کیا پلے کارڈز کی وجہ سے عورت مارچ کی شاندار کامیابی سے بھی انکار کر دیں؟

8 مارچ کو یومِ خواتین پر ملک کے کئی شہروں میں نکلنے والے عورت مارچ میں شامل کچھ خواتین کے ہاتھوں میں اٹھائے گئے پلے کارڈز پر جس شدت سے ردعمل آیا اور جس قسم کے جوابات آئے اس نے ماحول میں ایک تلخی پیدا کردی، اب جبکہ اس تلخی کی دھول کسی حد تک چھٹ چکی ہے تو میں اپنی رائے دینے کی جسارت کر رہا ہوں۔ایسا نہیں ہے کہ میری رائے اس وقت مختلف تھی مگر جو ماحول بنا، اس میں بات کرنا کوے کی کائیں کائیں سے مشابہہ ہوجاتی، گوکہ ان دنوں ہی کافی خواتین اور مردوں نے بہت ہی معقول باتیں بھی کیں، تاہم دونوں طرف سے جذباتی طور پر کی گئی باتوں نے فضا کو آلودہ کردیا۔

Read more

عالمی یوم خواتین پر میرپور خاص کی بے بی کے ساتھ کیا ہوا؟

آٹھ مارچ کو جب عالمی یومِ خواتین آب و تاب سے منایا جارہا تھا اور اگلے دو تین پلے کارڈز پر بحث جاری تھی انہی دنوں سندھ کے ضلع میرپور خاص کی تحصیل حسین بخش مری میں میڈیکل کی طالبہ بے بی مری پر قیامت ڈھا دی جاتی ہے، اس کے ساتھ کیا ہوا یہ تو معمہ بنا ہوا ہوا ہے مگر پانچ دن بعد اس کی لاش ایک واٹر کورس سے ملنے کی دعویٰ کی جاتی ہے، رات کو دو بجے لاش ملنے کے بعد دو گھنٹے کے اندر تدفین ہوجاتی ہے اور کہانی یہ بتائی جاتی ہے کہ لڑکی نے خود کشی کی ہے۔لڑکی کا تعلق ایک با اثر خاندان سے ہونے کی وجہ سے علاقے کے لوگ اس معاملے پر بولنے کے لئے تیار نہیں، لیکن جو باتیں سامنے آئی ہیں ان کے مطابق لڑکی کا خاندان جھگڑوں سے تنگ آکر کراچی منتقل ہوچکا ہے، لڑکی کے باپ مولا بخش کے جسم پر بھی گولیوں کے نشانات بتائے جا رہے ہیں، کہا جا رہا ہے کہ لڑکی اپنے آبائی گاؤں سے کچھ فاصلے پر نازک آباد بستی میں بیاہی ہوئی اپنی بہن سے ملنے آئی تھی پھر پراسرار نمونے سے اس کی زندگی کا دیا بجھ جاتا ہے، یا بجھا دیا جاتا ہے۔

Read more

ڈاکٹر ادیب رضوی کی جیل اور جلیلہ حیدر کی معصومانہ مجبوری

اس دفعہ کراچی میں تیسرا سندھ ادبی میلہ ایسے وقت منعقد ہوا جبکہ کچھ ہی دنوں میں کراچی لٹریچر فیسٹول کا دسواں ایڈیشن بھی ہونے والا ہے، ایسے میں لوگوں ایک بہت بڑی تعداد میں شرکت نہ صرف اس فیسٹول کی کامیابی کی عکاس بلکہ لوگوں کے اعتماد کا بھی مظہر ہے۔ کراچی میں منعقد ہونے والے ایونٹس میں سندھ لٹریچر فیسٹول اس لحاظ سے بھی ممتاز ہے کہ اس میں کسی ایک زبان کے بجائے تمام زبانوں کی نمائندگی ہوتی ہے۔

اس دفعہ مہمانوں میں جہاں صدر عارف علوی، ڈاکٹر ادیب الحسن رضوی، مبارک علی اور امجد اسلام امجد جیسی شخصیات شامل تھی، وہاں کوئٹہ کی جلیلہ حیدر اور سندھ کی سسئی لوہار بھی پینل میں شامل تھی جو گمشدہ افراد کی تحریک کا اہم کردار ہیں۔

Read more

نیب والو! سندھ کے لوگوں کو خوش تو ہو لینے دیتے

سندھ اسمبلی کے اسپیکر آغا سراج درانی کی گرفتاری کے ساتھ ہی پیپلز پارٹی کی قیادت متحرک ہوگئی، آصف زرداری نے نیب کے افسر کو سندھی ہونے کا طعنہ دیا تو بلاول نے لندن میں بیٹھ کر کلمہ طیبہ پڑھ کر قسم کھائی کہ اس نے کرپشن نہیں کی، پیپلز پارٹی کے لوگ کہتے پھر رہے ہیں کہ جمہوریت اور اٹھارویں ترمیم کو خطرہ لاحق ہوگیا ہے۔

اسپیکر سندھ اسمبلی کی گرفتاری اس وقت ہوئی جبکہ ایک دن پہلے سپریم کورٹ منی لانڈرنگ اور مبینہ جعلی اکاؤنٹس کیس کے فیصلے کے خلاف آصف زرداری اور بلاول کی نظرثانی درخواست رد کرچکی ہے۔

