کئی جگہوں پر لوگوں کا مطالبہ نظر سے گزرا ہے کہ بچوں کے ساتھ زیادتی کرنے والوں کو چند دن میں پھانسی دی جایا کرے۔ گذشتہ کچھ عرصے میں جو واقعات ہوئے ہیں ا ن کی روشنی میں یہ مطالبہ بالکل جائز تو لگتا ہے۔ مگر سزا دینے سے بچے واپس نہیں آسکتے۔اس لیے اس سے کہیں بڑھ کرضرورت ا س بات کی ہے کہ احتیاطی تدبیروں پر توجہ دی جائے۔ قومی سطح پر اس سے بچاؤ کے طریقے اختیار کیے جائیں۔ والدین اوربچوں کے سر پرستوں کو ایجوکیٹ کرنے کی ضرورت ہے۔ بہت ضروری ہے کہ ان کی تربیت کی جائے۔ اس طرح کے واقعات میں ایک بڑا ہاتھ مناسب حکمتِ عملی، احساس اور تربیت کافقدان ہے۔

Read more

ہم پاکستان چھوڑنے پر کیوں مجبور ہوئے؟

بہت بھاری دل کے ساتھ پاکستان کو خدا حافظ کیا۔ یقین آج بھی نہیں آ تا۔ کافی عرصہ تک دعائیں کیں کہ حالات سازگار ہوں۔ شہر میں امن کے لیے وظیفے کیے۔ بہت دعائیں کیں مگر حالات بد سے بدتر ہوتے چلے گئے۔ ہم دس بارہ سال افریقہ میں رہنے کے بعد امریکہ کا تین سال کا ملٹیپل ویزا چھوڑ کر پاکستان زندہ باد کے نعرے لگاتے ہوئے پاکستان آئے تھے۔ وہاں کی مٹی کی خوشبو ہمیں کسی عطر سے زیادہ عزیز تھی اور ہے۔ لیکن جب کسی جگہ پر آپ کے بچوں کی جان محفوظ نہ ہو۔ قدرتی خطرات کے علاوہ انسانی رویّوں کی سنگینی کی وجہ سے آپ کی جان مال عزت محفوظ نہ ہو تو آپ پر ہجرت فرض ہوجاتی ہے۔ خدا تعالیٰ فرماتا ہے کہ اگر ہجرت کی وجوہات ہوتے ہوئے کوئی صاحبِ استطاعت ہجرت نہ کرے تو خدا اس سے ناراض ہو جاتا ہے۔ اور ہجرت کرنے والوں پر اپنی جناب سے رحمت کے دروازے کھولتا ہے۔

Read more

استفادہ ءعام اور تحدیثِ نعمت کے لیے

انسان دیکھنے میں زندگی سے بھرپور تونگرو توانا لگتا ہے لیکن بعض اوقات ایک اچھے خاصے انسان کی ز ندگی د یکھتے ہی دیکھتے ہاتھوں میں آ جاتی ہے۔ شایدبیمار ہو کے بچنا بچ کر بیمار ہوجا ناپھر دوا کھانا اور صحت ہو جانازندگی کو کرنے کا ہے ا ک بہانہ

Read more

پاکستان تجھے سلام!

اڑتالیس سال بعد ہندوستان اور پاکستان کی افواج میں سے ائیر فورس نے ایک دوسرے کی ہوائی حدود پار کی گئیں۔ اس کی وجہ بنی ہندوستان کے وزیراعظم نریندر مودی کا پہلے پلوامہ میں ہونے والے حملے کا پاکستان پر الزام لگانا اور پھر اسی کو بنیاد بنا کر پاکستان میں مزعومہ جیشِ محمد کے…

Read more

چین میں مسلمانوں کی حالت

آج کل چین میں مسلمانوں پر ہونے و الے مظالم کی خبریں ہم جگہ جگہ انٹرنیٹ پر دیکھ رہے ہیں۔ اللہ جانے ا س کی جڑ میں کون سے عوامل ہیں۔ لیکن یہ بات تو مسلّم ہے کہ چینی لوگ اپنا ہدف حاصل کرنے کے لیے اپنی انگلی ہر ممکن طور پر ٹیڑھی کر سکتے ہیں۔ پہلے بھی اس قوم نے اپنی قوم کو ایک بچے کی اجازت کا فرمان جاری کر کے اپنی عوام کو قریبی رشتوں سے ایک مدّت تک محروم رکھا۔ جو کہ ہر انسان کا بنیادی حق ہے۔ اس پالیسی کی وجہ سے خالہ چچا پھوپھو ماموں وغیرہ کا رشتہ ان کے معاشروں میں عنقا ہو گیا ہو گا۔ لیکن ان کو کیا؟

چین ایک نہایت کثیرالآبادی ملک ہے۔ اس کے پاپولیشن اتنی ہے کہ ملک میں سمائے نہ بنے۔ شہروں کی گنجلک اور گنجان آبادی ا س کا دم گھوٹ رہی ہے۔ پانی کے ذخائر کی کمی۔ دوسرے وسائل کی کمی بھی ان کو نظرآ رہی ہے۔ ان کو جگہ درکار ہے۔ آنے و الے زمانوں کے لیے وسائل درکار ہیں۔ ایسے میں طویلے کی بلا بندر کے سر۔

