سکول فیس پر سپریم کورٹ آف پاکستان کا فیصلہ

سالانہ سکول فیس بڑھانے پر والدین کی طرف سے دائر کیسز اور سکولوں کی طرف سے دائر اپیلوں کا تفصیلی فیصلہ بارہ ستمبر کو سپریم کورٹ کی طرف سے جاری کیا گیا۔ چونکہ یہ فیصلہ بہت سارے لوگوں کے لئے سود مند ہے تو اس کے چیدہ چیدہ پوائنٹ پر نظر ڈالتے ہیں تاکہ ہمارے سامنے معاملہ نکھر کر آ جائے۔

Read more

عمران خان صاحب، ہماری لاشوں کی داد رسی کریں

عمران خان صاحب، مجھے پہلے بھی ذاتی طور پر آپ سے کوئی بہت زیادہ امیدیں نہیں تھیں، اور اس کی وجہ بھی آپ ہی تھے کہ جس سٹیٹس کو کے لوگ آپ نے اپنے ارد گرد اکٹھے کر لیے تھے تو سوال ہی نہیں پیدا ہوتا تھا کہ آپ وہ کچھ کر سکتے جس کے آپ نے وعدے کیے تھے۔ مگر صرف یہ تسلی تھی کہ آپ جیسا ایماندار آدمی وزیراعظم ہوگا تو بہرحال نیچے کچھ نہ کچھ بہتری ضرور آئے گی۔

Read more

احمدی جواب دیتے ہیں

شکور بھائی چشمے والے، دنیا کے انیس ممالک سے آئے تقریباً تیس کے قریب اپنے اپنے ملک میں مذہبی منافرت کا شکار لوگوں کے ہمراہ، ٹرمپ سے کیا ملے کہ ارضِ پاک میں طوفانِ بدتمیزی مچا ہے۔ جس کے منہ میں جو آ رہا ہے شیرِ مادر کی طرح حلال سمجھ کر بولی جا رہا…

Read more

شکور بھائی چشمے والے، ٹرمپ اور قادیانی کارڈ

کچھ مہینے گزرتے ہیں اور ہمارے پاکستانی  ہم وطنوں کو پھر سے اپنے اجماعی و متفقہ عقیدہ ختم نبوت کی حفاظت کے لئے فیس بک کی راہوں پر لٹھ لے کر بھاگنا دوڑنا پڑتا ہے۔ کہانی کچھ یوں ہوئی کہ کچھ سال پہلے پنجاب پولیس نے ربوہ شہر میں اسی سالہ شکور بھائی چشمے والے…

Read more

ہم عرض کریں گے تو شکایت ہوگی

نیوزی لینڈ کی مسجد میں پچاس نمازیوں کی دردناک شہادت سب پر قیامت بن کر ٹوٹی۔ ہر آنکھ اشک بار ہے اور ہر دل درد سے پُر۔ انسان ہونے کی سب سے بڑی دلیل یہ ہے کہ ہمیں دوسرے انسان کی خوشی میں خوشی ملتی ہے اور دوسرے کے غم میں دکھ کا احساس ہوتا ہے۔ اس طرح کی بےوقت، بےرحمانہ اور تکلیف دہ موت پر تو صرف دکھ کا احساس نہیں ہوتا بلکہ ایک ایک شہادت کی بے بسی پر نظر کر کے اور ان کے چاہنے والوں پر ٹوٹے پہاڑ کو سوچ کر پل پل دل ڈوبتا ہے۔

پاکستان میں بھی اس دہشت گردی پر انتہائی غم و غصہ تھا۔ اور ہونا بھی چاہئیے تھا، مگر اس غم و غصے میں جو منافقت کا پہلو تھا اس پر لکھنا میں نے کچھ دن تک ادھار رکھا کہ وقت کے ساتھ ساتھ ہم سب کے سوچنے سمجھنے کی صلاحیت واپس آ جائے جو کہ اس ظالمانہ دہشتگردی کی وجہ سے کہیں کھو بیٹھے تھے۔

