لاہوڑی جیالے کا کھلا خط


 سلام بنام عوام!!

لاہوڑ کے ساڑے جیالے مجھے اچھی طڑح جانتے ہیں‘ میں بھولا بٹ آف گوالمنڈی ہوں جس نے 1979ء میں ڑیگل چوک میں جنڑل ضیا الحق اوڑ ماڑشل لاء کے خلاف نعڑے لگائے تھے اوڑ پھڑ 2 سال قید ڑہا تھا ‘10 کورے بھی کھائے مگڑ اُف تک نہیں کی تھی۔ جمہوڑیت کی بحالی اوڑبھٹو ازم کے لیے طویل جدوجہد کی مگڑ اب میں تھک چکا ہوں ۔دونوں بیٹے عمڑان خان کی پاڑٹی میں شامل ہو گئے ہیں۔ مگڑ میں اوڑ میڑی بیٹی اب بھی پیپلز پاڑٹی کے ساتھ ہیں اوڑ اسے ہی ووٹ دیتے ہیں۔ ہم دونوں بھٹو اوڑبے نظیڑ کو یاد کڑ کے ڑوتے ہیں۔ ملکی اوڑ بین الاقوامی صوڑتحال پڑ میڑا اپنا تجزیہ ہوتا ہے ،کوئی اس سے اتفاق کڑے یا نہ کڑے مجھے فڑق نہیں پرتا ۔آج کھلے خط کے ذڑیعے میں اپنے جذبات عام کڑنا چاہتا ہوں۔

میں سمجھتا ہوں نوازشڑیف نے جو بویا وہی کاٹ ڑہا ہے ۔شہید بے نظیڑ بھٹو کے خلاف اس نے اوڑ اس کی پاڑٹی نے کیا کیا تھا؟ بے نظیڑ بھٹو اوڑ آصف زڑداڑی کے غیر ملکی اکائونٹس اوڑ اثاثوں کے خلاف مہم چلائی اور پھڑ ججوں کو فون کڑ کے بے نظیر بھٹو کو سزا دلوائی پیپلز پاڑٹی کو بحیڑۂ عڑب میں پھینکنے کی بات کی، یوسف ڑضا گیلانی کو نااہل کڑوانے کے لیے میمو گیٹ کیس میں کالا کوٹ پہن کڑ خود عدالت میں پیش ہوئے سب کچھ ویسے ہی ہوڑہا ہے ۔اسی لیے ولیم شیکسپیئڑ نے کہا تھا کہ ”پہیہ پوڑا چکڑ کھا چکا ہے‘‘ سو جو دوسڑے کے خلاف کیا تھا اب اسی کا خود شکاڑہیں۔ میڑے لیڈڑ آصف زڑداڑی نے مصالحت کی سیاست کی کوشش کی مگڑ آصف زڑداڑی ان سے دوڑ ہو ڑہے ہیں۔”آصف زڑداڑی سب پڑ بھاڑی اس کی سیاست ڑواداڑی ‘زڑداڑی پر جان بھی واڑی ‘‘

میں تو جیالا ہوں اس لیے کھل کڑ بات کڑتا ہوں یہاں یہ تو بہت ذکڑ ہوتا ہے کہ بھٹو خاندان اتنی باڑ بڑسڑ اقتداڑ آیالیکن یہ کوئی ذکڑ نہیں کڑتا کہ ایک ہی خاندان کے دو ا فڑاد نے منتخب وزڑائے اعظم کے خلاف فیصلے دیئے سُسر محتڑم المقام جسٹس (ر) نسیم حسن شاہ نے وزیڑاعظم ذوالفقاڑ علی بھٹو کو جسمانی پھانسی دی تو داماد فاضل جسٹس آصف سعید کھوسہ نے دو کڑپٹ وزڑائے اعظم سید یوسف ڑضا گیلانی اور نوازشڑیف کو

اپنے قلم سے سیاسی پھانسیاں دیں ۔ظاہڑ ہے یہ بڑے تاڑیخی فیصلے ہیں لیکن کیا آج تک کسی جج کے خلاف بھی تاڑیخی فیصلہ آیا ہے ؟جسٹس شیخ ڑیاض اور جسٹس اڑشاد حسن خان‘ جسٹس افتخاڑ چوہدری نے ماڑشل لاء کو جائز قڑاڑ دیا ،آئین میں تڑمیم کا حق دیا، ان کا کیا احتساب ہوا؟ جسٹس ڈوگڑ کے باڑے میں کیا کیا الزامات لگائے گئے مگڑ آخڑ میں ان کے خلاف کچھ ہوا؟ نہیں کچھ

بھی نہیں۔ ہو گا بھی کچھ نہیں۔

جناب! یہ ساڑا غصّہ صڑف وزیڑاعظموں کے خلاف ہوتا ہے‘ وہی غداڑ ہوتے ہیں ‘وہی کڑپٹ ہوتے ہیں اور وہی سزا پاتے ہیں ۔نہ جج‘ نہ جڑنلسٹ‘ نہ جڑنیل ‘یہ سب تو نہائے ہوئے ہیں۔

اے پیاڑی عوام!!

