فخر اور اس جیسے 22 کروڑ

فخر الدین سیّد یوں چلا گیا جیسے جھونکا ہوا کا جاتا ہے۔ اس جوانان مرگ سے کبھی ملاقات نہ ہو سکی لیکن ایک زمانہ تھا ،صبح شام اس سے بات ہواکرتی۔ جیسا کہا جاتا ہے کہ: ’’ سنو اور اطاعت کرو‘‘فخر کا معاملہ کچھ ایسا ہی تھا۔اِسے جو کہا جاتا، خاموشی کے ساتھ سنتا اور…

Read more

بلیاں کمزور ہو گئی ہیں

”اس وبا نے تو بلیوں سے بھی رزق چھین لیا“ ۔ خاتون خانہ نے صاف کی ہوئی پالک کی مٹھی ایک جانب رکھی اور دکھ کے ساتھ اطلاع دی۔ گھر میں بلی کبھی ہوتی تھی، اب نہیں ہوتی۔ اس لیے بچے محلے کی بلیوں کو دودھ ڈال کر ہی خوش ہو جاتے ہیں۔ بلی گھر…

Read more

یتیموں کا دن

کچرے کے ایک ڈھیر کے پاس کھڑا میں سوچ رہا تھا کہ آخر اس کہانی کا سرا کہاں سے ملے؟ سوال یہ درپیش تھا کہ بڑے بڑے شہروں کے بیچ اور اطراف میں یہ جو کچرے کے عظیم الشان ڈھیر پڑے رہتے ہیں، ان پر بھی ایک مخلوق پلتی ہے، کیا اس مخلوق سے ہمارا…

Read more

ایک روپیہ اسکول

اس بچے کو دیکھا تو عید کا دن یاد آگیا۔ ہمارے بچپن میں اس روز مائیں اپنے بچوں کو بوروکیڈ کی چمچماتی ہوئی سنہری شیروانی پہناتیں اور اسی کپڑے کی رام پوری ٹوپی جسے تہہ کردیں تو سمٹ کر جیب میں آجائے۔ اس بچے نے بھی کچھ ایسے کپڑے ہی پہن رکھے تھے، چمچماتے اور…

Read more

جبل پور کا جیالا

مجھے ایک ایسے شخص کے بارے میں بات کرنی ہے، جس سے میرا کبھی کوئی تعلق نہیں رہا لیکن اسی لاتعلقی نے ایک ایسے تعلق کو جنم دیا، سماجی ربط ضبط میں بالعموم جس کی کوئی مثال شاید ہی ملے۔ کچھ عرصہ ہوا، 1953 کے اخبارات دیکھنے کا موقع ملا۔ اُس سال جنوری میں جامعہ…

Read more

…اور کتنی آزمائش؟

چلتے چلتے ہم ایک خالی پلاٹ تک پہنچے پھر قدم وہیں جم گئے۔وہ چند نوجوان تھے، خوش دل، خوش خیال اور خوش جمال، نیم دائرے کی شکل میں کھڑے ان نوجوانوں کے ہاتھ ایک دوسرے کے ہاتھوں میں تھے اور وہ حرکت میں تھے، ان کے لچکیلے جسم،بازو اور ٹانگیں۔ ترنگ میں آکر جب وہ…

Read more

ہم وطن جنہیں وبا سے پہلے بیروزگاری لپٹ گئی ہے

دروازہ کھلا تو جیسے زلزلہ آگیا ، اس کے بعد بیٹے کی شکل دکھائی دی۔ آج کل کے بچے اسی طرح آندھی اور طوفان بنے پھرتے ہیں۔ ممکن ہے، ہم لوگ بھی ایسے ہی رہے ہوں لیکن اپنی حماقتیں کسے یاد رہتی ہیں؟ خیر، ذکر اس نوجوان کا تھا ۔اس کی برہمی کا سبب فوراً…

Read more

وبا کا ایک دن

فجرکے بعد سونا بھی ایک طرح سے فرائض میں شامل ہے۔نیند پوری کر کے میں اٹھا اور مچی مچی آنکھوں کے ساتھ دروازہ کھول کر بالکونی تک پہنچا، اخبار ابھی تک نہیں آیا تھا۔اخبار اور ناشتے کے درمیان ایک نامعلوم سا وقفہ ہوتا ہے لیکن یہ وقفہ طویل ہوگیا توآنکھیں کھل گئیں۔لاک ڈاؤن کی بات…

Read more

اگر اٹلی کے انجام سے بچنا ہے!

حضرت خواجہ خضر چلتے چلتے صحرا میں جا پہنچے اور حیران ہوئے۔ سوچا کہ یہاں تو سمندر لہریں لیا کرتا تھا، یہ خشکی کہاں سے آگئی؟ یہی سوچتے ہوئے وہ آگے بڑھے تو ان کا سامنا ایک چرواہے سے ہو ا۔ اس کی بکریاں خاردار جھاڑیوں سے الجھی ہوئی تھی اور وہ خود چیتے کی…

Read more

راجہ فاروق حیدر کے خواب

نیلی مسجد کو دیکھا تو جی چاہا، دائیں جانب اس جگہ دیوار سے ٹیک لگا کر بیٹھ جاؤں جہاں کسی بزرگ کی جائے عبادت نشان زد ہے، وقت کم تھا اور ہم سفر جلدی میں، اس لیے بھاگم بھاگ آیا صوفیہ میں جا گھسے۔ ایک گائیڈ اپنے حصے کے زائرین میں گھرا اِس عمارت کے…

Read more