مسلمان جو پہلے ہی اللہ کے چنیدہ ہونے کے زعم میں دوسروں کو قریب قریب حشرات الارض کا درجہ دیتے ہیں اور حقارت سے دیکھتے یعنی خود کو اللہ کا لاڈلا سمجھتے ہیں اوربڑی تعلّی سے یہ حق سمجھتے ہیں کہ کسی کا بھی جو حشر کرنا چاہیں کرییں۔ اپنی ریاست میں غیر مسلموں کو حقوق محدود دیتے ہیں جبکہ دوسروں کے ملک میں اپنے حقوق اور مراعات ٹھوک بجا کر لینا اپنا حق سمجھتے ہیں۔

Read more

گھریلو ملازمہ پر تشدد

وطنِ عزیز سے آئے دن ایک سے ایک لرزہ خیر وارداتوں کی خبریں آتی رہتی ہیں۔ پہلے تو یہ زیادہ تر مردوں کی بربریت کے حوالے سے ہوا کرتھیں اب اس خواتین بھی مقابلے پر حصہ ڈالنے لگی ہیں۔ عورت تو محبت کا استعارہ ہے۔ ممتا عورت کا اعزاز اور فخر ہے۔ ابھی ابھی ایک…

Read more

حکومت اور عوام

عوام الناس کو اس بات کا اندازہ نہیں کہ حکومتیں کتنی مضبوط اور با اختیار ہوتی ہیں۔ خاص طور پر تیسری دنیا کی حکومتیں جہان عوام کا بدحالی نے بیڑہ غرق کر رکھا ہوتا ہے۔ یہ جملہ کہ سب کچھ عوام ہیں اس کو سمجھنے کی ضرورت ہے۔ عوام طاقت کا سر چشمہ صرف اتنی دیر تک ہیں جب تک حکمران ان کے بل بوتے پر میدان نہیں مار لیتے۔ بعد میں یہ جملہ صرف ان کو بیوقوف بنانے کے لیے بولا جاتا ہے۔

جب کوئی حکومت بر سرِ اقتدار آ جاتی ہے تو چت بھی اس کی پٹ بھی اس کی ہو جاتی ہے اور عوام صرف مفعول بن کر رہ جاتے ہیں۔ ہمارے یہاں حکومت کا دائرہ ء عمل ایک تختہ سیاہ کی طرح ہوتا ہے جس پر وہ عوام کی قسمت کے فیصلے لکھ لکھ کر مٹاتی ہے۔ بلکہ اس کا ایجنڈا ملک اور قوم کے مفاد سے ورے ورے ہوتا ہے۔ حکومت جو فیصلے کرتی ہے عوام تھوڑے سے شور کے بعد اس کے آگے گھٹنے ٹیک ہی دیتے ہیں۔

Read more

ہمارا اخلاقی بحران

ایک نہایت دردناک وڈیوکلپ گردش میں ہے جس میں ا یک ہٹّا کٹّا نو جوان بندوق کے زور پہ ایک سیدھی سادی گھریلو خاتون کی نہایت فحش جملوں سے بے عزتی کر رہا ہے اور اسی پر بس نہیں کرتا بلکہ اس کی ناف کے نیچے بندوق کا بٹ بھی مارتا ہے۔ فرعون بنا یہ بھیڑیا نما وحشی بظاہر انسان تھا مگر حیوانوں سے بد ترنظر آرہا تھا۔ ویڈیو اسی پر بند ہو گئی حالانکہ مغلّظات ا ور مار پیٹ کا سلسلہ ہنو ز جاری تھا۔ اللہ جانے آگے اس نے اس خاتون کا کیا حشر کیا ہو گا۔ لگتا نہیں کہ وہ چپ ہوا ہو گا۔ بھلا ہو اس شخص کا جس نے یہ ویڈیو آن لائین لگا دی۔ اور حکام کو اس سے خبر ہوئی۔

Read more

وزیرِ اعظم جناب عمران خان صاحب سے ایک دردمندانہ اپیل

خبرہے کہ آپ کی حکومت نے نالوں اور پارکوں میں بنائے گئے غیر قانونی گھر والوں کو پندرہ دنوں میں گھر خالی کرنے کا حکم دے دیا ہے۔ اور سب جانتے ہیں کہ حکومت کا یہ حکم حتمی ہوتا ہے۔

پورے پاکستان میں رہائش گاہوں کو ڈھا کر لوگوں کو گھر سے بے گھر کیا جا رہا ہے۔ جبکہ نعرہ یہ تھا کہ پچاس لاکھ گھر بنائے جائیں گے۔ بنانے کی خبریں تو نظر نہیں آ رہیں البتہ ڈھانے گرانے کا سلسلہ روز افزوں ہے۔ ڈیم بھی ہنوز باتوں تک ہے۔

Read more