لبرل ازم کا زوال اور امرا شاہی حکومت: یووال نوح ہراری

بیسویں صدی کے اختتام پر یہ دکھائی دے رہا تھا کہ فاشزم، کمیونزم اور لبرل ازم کے درمیان لڑی جانے والی عظیم نظریاتی جنگوں کا نتیجہ لبرل ازل کے بے پناہ غلبے کی صورت میں نکلا ہے۔ جمہوری سیاست، انسانی حقوق اور فری مارکیٹ کیپٹل ازم بظاہر ساری دنیا کو فتح کرتے دکھائی دے رہے تھے۔ لیکن حسب معمول تاریخ نے ایک غیر متوقع موڑ لیا اور فاشزم اور کمیونزم کے انہدام کے بعد اب لبرل ازم ایک مشکل میں گرفتار ہے۔ تو ہم کس سمت جا رہے ہیں؟

سنہ 1938 میں انسان تین عالمی کہانیوں سے انتخاب کر سکتے تھے، 1968 میں صرف دو، 1998 میں ایک واحد کہانی رائج ہوتی دکھائی دی، اور 2018 میں ہمارے پاس کوئی کہانی نہیں بچی۔

Read more