پیارے کپتان، قول و فعل میں تضاد کیوں؟

بھارت میں پاکستان مخالفت کارڈ کھیلتے ہوئے جس طرح عوام کو بے وقوف بنایا جاتا ہے۔ اس کا عملی مظاہرہ موجودہ انتخابی مہم میں دیکھا جا سکتا ہے۔ صورت حال یہ ہے کہ موجودہ وزیر اعظم مودی کے پاس کچھ بھی نہیں ہے۔ نہ وہ اپنے بے روزگار نوجوانوں کو ملازمتیں دے پائے ہیں۔ نہ…

Read more

پاکپتن کا محمد فیاض اور خواب

جب آپ زندگی میں کچھ کرنا چاہیں اور کر نہ سکیں یا اپنے خواب کی تکمیل کے لیے آپ کے پاس وسائل نہ ہوں تو وقتی طور پر آپ کے خواب پس پشت چلے جاتے ہیں۔ لیکن وہ خواب آپ کے دل و دماغ سے محو نہیں ہو سکتے اور زندگی میں جب بھی آپ کو موقع ملتا ہے آپ ان خوابوں کو پورا کرنے کی ٹھان لیتے ہیں۔ اور جب آپ ایسا کرنے کی ٹھان لیتے ہیں تو آپ کو ارادوں کی تکمیل سے کسی کے لیے روکنا ممکن نہیں رہتا۔ اور معدودے چند شاید کسی بھی معاشرے میں تین سے چار فیصد ہی ایسے لوگ ہوتے ہیں جو آنکھ کھولتے ہیں جو خواب دیکھتے ہیں اُسے پورا کرنے کی ٹھان بھی لیتے ہیں اور ان کو پورا کرنے کے لیے ہر حد سے گزر جاتے ہیں ورنہ ہم میں سے اکثریت دو جمع دو چار کرنے میں لگی رہتی ہے اور اپنے خوابوں کو گروی رکھ کے اسی پہ اکتفا کر لیتی ہے کہ کیسے دو وقت کی روٹی کا بندوبست کرنا ہے اور جب روٹی کا بندوبست ہو جائے تو دیگر ضروریات زندگی سر اُٹھا لیتی ہیں۔ اس لیے چند سرپھرے لوگ ہر معاشرے میں اہم ہوتے ہیں جو کچھ کر گزرنے کی نہ صرف ہمت رکھتے ہیں بلکہ وسائل کا ہونا یا نہ ہونا اُن کے لیے برابر ہو جاتا ہے۔

Read more

نیا پاکستان، پچاس لاکھ گھروں کا پہلا گھر

مبارک ہو پاکستانیو۔ تبدیلی آ نہیں رہی، تبدیلی آ گئی ہے۔ نیا پاکستان اسکیم کے تحت تعمیر ہونے والے پچاس لاکھ گھروں میں سے پہلے گھر کو بنانے کے لیے بل پاس کر لیا گیا ہے۔ اور باقی انچاس لاکھ ننانوے ہزار نو سو ننانوے گھر بھی جلد ہی پاکستان کے نقشے پہ ابھرے نظر آئیں گے۔ اب وہ وقت قطعاً دور نہیں ہے کہ جب ہر بے گھر کے پاس اپنا گھر ہو گا۔ ہر بے روزگار کے پاس اپنا روزگار ہو گا۔ ہر غریب کے پاس دو وقت کے کھانے کے باعزت کھانا ہوگا۔ ہر یتیم کے سر پہ ریاست باپ کا سایہ بنے گی۔ ہر بیوہ کا آسرا یہ ریاست خود بنے گی۔ اور دودھ و شہد کی نہروں سے فیض یاب ہونے کو بھی اب تیار ہو جاؤ۔ پاکستانیو جو دن پھرنے تھے وہ پھر گئے ہیں۔ وعدہ ایفا ہو گئے ہیں اور اب تم دیکھو گے کہ کیسے ہم چٹکیوں میں پچاس لاکھ گھر بنا کے تمہارے حوالے کر دیں گے۔

Read more

عورت مارچ مہم، ذہین دماغوں کا کامیاب منصوبہ

عورتوں کا عالمی تاریخی حوالوں سے 1909 سے منایا جا رہا ہے۔ جب یہ فروری میں منایا جانا شروع ہوا۔ پھر 1917 سے آج کے دن سے منایا جا رہا ہے یعنی 8 مارچ کو عالمی دن برائے خواتین کا درجہ حاصل ہوا ہے۔ پاکستان مین بھی ظاہر سی بات ہے دیگر عالمی دنوں کی طرح یہ دن بھی منایا جاتا ہے لیکن اس حوالے سے گزشتہ دو دہائیوں سے کافی شعور اجاگر ہوا ہے اس کی سب سے بڑی وجہ پرائیویٹ ٹی وی چینلز کی بھرمار، اخبارات کی اشاعت کا بڑھنا، اور سوشل میڈیا جیسے فورمز کا عام لوگوں تک رسائی ہو جانا ہیں۔

