کیا روح عصر پہچاننے والے ہی انسانی تاریخ میں کامیاب ٹھہرے ہیں؟

نوٹ: اس مضمون کے بنیادی خیالات ”ول اینڈ اریل دیورانت“ کی کتاب ”دی لیسنز آف ہسٹری“ سے ماخوذ ہیں۔

فلسفہ کیا ہے؟ ”کل کے تناظر میں جزو کو سمجھنے کی اک عمیق کوشش“ ۔ فلسفۂ تاریخ کیا ہے؟ ”لمحۂ موجود کو گزرے ہوئے پل کی روشنی میں جاننے کی اک ادنیٰ سی کاوش“ ۔ پورا سچ بھلا کون جان پایا ہے! ہمیں تو اپنے ادھورے سچ کے ساتھ ہی اپنا سفر جاری رکھنا ہے۔ گود سے گور تک سیکھنے کا اک مسلسل سفر۔ امکانات سے مزین اور غیر یقینی صورتحال سے آراستہ۔ شاید، خدا کو جمود پسند نہیں ہے۔ ہر اٹھنے والا قدم، ہماری بصارت اور بصیرت میں وسعت پیدا کرتا جائے گا۔ ہر آنے والا لمحہ، گزرے ہوئے لمحات سے بہتر ہوتا چلا جائے گا۔

Read more

کیا اسلامی انقلاب جیسی اصطلاحات بیسویں صدی کی اختراع ہیں؟

حال ہی میں شائع ہونے والی کتاب، ”مذہبی انتہا پسندی“ (اسلامی انقلاب و حکومت اور جوانی بیانیہ) از شمس الدین حسن شگری کی ایک خاص بات یہ بھی ہے کہ اس میں مکتبہ خلافت ( اہل سنت) اور مکتبہ امامت ( اہل تشیع) دونوں مکاتب فکر کے قدیم اور جدید اہل علم کی آرا کو…

Read more

پرچم ستارہ و ہلال پہ سورج کیوں نہیں ہے؟

سورج ہو، یا چاند یا کوئی ستارہ، انسان کو ہمیشہ سے ان میں ایک عجیب سی کشش محسوس ہوتی رہی ہے۔ انسانی تہذیب کے مختلف مراحل میں اس آفاقی تثلیث نے زمین کے باسیوں کو افلاک کی بلندیوں سے جوڑا ہے۔

کسی ستارے سے چاند تک کا سفر ہو یا پھر چاند سے سورج تک کا یا پھر ان انجم ثلاثہ سے بھی آگے کا ان دیکھا انسانی ذہنی سفر ہو۔ تاریخ کی شہادت ہے کہ انسانی تہذیب اور سماج ہمیشہ سے ارتقا پذیر رہا ہے۔ اور شاید یہی بن دیکھے کا اثر ہے کہ آج کا انسان نے اپنے ہی پیدا کردہ بہ ظاہر وجود نہ رکھنے والے اداروں کا اسیر ہے۔

Read more