ممتاز مفتی کی ”تلاش“۔

جو صاحب علم ہیں ان سے پیشگی معذرت کرتا ہوں کہ اگر بندے سے کوئی حماقت ہوگئی بلکہ کئی ہوں گی تو درگزر کیجیے گا۔ کیوں کہ یہ بڑا ثواب کا کام ہے اور جہاں اصلاح کی ضرورت ہوئی جو کہ لازمی ہوگی تو وہ بھی کر دیجئے گا۔

ممتاز مفتی کے بیٹے عکسی مفتی نے اس کتاب تلاش کا دیباچہ ممتاز مفتی کی یاد میں کے عنوان سے لکھا ہے۔ جس میں وہ اپنے والد کی کچھ قابل اعتراض باتوں کے حوالے سے کہتے ہیں کہ وہ ان سے مجذوبانہ کیفیت میں لکھی گئی ہیں۔ کیوں کہ ہوش و حواس میں وہ باتیں کر گزرنا ممکن نہیں۔ مثال کے طور پر ممتاز مفتی اپنی کتاب لبیک جو ایک طرح کا سفر نامہ حج ہے میں خانہ کعبہ کو کالا کوٹھا لکھ دیتے ہیں۔

Read more

ممتاز مفتی سے میرا تعارف

بی اے کے دوران مجھے مطالعہ کے لیے وافر وقت ملتا تھا۔ اس سے پہلے بھی مجھے مطالعہ کا شوق تھا لیکن FSC میں اتنا وقت نہیں ملتا تھا کہ بندہ کورس کے علاوہ ادب کو پڑھے۔ FSC کے بعد میں نے ایک سال فارغ رہ کر گزارا۔ درحقیقت یہ کہنا چاہیے کہ فلمیں دیکھتے…

Read more

استاد کی عزت

جج صاحب یوں بیٹھے تھے جیسے مولوی حلوے کے انتظار میں بیٹھتے ہیں۔ سامنے دونوں گروہ بیٹھے تھے جن میں ایک استاد غلام علی صاحب تھے۔ جن پر الزام تھا کہ انہوں نے چودھری علی بخش کے چہیتے بیٹے کو ذاتی رنجش کی بنا پر تشدد کا نشانہ بنایا ہے۔ جب کے استاد غلام علی…

Read more

یہ قتل تھا یا خود کشی؟

دن کا پچھلا پہر تھا، میں باہر بیٹھا تھا، اور میرے ذہن میں بہت کچھ چل رہا تھا۔ میری فکر کا دھارے کا بہاؤ کسی ایک سمت میں نہیں تھا، بلکہ تند و تیز ہواؤں کی طرح ادھر ادھر بھٹک رہا تھا، کہ اچانک میرے فون کی گھنٹی بجی۔ اس نے مجھے تخیلاتی دنیا سے…

Read more

قرض کی دھوم دھام اور مفت کی غربت

چوہدری صاحب پتر کی شادی کرنی ہے کچھ پیسے چاہیں تارے نے چوہدری اقبال کے پاؤں دابتے ہوئے درخواست کی۔ چوہدری اقبال نے اپنی ایک ٹانگ جسے تارا داب رہا تھا پیچھے کی اور دوسری ٹانگ آگے کرتے ہوئے بولا، اوئے تجھے کتنے پیسے چاہیں۔ چوہدری صاحب ایک لاکھ روپے چاہیں۔ چوہدری اقبال کا ہاتھ…

Read more

کس کے جنازے پہ ہو؟

آپ ہوتے کون ہے میری شادی کا فیصلہ کرنے والے سجاد نے تقریبا غصے سے اپنے والدین سے کہا۔ کیا آپ کی شادی کا فیصلہ میں نے کیا تھا۔ سجاد کا والد اس کے قریب آیا اور سجاد کے کان میں آہستہ سے کہا برخوردار میری شادی کا فیصلہ بھی میرے ماں باپ نے کیا…

Read more

یونیورسٹی بس اور پاکستان کے حالات کا موازنہ

سرگودھا یونیورسٹی نے جب سرگودھا ساہیوال بس چلائی تو میرے جیسے بیسیوں سٹوڈنٹس کو بے حد فائدہ پہنچا۔ پہلے جو میں ایک گھنٹے کے سفر کے لیے دو دو گھنٹے گاڑی کا انتظار کرتا تھا اس سے بھی نجات ملی اور وقت پر کلاس میں پہنچنے کی بھی روایت پڑی۔ یونیورسٹی بس چلنے سے پہلے میں سڑک کنارے ایسے کھڑا ہوتا تھا جیسے کوئی سیاستدان الیکشن میں کھڑا ہوتا ہے۔ اور اس کی بے چینی، اضطراب اور بے یقینی کا جو عالم ہوتا ہے میرا بھی وہی ہوتا تھا کہ گاڑی ملے گی، نہیں ملے گی۔ میں وقت پر پہنچوں گا یا نہیں۔ اور بس چلنے کے بعد میرے حالات الیکشن جیتنے والے سیاستدان کی طرح بدل گئے۔

