کچھ رہ جانے والی باتیں

وقت کی تنگی نہیں تھی کہ میں جو کہنا چاہتی تھی کہہ نہ پائی یا ٹھیک سے کہہ نہ پائی مگر حالات ضرور تنگ ہو گئے تھے۔ یہ قصہ ہے میری کتاب ”گمشدہ سائے“ کی تقریب ِ رونمائی کا۔ رونمائی ڈاکٹر خالد سہیل کر رہے تھے اور کتاب جس کا گھونگٹ اٹھا یا جا رہا…

Read more

ایک تھے دو شیر

یہ کہانی پہلے ایک شیر کی ہے اور پھر ایک اور شیر کی ہے اور پھر پرجا کی ہے اور پھر شیروں کی بدلتی جون کی ہے پھر اس کہانی کے آخر میں ایک سوال اٹھے گا کہ کیا شیر بھی لومڑی ہو تا ہے، جو مصالحت، مفاہمت اور عیاری کی ڈگر پر چلتی اور…

Read more

طرح طرح کے لوگ

حاسد لوگ جنہیں ہر وہ چیز بالکل نظر نہیں آتی جو ان کے پاس ہے اور ہر وہ چیز بڑی ہو کے نظر آتی ہے جو ان کے پاس نہیں ہے۔ اپنی کامیابی پر سب کو خوش ہوتا اور اسے پو رے ذوق و شوق سے سیلیبریٹ کرتے دیکھنا چاہتے ہیں لیکن کسی کی کامیابی…

Read more

جوتا مارو سالوں کو

یہ میرے الفاظ نہیں ہیں یہ وہ نعرے ہیں جو ایک علم کی طالبہ جامعیہ ملیہ اسلامیہ کے باہر اپنے ساتھی طالبعلموں کو پولیس کے ہاتھوں پٹتے، خون میں لت پت ہو تے دیکھ کر لگا رہی تھی، پورا نعرہ پڑھئیے ؛ بی جے پی کے دلالوں کو جوتا مارو سالوں کو اور وہ صرف…

Read more

یک طرفہ محبت

یک طرفہ محبت اوربھیک میں کچھ فرق نہیں ہے بھی تو کم از کم مجھے نظر نہیں آتا۔ پاکستانی ڈراموں میں حلالہ اور زنائے محرم( انسسٹ) کے بعد جو سب سے زیادہ چیز دکھائی جاتی ہے وہ ہے یک طرفہ محبت۔ اور زیادہ تر یہ ذمہ داری صنف ِ نازک کے کندھوں پر ڈالی جاتی…

Read more

قوال پارٹی

ایک دفعہ کا ذکر ہے کہ ایک پسماندہ سے گاؤں میں ایک تھی قوال پارٹی، جس میں ایک بڑا قوال (جو اصل میں دو تھے مگر بڑے افہام و تفہیم کے ساتھ ایک دوسرے کی جگہ لے لیا کرتے تھے ) اور ان کے ساتھ سازندے، سنگتی، بھانڈ اور مختلف سازہوا کرتے تھے۔ اس پارٹی…

Read more

کینڈا میں کرتار پو ر کا معجزہ

کئی دفعہ بڑے بڑے سوالوں کا جواب نہ کسی علم میں نہ کسی دانش میں نہ دانشوروں کے ہاں اور نہ کتابوں میں ملتا ہے، وہ غیر متوقع طور پر کسی چھوٹی سی جگہ سے مل جاتا ہے۔ میرے ساتھ یہی ہوا، کرتار پور راہداری کے کھلنے کے معاملے کو لے کر میں بھی اوروں…

Read more

سارا شگفتہ کی زندہ لاش کا مقدمہ، مردہ روحوں کی عدالت میں

اکتوبر 13 1954 کو پیدا، اور 4 جون 1984 کو ٹرین کے نیچے آکر مر جانے والی سارہ شگفتہ جو زندگی کی صرف انتیس بہاریں ہی دیکھ پائی تھی۔ اس سے میری ملاقات لگ بھگ 2005 میں اس کی کتاب ”آ نکھیں“ میں ہوئی، جو میرے ایک دوست نے مجھے نثری شاعری کی طرف راغب…

Read more

نتھو رام کا بھارت

جب گلاب سنگھ نے عہد نامہ امرتسر کے تحت 16 مارچ 1846 کو انگریزوں سے کشمیر خریدا تو ریاست کا کل رقبہ 84,471 مر بع میل تھا یعنی مہاراجہ کو زمین 155 روپے فی مربع میل اور ایک انسان سات یا سوا سات روپے فی کس میں پڑا۔ زمین کی ملکیت، خرید و فروخت سے…

Read more

منٹو کا الو کا پٹھا

سعادت حسن منٹو کی کہانی الو کا پٹھا  جس میں مرکزی کردار قاسم کے دل میں صبح اٹھتے ہی کسی کو الو کا پٹھا کہنے کی شدید خواہش ابھرتی ہے اور وہ اس خواہش کو دبانے اور اپنا دھیان بٹانے میں اس وقت تک مصروف رہتا ہے، جب تک ایک خاتون جس کی ساڑھی کا…

Read more