مسلم امہ کا سترنگا اچار ڈال لیجئے

نیل کے ساحل سے تابخاکِ کاشغر۔ ہمارے حرم کی پاسبانی کے لئے تو کوئی ایک مسلم نہیں کھڑا ہوا۔ ہمیں بطور پاکستانی ایک سوال خود سے پوچھنا چاہیے کہ آج پاکستان سفارتی سطح پر کہاں کھڑا ہے؟ اور اس پوری بھری دنیا میں کون ہمارے ساتھ ہے؟ کہتے ہیں کہ ملکوں کی سطح پر دوستی…

Read more

کشمیر میں کیا ہو رہا ہے؟

مقبوضہ جموں و کشمیر سے ایک جذباتی وابستگی ہر پاکستانی کے خون میں شامل ہے۔ نسلوں سے ہم ایک ہی سبق پڑھتے آئے ہیں۔ اس میں کوئی شک نہیں کہ مقبوضہ کشمیر میں ظلم و ستم کے پہاڑ توڑے گئے ہیں۔ لاکھوں کشمیری شہید کیے گئے ہیں اور اس سے کہیں بڑی تعداد میں لوگوں…

Read more

جنرل فیض، خدا کرے آپ آرمی چیف بنیں

وطنِ عزیز میں جسے اور کچھ نہیں ملتا وہ پاک فوج پر تنقید شروع کر دیتا ہے۔ جسے سازش کے تانے بانے بننے ہوں، وہ پسِ پردہ قوتوں کی طرف اشارہ کر دیتا ہے۔ اور قلمکار ویسے ہی بدنام ہیں۔ کسی پر بھی تنقید کر دیں، لازم ہے کہ حزبِ مخالف سے لفافہ وصول کیا ہوگا۔ پاک فوج کے ترجمان نے کہا بھی کہ میڈیا چھ مہینے مثبت رپورٹنگ کرے، لیکن یار لوگوں نے اس میں بھی مزاح کا عنصر ڈھونڈ لیا۔ اب میڈیا تو معدودے چند مستثنیات کے، راہِ راست پر آ چکا ہے، لیکن یہ جو انٹرنیٹ ہے یہ ہر فساد کی جڑ ہے۔

Read more

مجاہدینِ سوشل میڈیا اور سیاسی اخلاقیات کا زوال

عام انتخابات کو ایک سال ہوا۔ تاریخ کے دھارے میں ایک سال کچھ زیادہ نہیں۔ لیکن اس کا کیا کیجیے کہ تاریخ کا آخری تجزیہ بہت متوازن مگر بہت بے رحم ہوتا ہے۔ حکومت کے گزشتہ ایک سال اور آنے والے چار سالوں میں کارکردگی کا آخری تجزیہ تو بہت برسوں بعد ہو گا۔ عمران…

Read more

مجھے گلہ احتساب کرنے والوں سے ہے

سمجھ میں نہیں آتا احتساب کی کہانی کہاں سے شروع کروں۔ کچھ لوگ جو اپنے آپ کو دوسروں سے زیادہ عقلمند اور محبِ وطن سمجھتے ہیں، ہمیشہ سے سیاستدانوں کو شک کی نظروں سے دیکھتے آئے ہیں۔ کرپشن کے الزامات تو اب معمولی بات ہیں، بلکہ اگر کرپشن کا فگر چھوٹا ہے تو اور بھی شرمندگی کی بات ہے۔ کہانی احتساب کی بہت پرانی ہے۔ ایشیا کے چارلس ڈیگال سے شروع کروں تو ایبڈو جیسے قانون بنا کر بلامبالغہ سینکڑوں سیاسی رہنماؤں کو انتخابی سیاست کے لئے نا اہل کر دیا۔

Read more

محسنِ پاکستان کا جھوٹا بت!

ڈاکٹر عبدالقدیر کو پاکستان کے نیوکلئیر پروگرام کا خالق، ایٹمی سائنسدان، محسنِ پاکستان اور نجانے کیا کچھ کہا جاتا ہے۔ ہم بحیثیت قوم بڑی جلدی مرعوب ہو جاتے ہیں۔ اور پاکستان ہی نہیں، ایسا لگتا ہے کہ ہیروپرستی برصغیر کے عوام کے ڈی این اے میں شامل ہے۔ ڈاکٹر عبدالقدیر کی حب الوطنی اور ایٹمی پروگرام میں ان کے اہم کردار کو پہچاننا ضروری ہے، تاہم ریکارڈ کی درستگی اور اصل محسنوں کو جاننا بھی اتنا ہی ضروری ہے۔ ہمارے معاشرے میں پاپولر بیانیے سے ہٹ کر بات کرنا، دلائل سے حقائق کی جستجو کرنا اور ایسی بات کرنا جو نسل در نسل پڑھائی گئے نصابی بیانیے سے مطابقت نہ رکھتی ہو، بڑا مشکل کام ہے۔ یہ تحریر ایسی ہی ایک کوشش ہے۔

Read more

احترامِ رمضان کو وبالِ جان نہ بنائیں

مان لیا کہ پاکستان اسلام کے نام پر بنا، مان لیا کہ کوئی نظریہ پاکستان بھی تھا، مان لیا کہ قراردادِ مقاصد بھی برصغیر میں اسلامی نظام کے نفاذ کے لئے بہت ضروری تھی۔ مان لیا کہ اس ملک کی ستانوے فیصد آبادی مسلمان ہے، جن کی ایک غالب اکثریت روزہ رکھتی ہے۔ لیکن ہم یہ کیوں بھول جاتے ہیں کہ اس ملک کے پرچم میں ایک سفید رنگ بھی ہے۔ ریاست اور شہری انتظامیہ اس بات کا ادراک کیوں نہیں کرتی کہ بڑے شہروں میں دوسرے شہروں سے آکر کام کرنے والے لوگوں کی ایک بڑی تعداد رہتی ہے، جن کا گھر بار یہاں نہیں ہوتا، جن کے کھانے پینے کا واحد ذریعہ ہوٹل اور ڈھابے ہوتے ہیں۔

Read more

قرض کی مے کا جام اور تبدیلی کا کشکول

وہ ہمارے اور آپ کے پیارے مرزا غالب نے کیا خوب کہا تھا، قرض کی پیتے تھے مے لیکن سمجھتے تھے کہ ہاں رنگ لاوے گی ہماری فاقہ مستی ایک دن میرزا مغل زادے تھے، دہلی کی اشرافیہ میں سے تھے، زبان ان کے گھر کی لونڈی تھی، چند بار قرض کی مے پی بھی…

Read more

رویتِ ہلال فرض تو نہیں؟

چند روز سے رویت ہلال کے حوالے سے کافی گرما گرمی دیکھی جا رہی ہے۔ چاند نظر آیا یا نہیں نظر آیا؟ رمضان کب شروع ہو گا؟ عید کس روز ہو گی؟ یہ معاملات برسوں سے استہزا کا باعث بنتے نظر آتے ہیں۔ امسال بھی رویتِ ہلال کے لئے مرکزی رویتِ ہلال کمیٹی کا اجلاس…

Read more

گلیمر والے دھماکے اور بورنگ دھماکے

کیا آپ نے کبھی سنا کہ آج ہونے والا دھماکہ بہت اچھا تھا، بہت زیادہ دلوں کے حساسیت کے تار چھیڑ گیا، فلاں شہر میں ہونے والا دھماکہ بہت دل خوش کن تھا، فلاں ملک میں جو قتلِ عام ہوا، تو ہر شخص نے اسے سانحے کا رنج محسوس کیا؟ اور کبھی آپ نے سناں…

Read more