پاکستان میں گزشتہ دو دہائیوں سے عالمی دن برائے خواتین کی طرح دیگر عالمی دن منانے کی روایت مضبوط ہوتی جا رہی ہے لیکن اس حوالے سے تمام کارکردگی دو ہزار کے بعد سے زیادہ نمایاں ہوئی ہے۔ پاکستان میں اظہار رائے کی آزادی ایک اہم مسئلہ رہا ہے۔ لیکن کچھ سالوں سے اس حوالے سے اہم اقدامات کیے گئے ہیں جن کے تحت اظہار کی آزادی ملنا شروع ہوئی ہے (کچھ مسائل ابھی بھی اس حوالے سے موجود ہیں، لیکن بطور مجموعی ہم کہہ سکتے ہیں کہ اس وقت پاکستان میں اظہار سوچ کا یا اپنے خیالات کا کسی قدر آسان ہو چکا ہے ) اور یہی وجہ ہے کہ بعض معاملات میں اس آزادی کا منفی استعمال بھی دیکھنے میں آیا ہے۔

Read more

بحریہ کا جاسوس جہاز پی تھری سی اورین، اہم کیوں تھا۔۔۔

آپ کو یاد ہو گا کہ پی این ایس مہران پہ ہونے والے دہشت گردانہ حملے میں دو طیاروں کو نشانہ بنایا گیا گیا۔ یہ دونوں طیارے پی 3 سی اورین تھے۔ اور اس وقت ہم میں سے بہت کم لوگ ایسے تھے جو یہ جانتے تھے کہ یہ دو طیارے نشانہ بننے پہ اس حملے سے ہونے والے نقصان کو بہت زیادہ کیوں گردانا جا رہا ہے۔ اور شاید اس حملے سے قبل اس مخصوص طیارے کا نام بھی کم لوگوں نے سنا ہو گا۔ کیوں کہ عام طور پر ہم پاک فضائیہ کے جنگی طیاروں کو ہی ملکی دفاع کی ضمانت میں اولین گردانتے ہیں اور سمجھتے ہیں۔ اس لیے اس جہاز کا نام نہ صرف ہمارے لیے نیا تھا۔ بلکہ پہلی دفعہ منظر عام پہ بھی آیا تھا (یعنی عام آدمی تک یہ نام پہلی دفعہ ہی پہنچ رہا تھا) ۔ اور اکثریت ہم میں سے اس بات پہ حیران تھے کہ یہ بھلا کیا تک ہوئی کہ ان دو طیاروں کو ہی نشانہ بنایا گیا۔لیکن دشمن ہوا میں تیر نہیں چلاتا۔ اُس نے چن کے اس مقام پہ نشانہ بنایا بنایا جہاں یہ طیارے موجود تھے۔ یہ طیارے کرتے کیا ہیں۔ ان طیاروں کی اہمیت کیوں ہے۔ ان طیاروں میں ایسا خاص کیا ہے۔ کیوں ان طیاروں کی تباہی کے بعد پاک بحریہ نے سمندری حدود کی حفاظت کے لیے خصوصی انتظامات کیے۔ اور کیا وجہ تھی کہ انہیں بیان جاری کرنا پڑا کہ ہماری سمندری حدود کے دفاع کی صلاحیت آج بھی ویسی ہے جیسے اس حملے سے پہلے تھی۔