Read more

لوگ مسلمان کیوں ہوں گے؟

ہمارے علاقے کے ہائی سکول کا ہیڈ ماسٹر مسیحی تھا۔ اسلام سے شدید نفرت کرتا تھا۔ سکول میں بچوں پر تشدد کرتا۔ بچوں کے ساتھ ساتھ سب اساتذہ بھی اس سے نالاں تھے۔ اس کا کھانا پینا سب کچھ دوسرے اساتذہ سے الگ ہوتا تھا۔ ایک دن کچھ اساتذہ کی غیرت اسلامی نے جوش مارا اور انہوں نے ہیڈ ماسٹر کو اسلام کی دعوت دینے کا فیصلہ کیا۔ سب اساتذہ مل کر ہیڈ ماسٹر کے پاس گئے اور بڑے اخلاق سے انہیں اسلام کی دعوت دی۔ہیڈ ماسٹر نے بڑے ادب سے سب اساتذہ کی بات سنی اور بڑی نرمی سے کہا میں مسلمان ہونے کے لِئے تیار ہوں۔ سب اساتذہ کے چہرے کھل اٹھے۔ لیکن میرا ایک سوال ہے ہیڈ ماسٹر کی آواز ابھری۔ سب اساتذہ نے غور سے ہیڈ ماسٹر کی طرف دیکھا۔ پھر جو بات ہیڈ ماسٹر نے کی جو سوال انھوں نے پوچھا وہ آج بھی مجھے چبھتا ہے۔ ہیڈ ماسٹر نے سب اساتذہ کی طرف دیکھا اور کہا میں مسلمان ہونے کے لئے تیار ہوں لیکن مجھے یہ بتایا جائے میں کون سا مسلمان بنوں؟ سب اساتذہ ایک دوسرے کا منہ دیکھنے لگے اور یکے بعد دیگرے اٹھ کر چلے گئے۔

Read more

محبت قربانی مانگتی ہے اظہار نہیں

آج کل سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو کلپ کافی وائرل ہو رہا ہے۔ جس میں ایک پاگل سے جب اس کے پاگل ہونے کی وجہ پوچھتے ہیں۔ تو وہ کہتا ہے کہ میں اپنی محبت کا اظہار نہ کرسکا اور اس کی (یعنی محبوبہ) کی شادی ہو گئی اور میں اس غم میں پاگل ہو گیا۔ اور اب بھی میں اس کے لئے یہ دعا کرتا ہوں۔ کہ وہ جہاں رہے خوش رہے اور اسے یہ تک بھی علم نہیں کہ میں اس سے محبت کرتا ہوں۔ اس ویڈیو نے مجھے عجب کشمکش میں ڈال دیا کہ محبت کا اظہار کرنا چاہیے یا نہیں۔ آئیے اس سوال کا جواب کچھ کہانیوں اور افسانوں کے علاوہ حقیقی دنیا میں بھی ڈھونڈتے ہیں۔ کہ کسی کو محبت کا اظہار کر کے کیا ملا اور محبت چھپا کے کیا ملا۔

کل ہی ایک انٹرویو میں جب میں نے اپنے محترم استاد سے سوال کیا کہ شاعری میں محبت کو ایک لازوال جذبے کے طور پر لیا گیا ہے آپ کے خیال میں یہ جذبہ زیادہ تر کس طرف لے جاتا ہے اچھائی کی طرف یا برائی کی طرف۔ تو ان کا کہنا تھا کہ محبت ایک پاک اور پوتر جذبہ ہے جو انسان کو سیدھی راہ کی طرف لے جاتا ہے۔ محبت ضروری نہیں کہ کسی آدمی سے ہی کی جائے محبت خدا سے بھی کی جاتی ہے۔ اور انسان سے محبت کا مطلب یہ ہے کہ

Read more

ہمارے ہیروز متنازعہ کیوں ہیں؟

برسوں پہلے کی بات ہے میں کالج سے واپس آ رہا تھا گاڑی تقریبا خالی تھی۔ ایک آدمی گاڑی میں سوار ہوا اور میرے ساتھ آ کر بیٹھ گیا۔ تھوڑی دیر بعد اس نے خود ہی بڑے بے تکے انداز میں بات کی کہ قائداعظم بڑا خراب آدمی تھا۔ پھر ایک کرنسی نوٹ نکال کر…

Read more