اصلی عظمت اور خبطِ عظمت میں بڑا فڑق ہوتا ہے، کئی فڑعون کئی ‘قاڑون،کئی جج اوڑکئی فاتح اپنی عظمت کے تمغے سجائے قبڑستانوں میں دفن ہیںاوڑ کوئی ان کی قبڑ پڑڑک کڑ فاتحہ بھی نہیں پرھتا، عظمت پھانسیاں دینے سے نہیں پھانسی چرھنے سے حاصل ہوتی ہے۔ مقبولیت ہواکے ڑخ پر اڑنے سے نہیں ہوا کے مخالف ڑخ اڑان سے ملتی ہے ٹھنڈے کمڑوں میں نوکِ قلم سے تاڑیخ بدلنے کی خواہش ڑکھنے والے عظیم نہیں ہوتے بلکہ سرکوں پڑ تاڑیخ بدلنے کے لیے خون بہانے والے عظیم ہوتے ہیں ۔اخلاق کے کھوکھلے میناڑوں میں بیٹھ کڑ اخلاقیات کا دڑس دینے سے آپ تاڑیخ میں امڑ نہیں ہوتے بلکہ جیلوں میں بیٹھ کڑ اپنے اصولوں پر مصلحت نہ کڑنے والے تاڑیخ میں سنہری حڑوف میں دڑج ہوتے ہیں ۔بھٹو نے جیسے جیل کاٹی اوڑجیسے پھانسی پڑچرھا وہ عظمت تھی اورجنہوں نے اس کو پھانسی دی وہ خبطِ عظمت کا شکاڑ تھے۔ ایک جج کے جنازے پَڑ مکھیوں نے حملہ کڑ دیا اوردوسڑے جج کے جنازے اوڑ افسوس پڑ ان کے ممدوح اوڑ آج کے حکمڑان تک نہیں آئے تھے حالانکہ انہوں نے ان فاضل جج صاحب کے اسمبلی بحال کڑنے کے تاڑیخی فیصلے پڑ انہیں ملک کاسب سے اونچا عہدہ دینے کا وعدہ کڑ ڑکھا تھا۔ بے نظیڑ بھٹوتو انتہا پسندوں کو للکاڑتے ہوئے شہادت پاکڑ خود تاڑیخ بن گئیں اوڑ وہ جج جنہوں نے انہیں سزا دی تھی انہیں خود سزا بھگتنی پری۔ موت کی آنکھوں میں آنکھیں ڈالنے والے ہیڑو ہوتے ہیں اوڑ عظمت پاتے ہیں جبکہ خبطِ عظمت کا شکاڑ لوگ تاڑیخ کے کورے دان کا حصہ بنتے ہیں۔

پیاڑے بھائیو!!

اگڑ تو تاڑیخ دائڑوں میں گھومتی ہے اوڑیہ پلٹ پلٹ کر پھڑ سے آتی ڑہتی ہے تو سن لیں‘ جب تک عدلیہ بھٹو کیس پر نظڑ ثانی نہیں کڑتی ،بھٹو کو باعزت بڑی نہیں کڑتی ، نظڑیہ ضڑوڑت کے تحت کئے گئے فیصلوں پر شڑمندہ نہیں ہوتی ،وزیڑاعظموں کو کٹہڑے میں کھرے کڑنے سے دستبڑداڑ نہیں ہوتی ‘اس وقت تک اس عدلیہ کے باڑے میں میڑا تاثڑ ٹھیک نہیں ہو سکتا۔ جب تک ایٹمی پڑوگڑام شڑوع کڑنے والے بھٹو کو غداڑ کہنے کی ڑسم ختم نہیںہوتی اوڑ پاکستان کو دو لخت کڑنے کے اہم ترین کڑداڑ یحییٰ خان کو قومی پرچم میں لپیٹ کڑ دفن کیا جاتا ڑہے گا اس وقت تک ڑیاست نہیں بدل سکتی ،ملک ٹھیک نہیں ہو سکتا۔

جناب والا!

میں تو اس دنیا سے جانے والا ہوں آخڑی دن ہیں، بس کہنا یہی چاہتا ہوں کہ سب کو بڑابڑ سمجھا جائے‘ انصاف ہو تو سب کے لیے ‘احتساب ہو تو وہ بھی سب کے لئے ‘کسی کو بھی مقدس گائے بنائیں گے تو ملک نہیں چلے گا!!


Comments

'ہم سب' کا کمنٹس سے متفق ہونا ضروری نہیں ہے۔ کمنٹ کرنے والا فرد اپنے الفاظ کا مکمل طور پر ذمہ دار ہے اور اس کے کمنٹس کا 'ہم سب' کی انتظامیہ سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

سہیل وڑائچ

بشکریہ: روز نامہ جنگ

suhail-warraich has 40 posts and counting.See all posts by suhail-warraich