وینٹی لیٹر پر پڑی یادیں

وہ آوارہ، بد مزاج اور تلخ قدموں کے ساتھ ایک بار پھر انہی لمحوں کے پاس تھی جن لمحوں کے ساتھ اس کی زندگی سانس لیتی تھی۔ بائیِس برس پہلے کا وہ ایک لمحہ جو اس کی زندگی کا سب سے خوبصورت لمحہ بھی تھا اور ساتھ ہی سب سے بدصورت لمحہ بھی وہی تھا۔…

Read more

نمرتا کے خواب

رات کا جانے کون سا پہر تھا۔ نیند نمرتا کی پلکوں تلے آکر پھر سے اپنا راستہ بدل لیتی تھی۔ مسکان تھی کہ اس کے چہرے سے ایک لمحے کو جدا نہ ہوتی تھی۔ چھوٹے سے کمرے میں ڈھیر سارے ستارے اُتر آئے تھے۔ اب بھلا ستاروں کے ہوتے ہوئے آنکھیں بند ہو سکتی ہیں۔…

Read more

عمران خان مجھے كیوں پسند ہیں؟

ان دنوں جب ہر طرف مہنگائی اور ٹیکسز کا طوفان آیا ہوا ہے۔ کپتان کے حق میں بولنے والے افراد اکثر محفل میں تنقید کا نشانہ بنتے رہتے ہیں۔ ہر طرف یہی سننے کو ملتاہے کہ کپتان نے سوائے مہنگائی کے قوم کو دیا کیا ہے اور یہ بات کسی حد تک ٹھیک بھی ہے۔…

Read more

صدائے حق کا مسافر

یہی کوئی لگ بھگ دو مہینے پہلے کی بات ہے۔ آل پاکستان رائٹرز ویلفیر ایسوی اسیشن کے سنیر نائب صدر ایم ایم علی نے مجھے اپنی کتاب صدائے حق پڑھنے کے لئے دی۔ اس کتاب میں میرا ایک تبصرہ بھی شامل ہے۔ اس لئے کتاب کے متن سے کم و بیش میں واقف تھی مگر…

Read more

سوات کے سات رنگ

یہ کوئی پہلی بار تو نہیں ہوا تھا میں تو اکثر خوابوں میں پہاڑوں کے ساتھ ہمکلام ہوتی ہوں۔ مگر اب کی بار یہ سلسلہ تھوڑا عجیب تھا۔ اب اکیلے پہاڑ مجھ سے ملنے نہیں آتے تھے۔ اب دریاوں کے گیت بھی سُنائی دینے لگے تھے۔ دریاوں کے ساتھ جُڑے پتھروں پر میں اپنے قدموں…

Read more

بارشوں میں بھیگتی لڑکی

اُسے بارشیں بہت پسند تھیں بلکہ نہیں پسند کا لفظ بہت معمولی ہے۔ اُسے تو بارشوں سے عشق تھا۔ کُن من کرتی ننھی ننھی بوندیں جب آسمان سے زمین پر اُترتی تھیں تو وہ بھی اُن کے ساتھ ہی بہتی چلی جاتی تھی۔ بارشیں گیت تھیں تو وہ اُن کی آواز تھی۔ بارشیں تال تھیں…

Read more

پنجرے میں بند قیدی کی موت

قاہرہ کے آسمانوں پر ستارے تو روز ہی نکلتے تھے اور روز ہی خلقِ خدا کو خالق کی نافرمانیوں میں مشغول دیکھ کر اُداسی سے واپس لوٹ جاتے تھے مگر اُس رات ستاروں کی آنکھوں میں صرف اُداسی کے رنگ نہیں تھے۔ اُن کی آنکھوں میں نمی تھی۔ دور دور تک آنسووٗں نے ڈیرے ڈالے ہوئے تھے۔ آسمان کی رنگت سیاہی مائل تھی اور یوں لگتا تھا کہ جیسے یہ آسمان قہر کی صورت زمین والوں پر برس پڑے گا مگر ابھی اس کا حکم نہیں تھا اور ستاروں کو بھی اپنے آنسووٗں کو ضبط کرنا تھا۔

Read more

فضیلت بیگم کا ماہ رمضان

فضیلت بیگم کا تعلق معاشرے کے اس طبقے سے ہے جن کی کتابِ زیست کے رنگین ہونے کا دارومدار ماہ رمضان میں زکوة لینے سے مشروط ہے۔ زکوة لینے کا بزنس برسوں سے ان کے خاندان کی پہچان ہے۔ ماہ صیام کی آمد سے پہلے ہی فضلیت بیگم خاندان کے دیگر افراد کے ساتھ مل کر باقاعدہ طور پر منصوبہ بندی کرتی ہیں کہ رمضان میں کن کن گھروں سے زکوة اکٹھی کرنی ہے۔ کون سی مساجد کے باہر بیٹھنا ہے اور کن ٹی وی چینلز کی سحروافطار کی ٹرانسمیشنز میں شرکت کرکے اپنا بینک بیلنس بڑھانا ہے۔

Read more

چھے سال کے آنسو

میرے گھر سے کچھ ہی فاصلے پر ماڈل ٹاٶن کا قبرستان ہے۔ چھے سال پہلے میرے لئے بھی یہ ایک عام سا قبرستان تھا۔ گو کہ اس قبرستان میں ہمارے خاندان کی بہت سی قبریں ہیں مگر ان قبروں پر سال میں ایک آدھ بار معمول کے انداز میں فاتحہ خوانی کرنے کے بعد میں گھر لوٹ جاتی تھی۔ یہ قبرستان مجھ سے باتیں نہیں کرتا تھا اور نہ ہی اس کے درودیوار میرے رازدان تھے۔ پھر یوں ہوا کہ اس شہرِ خاموشاں میں ایک نئے مکین کا اضافہ ہو گیا۔

Read more

لائٹ ہاٶس یا پھر لائف بوٹ

کچھ کتابیں محض کتابیں نہیں ہوتیں یہ زندگی بچانے والے ہاتھ ہوتے ہیں۔ لائٹ ہاٶس کی مانند روشنی دکھانے والے مینار ہوتے ہیں یا پھر لائف بوٹس کہلانے والی وہ کشتیاں جن کا کام ہی ڈوبتے ہوے لوگوں کو کنارے پر لے جانا ہوتا ہے۔ صوفیہ کاشف کی کتاب گہر ہونے تک کا شمار بھی ایسی ہی کتابوں میں ہوتا ہے جو مایوسی کے اندھیروں میں روشنی کا کام کرتی ہیں۔ کتاب کا سرورق نہایت عمدہ ہے۔ کتاب کھول کر ابھی میں ایک متاثر کن پیش لفظ پڑھ کر فہرست کا جائزہ لے ہی رہی تھی کہ اچانک سے سڈنی شیلڈن میرا ہاتھ پکڑ کر مجھے اس دنیا میں لے جاتا ہے جہاں جگہ جگہ اس کے آنسو اور مسکراہٹیں بکھرئی ہوئی ہیں۔

Read more