ایک صحافی کی کرونا وائرس سے ملاقات کا احوال

ایک معروف صحافتی ادارے کے غیر معروف صحافی جو کہ آج کل بیروزگار ہیں۔ لاک ڈاؤن کی وجہ سے گھر میں قید تھے، بوریت دور کرنے کے لئے باہر چل دیے۔ ابھی گلی میں داخل ہی ہوئے تھے تو دیکھا کہ سارا محلہ مرغوں کی لڑائی دیکھنے میں مگن تھا، اسی بھیڑ میں ان کی…

Read more

پاکستان میڈیکل کمیشن یا کونسل، معاملہ کیا ہے

یہ اکتوبر 2019 کی بات ہے، میں اپنے روم میں بیٹھا، فائنل ائیر ایم بی بی ایس کے سالانہ امتحانات کی تیاری کر رہا تھا کہ یک دم خبر آئی کہ حکومت نے پاکستان میڈیکل اینڈ ڈینٹل کونسل کو تحلیل کر دیا ہے، اور اس کی جگہ، صدارتی آرڈیننس کے ذریعے نیا ادارہ پاکستان میڈیکل کمیشن بنایا جائے گا۔

اس خبر کو سن کر پوری میڈیکل کمیونٹی میں تشویش کی ایک لہر دوڑ گئی، کیونکہ پاکستان میں میڈیکل تعلیم کو ریگولیٹ کرنے والا ادارہ (جسے پوری دنیا مانتی ہے ) کو یک دم ختم کر دیا گیا۔ حکومت کو اس جلدبازی فیصلے پر، ہر جگہ سے تنقید کا نشانہ بنایا گیا، ڈاکٹرز کی ہر تنظیم بشمول وائے ڈی اے، پی ایم اے، وائے سی اے نے اس حکومتی عمل کی مذمت کی اور اس آرڈنینس کی ہر جگہ مخالف کرنے کا اصولی فیصلہ کیا۔

Read more

اس نے مجھے آخری خط میں کیا لکھا؟

عداوتیں تھیں، تغافل تھا، رنجشیں تھی بہت بچھڑنے والے میں سب کچھ تھا، بے وفائی نا تھی محبت جب ہاتھ سے ریت کی مانند پھسل جائے تب رہ جانے والی چیزوں میں پچھتاوا اور الزام ہوتا ہے جو برابر اک دوسرے پہ تھوپا جاتا ہے، اس بار بھی تمہارے خط میں، تم ہی ہمیشہ کی…

Read more

کرونا عذاب نہیں،ہمارے کرتوتوں کی سزا ہے

”میرے والد صاحب، شوگر کے مریض ہیں، تو وہ اس کے علاج کے لئے گولیاں کھاتے ہیں، کرونا لاک ڈاؤن کی وجہ سے پورے پاکستان میں سوائے فارمیسیز اور ڈیپارٹمنٹل سٹورز کے ہر چیز بند ہے، ان کی گولیاں ختم ہو گئیں، تو میں وہ لینے بازار گیا، تو ان گولیوں کی بازار میں قلت…

Read more

کرونا وائرس، ڈاکٹرز اور سوشل میڈیا

”یہ ڈاکٹرز نہیں خونخوار درندے ہیں، یہ ڈاکٹرز انسان نہیں حیوان ہیں، جو ڈاکٹرز مریضوں کو چیک نہیں کر رہے، ان کے لائسنس کینسل کیے جائیں، یہ ڈاکٹرز ہمارے ٹیکسوں سے تنخواہیں لیتے ہیں اور ہمیں ہی چیک نہیں کرتے، ان ڈاکٹروں میں انسانیت نام کی کوئی چیز نہیں“ وغیرہ وغیرہ! یہ ہیں وہ فقرے،…

Read more

اک خواب کی تکمیل کے بعد

” یقین کامل اور امید پیہم انسانی زندگی میں سانس کی مانند ناگزیر ہیں، وہ خواب جو انسان کی نیندیں اڑائے دیتے ہیں، آس اور امید کے بغیر گونگے بہرے سے ہو جاتے ہیں“ ان میں اتنی سکت ہی نہیں دو قدم بھی چل سکیں۔ انسان کو خواب دیکھتے رہنا چاہیے، انہی خوابوں کے پورا…

Read more

ادھوری محبت کے نام آخری خط

ہم دوہری اذیت کے گرفتار مسافر پاؤں بھی شل ہیں، شوق سفر بھی نہیں جاتا ”اجالا! تمہارا پیمان وفا اب تلک یاد ہے مجھے، اب تک تمہارے اس دلاسے کے سہارے شب و روز گزارتا ہوں کہ ساتھ نہیں چھوٹے گا“ آج کتنا وقت بیت گیا، تمہیں دیکھے ہوئے، تم سے بات کیے ہوئے۔ تم…

Read more

کالج کی یادوں کا بوجھ

"یہ یادوں کا بوجھ اتنا وزنی کیوں ہوتا ہے؟ کسی کے ساتھ بتائے ہوئے پل اتنے یاد کیوں آتے ہیں؟  جنہوں نے ساتھ چھوڑ جانا ہو، ایسے لوگ ہماری زندگیوں میں آتے ہی کیوں ہیں؟ جن کے ساتھ اکھٹے اتنے لمحات گزرے ہوں،انکے بنا زندگی کیسے گزرے گی؟؟ " آج کل کچھ ایسے ہی احسات…

Read more

بریسٹ کینسر قابلِ علاج ہے مگر

یہ کوئی مہینا پہلے کی بات ہے، میں سرجیکل وارڈ ایک کی او پی ڈی میں بیٹھا ہوا تھا، دو عورتیں کمرے میں داخل ہوئیں، ہاتھ میں پرچی اور فائل تھامے ہوئے۔ سرجن صاحب سے کچھ باتیں کرنے کے بعد ایک نے فائل ان کی طرف بڑھائی، انہوں نے رپورٹ پڑھی اور کہا ”رپورٹ نیگیٹو…

Read more

میڈیکل کالج کی لڑائیاں

”وہ فائنل ائیر کا ابوبکر ہے نا، شوخا سا۔ اپنے آپ کو بڑا چالاک سمجھتا ہے، اپنی پروکسی لگوا لیتا ہے، لیکن جب ہماری لگ جائے تو اسے موت پڑ جاتی ہے۔ وہ ہوتا کون ہے ہماری پروکسی کٹوانے والا، اب میں دیکھتی ہوں کہ وہ پروکسی لگواتا تو لگواتا کیسے ہے“۔ ہر میڈیکل کالج…

Read more