حضرت کا حجرہ اور مثنوی بے معنوی

آج کا سیٹ اپ کچھ اور طرح کا تھا۔ صوفہ نیا تھا اور کرسیوں کی بھی اچھی طرح چھاڑ پونچھ کر دی گئی تھی۔ میز پر تازہ پھولوں کا گلدستہ بھی تھا۔ عبدل عبدل آج دروازے پر کھڑے تھے اور ایک ایک آنے والے کو بصد احترام و تکریم سیٹوں پر بٹھا رہے تھے۔ حضرت…

Read more

آسٹریلیا والی لڑکی کی کہانی

صبا سے ملاقات سڈنی آسٹریلیا میں ہوئی۔ ہم ایک پارٹی میں مدعو تھے۔ میرے پاس کی کرسی پر ایک نہایت خوش اخلاق خاتون تھیں۔ دھیرے سے میرے کان میں بولیں" میں بن بلائی مہمان ہوں" پھر کھلکھلا کر ہنسی۔ " میں صبا ہوں۔ میلبورن میں رہتی ہوں۔ سڈنی ایک کام سے آئی تھی۔ میری دوست…

Read more

درد ہجرت کے ستائے ہوئے لوگ

لفظ ہجر سے نکلا یہ لفظ خود اپنی تعریف اور وضاحت کر دیتا ہے۔ اپنی مٹی اپنے گھر بار اور اپنے مقام کو چھوڑ کر کہیں اور جا بسنا ہجرت ہے اور یہ زیادہ تر بحالت مجبوری کی جاتی ہے۔ ہجرت کی تاریخ زمانہ قدیم سے جا ملتی ہے۔ وجوہات کئی ہیں۔ پرانے زمانے میں…

Read more

دانش کدہ میں دانشور کی دانش مندانہ گفتگو

آج اس نئے ہفتہ وار پروگرام کی ریکارڈنگ تھی۔ اس پروگرام کے روح رواں محترم دانش افکار ہیں۔ پروگرام کا فورمیٹ ایسا ہے کہ اینکر اور دانشور مختلف موضوعات پر بحث کریں گےاور دونوں ہی اپنے خیالات کا اظہار کریں گے۔ آنے والوں میں ایک پروگرام پروڈیوسر تھا۔ ایک نوجوان اینکر اور دو کیمرا مین۔…

Read more

اقبال مسیح سے اسلم احسن تک

بندہ مزدور کے اوقات تلخ ہیں۔۔۔ جی ہاں بہت ہی تلخ ہیں لیکن آج کے دن کے تو وہ ہیرو ہیں نا؟ آج ہم ان کی شان میں تقریریں بھی کریں گے، نغمے بھی گایں گے اور اچھے اچھے وعدے بھی کریں گے۔ وہ ہیرو ان سب سے بے نیاز اپنی روزی کی فکر میں…

Read more

وبا کے دنوں میں کچھ ہلکی پھلکی باتیں

صبح آنکھ کھلتے ہی عام طور پر پہلا خیال یہ آتا ہے کہ آج کا دن کسیے گذارا جائے۔ کیا جا کر بال کٹوا لیئے جائیں؟ ونڈو شوپنگ کی جائے؟ کسی دوست کو فون کر کے کسی کیفے میں ملنے کا کہا جائے؟ یہ سارے خیالات بس دو تین سیکینڈ میں آ کر گذر جاتے…

Read more

حضرت کا حجرہ

ایک پرانے وضح کی بنی کوٹھی کے بیسمنٹ میں کچھ میلے شکستہ سے صوفے پڑے تھے۔ ان کےساتھ کچھ کرسیاں بھی۔ ان صوفوں کرسیوں پر چند نوجوان لڑکے لڑکیاں بے چینی سے بیٹھے حضرت کے منتظر تھے۔ سامنے ایک رایئٹینگ ٹیبل تھی جس کے پیچھے ایک چرمی کرسی تھی۔ میز پر کئی موٹی موٹی کتابیں…

Read more

کھاریاں والے بنگلے میں کون رہتا ہے؟

ہوا یوں کہ ایک مقامی اخبار میں میرا ایک مضمون چھپا جو تارکین وطن کے بچوں کے بارے میں تھا۔ یہ بچے دو مختلف ثقافتوں میں پل رہے ہیں اور کنفیوژن کا شکار ہو جاتے ہیں۔ گھر اور باہر کی مختلف دنیایں، والدین کی مصروفیات اور اپنی روایات، ارینجیڈ یا جبری شادیاں میرے مضمون کے…

Read more

گریٹا تھن برگ کے حساس دل سے کورونا کی اجاڑ گلیوں تک

ابھی ابھی ہی تو گلوبل وارمنگ کی باتیں ہو رہی تھیں کہ اگر ہم نے آلودگی پو قابو نہ پایا تو کیسے یہ دنیا تباہ ہونے والی ہے بچاری وہ سویڈن کی ننھی سی بچی گریٹا تھانبرگ ماحول کو بچانے کی سر توڑ کوششیں کر رہی تھی۔ اداس سا چہرہ، لمبے بالوں کی چٹیاں اور…

Read more

عمران خان: کیا دائرہ مکمل ہونے کو ہے؟

تین شادیاں نمٹائیں۔ طلاقیں دیں، الیکشن لڑے، ہارے، پھر کچھ جیتے بھی۔ اسٹیج سے گرے، ٹھیک ہو گئے۔ انگوٹھیاں پہنیں، کلائی پر تسبیح لپیٹی، مزاروں پر ننگے پیر چل کر گئے، ماتھا ٹیکا تب کہیں جا کر یہ ہما پھڑ پھڑاتا ہوا سا سر پر آ کر بیٹھا۔ اس ہما کو گھیر گھار کر سر پر بٹھانے والے بھی با کمال لوگ ہیں۔

ہینڈسم تو تھے ہی۔ کرکٹ کے کھلاڑی تھے۔ ورلڈ کپ جیت کر تو گویا سب کے ہیرو بن گئے تھے۔ بولی وڈ کی حسینائیں اور برطانیہ کے بورژوا طبقے کی لیڈیز سب ہی فدا ہونے کو بیٹھی تھیں۔ نظر انتخاب جمائما پر پڑی۔ سب کچھ مل گیا تھا۔ اچھی بیوی، پیارے بچے، دولت، شہرت، لوگوں کی محبت۔ اسپتال بنا کر تو دنیا میں بھی مقبول ہو گئے۔ پھر یوں ہوا کہ ایک خواب نظروں میں بس گیا۔ وزیر اعظم بننے کا۔ اور اس خواب کے تعاقب میں چلتے چلتے اتنی دور نکل گئے کہ واپسی کی کوئی راہ نہ رہی۔

Read more