عمران خان: کیا دائرہ مکمل ہونے کو ہے؟

تین شادیاں نمٹائیں۔ طلاقیں دیں، الیکشن لڑے، ہارے، پھر کچھ جیتے بھی۔ اسٹیج سے گرے، ٹھیک ہو گئے۔ انگوٹھیاں پہنیں، کلائی پر تسبیح لپیٹی، مزاروں پر ننگے پیر چل کر گئے، ماتھا ٹیکا تب کہیں جا کر یہ ہما پھڑ پھڑاتا ہوا سا سر پر آ کر بیٹھا۔ اس ہما کو گھیر گھار کر سر پر بٹھانے والے بھی با کمال لوگ ہیں۔

ہینڈسم تو تھے ہی۔ کرکٹ کے کھلاڑی تھے۔ ورلڈ کپ جیت کر تو گویا سب کے ہیرو بن گئے تھے۔ بولی وڈ کی حسینائیں اور برطانیہ کے بورژوا طبقے کی لیڈیز سب ہی فدا ہونے کو بیٹھی تھیں۔ نظر انتخاب جمائما پر پڑی۔ سب کچھ مل گیا تھا۔ اچھی بیوی، پیارے بچے، دولت، شہرت، لوگوں کی محبت۔ اسپتال بنا کر تو دنیا میں بھی مقبول ہو گئے۔ پھر یوں ہوا کہ ایک خواب نظروں میں بس گیا۔ وزیر اعظم بننے کا۔ اور اس خواب کے تعاقب میں چلتے چلتے اتنی دور نکل گئے کہ واپسی کی کوئی راہ نہ رہی۔

Read more

ذکر کچھ ایران کا۔۔۔ اور پھر بیاں اپنا

ایران سے واپس آئے دو ہفتے ہو چکے۔ قرنطینہ تمام ہوا۔ لگتا تو ہے کہ بخیر و خوبی یہ وقت گذر گیا۔ مڑ کر دیکھتے ہیں تو ایران کا قیام ایک عجیب سا خواب دکھائی دیتا ہے۔ مجھے ایران سے باہر نکلنے میں ہمیشہ مسئلہ درپیش رہا۔ ایک بار انقلاب ہو گیا، ایک بار شدید…

Read more

سفر ایران کی آخری جھلکیاں

آج ساس صاحبہ کی طرف گئے۔ منہ ناک ڈھانپ کر۔ ماسک سے مجھے الجھن ہوتی ہے۔ شہر میں بھی اب ماسک پہنے لوگ کم ہوگئے ہیں۔ ماسک بہت مہنگا ہے اور صرف ایک بار استعمال ہو سکتا ہے۔ روز روز کا خرچ عام انسان کی برداشت سے باہر ہے۔ ہوٹل کے ڈائنیگ ہال میں جو…

Read more

عورت کیا چاہتی ہے؟

8 مارچ عورتوں کا عالمی دن ہے۔ پوری دنیا میں یہ دن منایا جاتا ہے۔ بحثیں ہوتی ہیں، سمینار ہوتے ہیں۔ عورتوں کے حقوق پر بات ہوتی ہے۔ وعدے اور قول دیے اور لئے جاتے ہیں۔ لیکن پھر سب معمول کے مطابق چلنا شروع ہو جاتا ہے۔ عورت بھی اس کی عادی ہو گئی ہے۔…

Read more

وبا کے موسم میں ایران کی کچھ جھلکیاں

28 فروری۔ دن بے کیفی میں گذر رہے ہیں۔ اب ہم کم کم باہر جاتے ہیں کل ملیحہ {نند} کی طرف گئے۔ دن ادھر ہی گذارا۔ ٹریفیک کم تھی۔ سڑکوں پر لوگ بھی کم تھے۔ اکثر ماسک لگائے ہوئے ہیں۔ شہر سائیں سایئں کر رہا تھا۔  جمعہ کا دن ہوٹل کے کمرے میں گذرا۔ کمرا…

Read more

سفر ایران: کنار آب رکناباد و گلگشت مصلّا را

کتنے ہی برسوں سے ایران جانے کا پروگرام بن رہا تھا، لیکن میرا جانا نہ ہوا۔ پرویز تو کئی بار جا چکے لیکن مجھے تامل رہا۔ ایران سے بہت ساری یادیں وابستہ ہیں۔ اتنا خوبصورت ملک، گرمجوش لوگ، میٹھی زبان اور عظیم تاریخی اور ادبی ورثہ ۔ یہ سب مجھے بہت قریب سے دیکھنے کا…

Read more

دو دنیاؤں کے درمیانی پل پر بھیانک حادثے کی کہانی

مادام۔ میرا نام ماہم ہے۔ میں آج کل اردو سیکھ رہی ہوں۔ میری اردو ٹیچر نے مجھے آپ سے متعارف کرایا کہ آپ لکھتی ہیں۔ پردیس میں دیسیوں پر جو گزرتی ہے آپ کا موضوع رہا ہے۔ فیس بک پر آپ کو دیکھا۔ مسینجر پر رابطہ کر رہی ہوں۔ میں بھی اپنی کہانی سنانا اور…

Read more

عقل مندوں کو اشاروں پہ ہنسی آنے لگی

آپ نے ضرور یہ دیکھا ہوگا کہ کچھ لوگ محفل کی جان ہوتے ہیں۔ لوگ ان کے گرد جمع ہو جاتے ہیں غور سے ان کی باتیں سنتے ہیں۔ اور ایسے بھی دیکھے ہوں گے جن کی دو چار باتیں سننے کے بعد جمائیاں آنے لگتی ہیں۔  مجمع لگانا بھی ایک فن ہے۔ باتوں میں…

Read more

خوابوں کے دیوتا کی محبت میں گرفتار لڑکیوں کے لئے ایک تحریر

ہمارے معاشرے میں عورت کو کمزور کہا جاتا ہے۔ لڑکیاں ڈری ڈری سی، سہمی ہوئی سی اور مرد کو بہادر اور قوی سمجھا جاتا ہے۔ حقیقت میں یہاں کمزور اور بزدل مردوں کی کمی نہیں ۔ کمزور مرد لفاظی بہت عمدگی سے کرتا ہے۔ اپنے لفظوں کے پھولوں سے پورا گلدستہ بنا دیتا ہے۔عورتوں کی…

Read more

آپ بچوں کے والدین ہیں

ہم سب پر ڈاکٹر سہیل خالد کا مضمون کیا آپ کی اپنے بچوں سے دوستی ہے؟ پڑھا اور سوچ میں پڑ گئی۔ ڈاکٹر صاحب کے مضامین کی یہی خوبی ہے کہ وہ اپ کو سوچنے پر مجبور نہیں تو آمادہ ضرور کر دیتے ہیں۔ مجھے ان کے موقف سے بنیادی اختلاف ہے۔ والدین بچوں کے…

Read more