نوازشریف کے بعد عمران خان نے بھی قطری شہزادہ جاسم کے معاملے پر یوٹرن لے لیا


وزیراعظم عمران خان ماضی میں تلور کے شکار کے مخالف رہے ہیں لیکن اب انہوں نے اس معاملے پر بھی یوٹرن لے لیا ہے۔ وزیراعظم عمران خان کے دور حکومت میں بھی قطری شہزادے کو تلور کے شکار کا پروانہ مل گیا۔ شیخ فلاح بن جاسم نے شکار کے لیے ایک لاکھ ڈالر فیس جمع کرا دی۔ شکار کے لیے بلوچستان کا علاقہ جھل مگسی الاٹ کیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم عمران خان ماضی میں تلور کے شکار کے سخت مخالف رہے ہیں اور انہوں نے 2 سال قبل اس وقت کی حکومت کی جانب سے تلور کے شکار کی اجازت دینے پر کہا تھا کہ کبھی سوچا بھی نہ تھا کہ ایسا بھی دن آئے گا، جب تلور کا شکار ہماری خارجہ پالیسی کا ستون بن جائے گا۔ موجودہ وزیراعظم نے اس وقت خیبر پختونخوا میں برسر اقتدار اپنی جماعت کی حکومت کو تلور کے شکار کی اجازت دینے سے منع کر دیا تھا۔ انہوں نے بلوچستان میں احتجاج کی حمایت بھی کی تھی۔

ماضی میں سخت موقف رکھنے والے وزیراعظم عمران خان کا اب اس معاملے پر موقف تبدیل ہو چکا ہے۔ موجودہ حکومت میں قطری شہزادے کو شکار کا پروانہ مل گیا ہے۔ ادارہ برائے تحفظ جنگلی حیات کے مطابق قطری شہزادے شیخ فلاح بن جاسم کو شکار کیلئے بلوچستان کا علاقہ جھل مگسی الاٹ کیا گیا ہے اور قطری شہزادے کو 10 روز میں 100 تلوروں کے شکار کی اجازت ہو گی۔ قطری شہزادے کی جانب سے ان کے نمائندے نے تلور کے شکار کیلئے 29 نومبر کو کوئٹہ میں نیشنل بینک کی سٹی برانچ میں فیس جمع کرائی، ایک لاکھ ڈالر کی یہ خطیر رقم حکومت بلوچستان کو ملے گی جو پاکستانی روپے میں تبدیل کی جائے تو ایک کروڑ 40 لاکھ روپے کے لگ بھگ بنتی ہے۔ یاد رہے کہ ماضی میں تحریک انصاف کی قیادت تلور کے شکار کیلئے پاکستان آنے والے قطری شہزادوں کو بھی سزا دینے کا مطالبہ کرتی رہی ہے۔

(بشکریہ: آئی این پی)

image_pdfimage_print
Comments - User is solely responsible for his/her words


اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ ”ہم سب“ ایک مثبت سوچ کو فروغ دے کر ایک بہتر پاکستان کی تشکیل میں مدد دے رہا ہے تو ہمارا ساتھ دیں۔ سپورٹ کے لئے اس لنک پر کلک کریں