Read more

میرے بھائی، آپ بھلے اردو میڈیا کو قومی میڈیا کہو، میں نہیں مانتا

کراچی کے علاقے بھینس کالونی میں ایک نوجوان کے بہیمانہ قتل پر ہر ذی شعور انسان محوِ حیرت ہے، سندھ کے مختلف شہروں میں واقعے کے خلاف احتجاج ہورہا ہے، ہڑتال کی کالز آرہی ہیں، حکومتِ سندھ نے واقعے کی عدالتی تحقیقات کے لئے سندھ ہائی کورٹ کو درخواست کردی ہے مگر اسی وقت اردو میڈیا کے ’پروفیشنل‘ چئنلز اپنے ”ذرائع“ کے حوالے سے ایک ہی خبر دینے میں لگے ہوئے ہیں کہ مارا جانے والے شخص ارشاد رانجھانی کا کرمنل رکارڈ موجود ہے۔

بھئی اپنے ذرائع سے اس رکارڈ کا کوئی ثبوت ہی لا کر دکھا دو، مگر نہیں، سوشل میڈیا پر دھوم مچی ہوئی ہے کہ قاتل رحیم شاہ پر لینڈ گریبنگ، منشیات فروشی اور بھتے کے الزامات ہیں، مختلف اوقات میں اس کے خلاف بیس مقدمات درج ہوچکے ہیں، ڈی ایس پی آفس کے ایک حصے پر قبضے میں ملوث ہے، چلئے، مان لیا کہ آپ کے ذرائع بہت باخبر ہیں، کیا ان سے یہ پوچھنے کی زحمت کی گئی کہ قاتل پر لگنے والے الزامات میں کہاں تک صداقت ہے؟

Read more

سیاسی بدمعاشی کے پہاڑ تلے دفن رمشا وسان اور ایک خدا

سندھ کے ضلع خیرپور کی تحصیل کوٹ ڈیجی کا اصل تعارف تو تاریخی قلعہ تھا مگر اب رمشا وسان اس علاقے کی ایک نئی شناخت بن رہی ہے، کوٹ ڈیجی کے نواحی گاؤں میں تیرہ سالہ لڑکی رمشا اور اس کے خاندان پر قیامت ڈھا دی گئی ہے۔ رمشا ابھی بچی تھی مگر اس کی…

Read more

بھٹو زندہ ہے، یہ نعرہ نہیں ایک نوحہ ہے

بھٹو صاحب کے حوالے سے محترمہ صائمہ ملک کا آرٹیکل پڑھا، تو دل میں خیال آیا کہ ان حالات اور وجوہات کا ذکر کرلیا جائے، جن کی وجہ سے بھٹو زندہ ہے۔

’جیئے بھٹو‘ یا ’بھٹو زندہ ہے َ‘ ۔ ان نعروں پر کافی لوگ حیرت زدہ ہوتے ہیں، کئی لوگ اس پر طنز کرتے ہیں، کچھ لوگوں نے اس پرلطیفے بھی بنا لیے ہیں، دیگر صوبوں کے دوست کبھی پوچھتے ہیں کہ جب بھٹو دنیا سے چلے گئے تو اس نعرے کی کیا معنی ہیں؟

Read more

میڈیا انڈسٹری پر برا وقت اور جمہوریت کا مسقبل

90 کی دہائی میں ایک ایسا وقت آیا کہ ڈش انٹینا پر غیر ملکی چینلز کو ہی عیاشی سمجھا جانے لگا تھا، ایسے میں بھارتی چینلس کو تو جیسے سویٹ ڈش کی حیثیت حاصل تھی۔ اسی دور میں زی ٹی وی کے نیوز بلیٹن ہم جیسوں کی دلچسپی کا باعث بن گئے، وجہ صرف یہ…

Read more

جمہوریت کے بہادر شاہ ظفر۔ مگر کب؟

2008 میں پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ نون کی مخلوط حکومت قائم تھی، حکومت بھی ایسی کہ جس نے پرویز مشرف جیسے آمر کو بہ آسانی ایوانِ صدر سے دھکیل باہر کیا تھا، حزب اختلاف کی پوزیشن کمزور تھی، مگر ایک دن خلاف توقع آصف زرداری نہ صرف ایم کیو ایم کے مرکز نائین زیرو…

Read more

گیس بحران، عمران خان کی حکومت کا ایک غیر آئینی قدم؟

سندھ میں سی این جی اسٹیشنز کو غیر معینہ مدت تک کے لئے بند کریا گیا، یہ وہ خبر ہے جس نے کراچی سے کشمور اور کے ٹی بندر سے کارونجھر جھیل تک سندھ بھر کے باسیوں کو پریشان کردیا ہے۔ بات صرف سی این جی تک محدود نہیں، صنعتوں کو بھی گیس کی فراہمی تین ماہ تک بند کردی گئی ہے۔

سندھ میں 650 سی این جی اسٹیشنس ہیں، جن میں سے 300 صرف کراچی شہر میں ہیں، گیس فراہمی بند ہونے سے نہ صرف منی بسز، رکشا، ٹیکسی اور آن لائین ٹیکسی کا پہیہ بھی رکنے کے قریب ہوگیا ہے، بلکہ انٹرسٹی ٹرانسپورٹ بھی شدید متاثر ہوئی ہے۔ کراچی میں پبلک ٹرانسپورٹ پر سفر کرنے والوں کو گھنٹوں سڑکوں پر خوار ہوتے دیکھا گیا، جبکہ مڈل کلاس سے تعلق رکھنے والوں کی گاڑیاں پٹرول پر منتقل ہونے کی وجہ سے ان کی مالی مشکلات میں اضافہ ہوگیا ہے۔

Read more