Read more

سرپرائز کے بعد بھارت کہاں کھڑا ہے

لہجہ انتہائی دھیما تھا۔ لفظوں کا چناؤ بھی بے حد سُلجھا ہوا تھا۔ نہ تم کہہ کے مخاطب کیا گیا تھا نہ ہی کسی بھی قسم کا کوئی ایسا جملہ کہا گیا جس سے غصے یا بد تمیزی کا تاثر جا رہا ہو۔ لفظوں کے ساتھ ساتھ آنکھیں فسانہ ء دل سارا کہے جا رہی تھیں۔ برداشت کا کوئی ایسا درجہ تھا جس پہ ہر کوئی براجمان نہیں ہو سکتا تھا۔ دھیمے لہجے کے اس شخص نے کچھ ایسی پختگی اور واضح اندا زمیں اپنا موقف پیش کیا تھا کہ ہر کوئی کسی نہ کسی حد تک مطمئن ہو گیا تھا۔کیوں کہ ہم جانتے تھے کہ جس جامع اور مدلل انداز میں آئی ایس پی آر کے ڈی جی نے کہا تھا کہ ہم جگہ اور وقت کا انتخاب بھی خود کریں گے تو یہ دیوانے کی بڑھک نہیں تھی بلکہ یقینِ کامل تھاکہ ہم پہل کرنے والوں میں سے بے شک نہیں ہیں لیکن جو پہل کرئے اُس پہ وار جوابی ایسا کیا جائے گا کہ دُشمن دنگ رہ جائے گا۔ اور سرپرائز کا وعدہ پورا کیا گیا۔ ایسا سرپرائز دیا گیا کہ نہ صرف عالمی دُنیا کو معلوم ہوا کہ پاکستان ہے کیا بلکہ ہمسائے کو بھی پتا چل گیا کہ ہماری برداشت ہماری بزدلی نہیں ہے۔

Read more

عجیب قوم ہے پاکستانی

پاکستانی بھی بڑی عجیب قوم ہیں۔ یہ دشمن کو پتا ہی نہیں چلنے دیتے کہ ان کے رویے کا اونٹ کس کروٹ بیٹھے گا۔

آپ یقیناً راقم الحروف کی بات سے نہ صرف مکمل اختلاف کا حق رکھتے ہیں بلکہ اس وقت میری اس بے تکی بات پہ قیاس کے گھوڑے بھی دوڑا رہے ہوں گے۔ قیاس کے گھوڑوں کی لگام ذرا کس لیجیے اور سوچ کی راہداریوں میں جھانکیے۔ چند ماہ پہلے سے شروع ہونے والے منظر نامے اور چند دن پہلے کے حالات کو مد نظر رکھ کے اس تحریر کو جانچیے۔

شہباز شریف کا نام ای سی ایل پہ ہے، حمزہ شہباز شریف کو اجازت لے کر باہر جانا پڑ رہا ہے، میاں محمد نواز شریف کے دو صاحبزادگان اشتہاری کا درجہ پا رہے بشمولے میاں صاحب کے سمدھی کے، میاں محمد نواز شریف خود اس وقت جیل یاترا پہ ہیں، پاکستان پیپلز پارٹی جیسی بڑی جماعت کے گرد شکنجہ کسا ہوا ہے، کچھ بعید نہیں کہ آنے والے دنوں میں زرداری صاحب شکنجے میں ہوں۔ غیرضیکہ پورے پاکستان میں اس وقت سیاسی صورت حال نہایت دگرگوں ہے۔

Read more

نجم سیٹھی آبدیدہ ہو گئے

  خاتون میزبان نے ایک مختصر سا سوال کیا تھا، لیکن جواب دینے والے کے پاس جیسے بیان کرنے کو ایک داستان تھی۔ تاہم جواب دینے والے سے جواب نہ دیا گیا۔ بس اُس کے چند آنسو جیسے سب بیان کر گئے۔ اور کوئی شک نہیں کہ آنسو داستان کہنے میں اپنا ثانی نہیں رکھتے۔…

Read more

​کبوتر، پاکستان اور عالمی دُنیا

ترقی ٹیکنالوجی سے نہیں آتی سوچ کے ساتھ آتی ہے۔ جب ہماری سوچ عالمی دنیا کے تقاضوں سے ہم آہنگ ہونا شروع ہو جاتی ہے تو پھر ترقی پذیر سے ترقی یافتہ کا درجہ پانا مشکل نہیں رہتا۔ جب کہ اچھی سے اچھی ٹیکنالوجی حاصل کرنے کے باوجود اگر بطور قوم سوچ نے ترقی نہیں کی تو اس تکنیکی بنیادوں پر کی گئی ترقی کا کوئی فائدہ نہیں۔ سیاسی، سماجی اور معاشی حوالوں کے علاوہ سماجیات کے جتنے منظر نامے ہیں پوری دنیا میں ہر گزرتے دن کے ساتھ تبدیل ہوتے جا رہے ہیں۔

Read more

یہ میری ماں کا خون ہے

جب سے یہ علم ہوا تھا کہ چاچو کی شادی ہے۔ ہم سب بہت خوش ہیں۔ بابا نے ہماری خوشی یہ کہہ کے دوبالا کر دی کہ ہم سب اس شادی میں بطور خاص شرکت کریں گے۔ بابا کے واٹس ایپ پہ چاچو کے ہاں ہوتی لائٹنگ دیکھ کے تو دل چاہتا ہے ابھی اُڑ…

Read more