Read more

فیاض الحسن چوہان ہمارے معاشرے کی ہی تمثیل ہے

فیاض الحسن چوہان نے کل ہندو برادری کے بارے میں جو الفاظ استعمال کیے ان پر بڑی لے دے ہو رہی ہے۔ فیاض الحسن کو فارغ کر دینے کی بات کی جا رہی ہے وغیرہ وغیرہ جو کہ میرے نزدیک بہت پہلے ہی ہو جانا چاہیے تھا اور بات یہاں تک پہنچنی ہی نہیں چاہیے تھی مگر فیاض الحسن نے ایسا کیا کہا ہے جو پاکستان میں ہماری اکثریتی کا خیال نہیں ہے؟ چوہان نے تو وہی کچھ بولا ہے جو ہمارے ملک کے اکثریتی لوگوں کا خدائی فوجدار ہونے کے ناتے یقین ہے۔ہمارا تعلق عوام الناس سے ہے اور جن گلی محلوں سکولوں مدرسوں میں ہم سب پروان چڑھے ہیں وہاں ایسا کون سا درس دیا جاتا ہے جو ہمیں دوسرے مذہب کے بانیان، ان کے مذہبی پیشواؤں اور ان کے عقائد و اعمال کی تضحیک کرنے سے روکتا ہو؟ ہندوؤں کو تو چلو ہمارے توحید پرست پکے مسلمان نجس مشرک سمجھتے ہیں مگر اپنے ہی سرکاری و غیر سرکاری مسلمان کہلائے جانے والے فرقوں کے آبا و اجداد کے بارے میں بھی ہمارا مجموعی رویہ انتہائی تحقیر آمیز ہے۔

Read more

مشکل اردو میں انشا پردازی

ہمیں ایک دوست نے انتہائی صائب مشورہ دیا تھا کہ عوام الناس کے پڑھنے کے لئے لکھ رہے ہو تو عوام الناس کی زبان میں ہی لکھنا، دہائیوں قبل کی اردو زبان کے مشکل اور بھاری بھرکم الفاظ لکھ کر عوام الناس کو گمراہ و بددل کرنے کی قطعاً ضرورت نہیں ہے۔ ہماری کوشش ہوتی…

Read more

لمبی زندگی رحمت کی بجائے زحمت نہ بن جائے

ہم لوگ اکثر اس جملے کو کئی بزرگوں کی زبان سے سن چکے ہیں کہ پتر اللہ لمبی حیاتی دے (بیٹا اللہ لمبی زندگی دے)۔ پہلے تو خیر میں نے کبھی اس پر غور نہیں کیا اور اسے بزرگوں کے حسن اخلاق کے کھاتے میں ڈال دیا کرتا تھا مگر جیسے جیسے مرور زمانہ عمر…

Read more

شیخ نذیر، طنز و مزاح شاعری کا بھولا ہوا باب

کیسے کیسے نابغے ہم میں تھے جن کو ہم نے پہچانا نہیں ، جو کسی وجہ سے مشہور و معروف نہ ہو سکے اور زمانے کی بھول بھلیوں میں ہم سے کہیں کھو گئے۔ شیخ نذیر کی شاعری کسی بھی طور سے اپنے ہمعصروں سے کمتر نہیں تھی مگر شائد ان کا کلام رسائل میں…

Read more

جماعت احمدیہ، چوہدری ظفراللہ خان اورباؤنڈری کمیشن میں گورداسپور کی بحث

ہٹلر کے ایک وزیر پال جوزف گوئیبل سے ایک فقرہ منسوب ہے (جو کہ اصل میں اس کا ہے نہیں) کہ جھوٹ کو اگر بار بار بولا جائے تو کچھ لوگ اس جھوٹ کو سچ سمجھنا شروع ہو جاتے ہیں۔ سائیکولوجی میں اسے Illusory Truth Effect کہتے ہیں۔ ہمارے معاشرے میں یہ رواج پڑ گیا…

Read more