کیا سیاسی کارکن قومی سلامتی کے دشمن ہیں؟

محترم وسعت االلہ خان نے قومی سلامتی پلس کے زیر عنوان لکھا تھا کہ، ’ وہ دن ہوا ہوئے جب قومی سلامتی کو لوگوں سے خطرہ تھا، آج لوگوں کو قومی سلامتی سے خطرہ ہے‘۔ خیال آیا کہ وطن عزیز کے تناظر میں قومی سلامتی کو دیکھا جائے کہ دراصل ہے یہ طوطی کس نقارخانے…

Read more

برف کی چادر میلی ہے

جب میں نے اسے پہلی بار دیکھا تو خوفزدہ ہونے کی بجائے شدید حیرت میں مبتلا ہوا تھا۔ میری عمر یہی کوئی آٹھ نو برس رہی ہو گی۔ یہ تو بعد لوگوں نے بتایا تھاکہ اسے پہلی بار دیکھنے پر خوفزدہ ہونا ایک فطری تقاضا تھا۔ اب معلوم نہیں اس عمر میں شعور فطری تقاضا…

Read more

بے غیرت خاموش ہیں

من میں درد کا سیل رواں بہنے کو ہو۔ وطن کی ہواﺅں میں چیختی آوازوں سے نشیمن کے تنکے سلگ اٹھنے کوہوں توایسے میں کیا کیجیے؟ وقار ملک کو فون کیجیے کہ فطرت کا نگار خانہ کھول کر جینے کی امید دلائے گا۔ فطرت اورمٹی کی محبت و نکہت ہر انسان میں کہیں نہ کہیں…

Read more

پپو یار تنگ نہ کر

  لکھنے کو ویسے تو ہزار موضوعات دستیاب ہوتے ہیں پر گاہے طبیعت پر ایک بے معنی سا گریز چھا جاتا ہے۔شہزاد احمد کے بقول، ’ہمارے شہر میں ہے وہ گریز کا عالم‘ کہ اس میں اظہار کے کم و بیش سارے قرینوں پر خواہی نا خواہی بندشوں کا بھی اثر ہے۔ اور دوسرا یہ…

Read more

مستقبل کا ایک امتحانی پرچہ

مردان کے تحصیل کاٹلنگ کے ایک پرائمری سکول کی ویڈیو اس وقت سوشل میڈیا پر گردش میں ہے۔ اس ویڈیو میں سکول کے بچے تقریب انعامات کے پروگرام میں ملک کی حکمران سیاسی جماعت، تحریک انصاف کا پارٹی ترانہ گا رہے ہیں۔ خبر یہ ہے کہ کھوئی برمول کے سرکاری سکول انتظامیہ نے اس تقریب…

Read more

غزالاں تم تو واقف ہو، نہ جنوں رہا نہ پری رہی

یہ ہسپتال کا ویٹنگ ایریا تھا۔ میری بالکل ساتھ والی کرسی پر ایک نوجوان بیٹھا تھا۔ اس کے بعد والی کرسی پر ان کی قدرے زیادہ بوڑھی والدہ بیٹھی تھیں۔ ان کے بعد ایک نوجوان لڑکی بیٹھی ہوئی تھی۔ گفتگو سے اندازہ ہوا کہ لڑکی اسلام آباد میں ہی رہتی ہیں۔ سی ایس ایس کا امتحان پاس کر چکی ہیں اور سائیکلوجیکل ٹیسٹ کی منتظر ہیں۔ لڑکا والدہ کو غالباً راولپنڈی یا کم از کم گوجر خان سے لے کر آیا ہے۔ ابھی ان کا نمبر نہیں آیا تو انتظار میں ہیں اور آپس میں گفتگو کر رہے ہیں۔

لڑکا لڑکی سے پوچھتا ہے، آپ کا سی ایس ایس کرنے کے بعد کس گروپ جانے کا ارادہ ہے؟
لڑکی: میں پولیس میں جانا چاہتی ہوں۔

لڑکا، : کیوں؟ فارن سروس اچھا نہیں ہے؟
لڑکی: بس میرا پیشن (passion ) ہے پولیس میں جانا۔

Read more

قہوے کا فلسفہ، سیکولرازم کا کفر اور دانش کا جنازہ

بہت سے عام دنوں کی طرح یہ بھی ایک عام دن تھا۔ کچھ دوست احباب چائے کی محفل پر جمع ہوئے اور ملکی سیاست پر بات شروع ہوئی۔ بات بڑھتے بڑھتے سیاسیات سے فلسفے کی حدود میں داخل ہو گئی۔ ایسے میں ایک معزز دوست نے ایک باریک نکتہ بیان کیا۔ فرمانے لگے ’ سیکولرازم…

Read more

پنجابی بزدل نہیں اور پٹھان چور نہیں

بھائی صاحب۔ عرض یہ ہے کہ لفظ پنجابی، بلوچ، سندھی، پٹھان اور اس قبیل کے دیگر الفاظ کو ہمارے ہاں بہت سطحی انداز میں مجموعی تناظر میں غلط اور ایک دوسرے سے کم تر اور برتر کے معنوں میں برتا جاتا ہے اس لئے چند باتوں کی تفصیل جان لینا ضروری ہے۔ آپ کو شاید…

Read more

نانا نفرت نہیں کرتے تھے!

 نانا جی کسی اور ہی دنیا کے باسی تھے۔ شاید اس دنیا کی خوبصورتی بیان کرنے کے لئے معروف استعاروں سے کچھ زیادہ کی ضرورت ہے۔ خوبصورت، حسین ، تابناک، خواب ناک اور رنگوں سے مزین جیسے استعارے اپنے مفاہیم میں تو اپنے قد کے برابر ہیں مگر نانا کی دنیا میں بونے ہیں۔ معلوم…

Read more

بانکے کبوتر، کولھو کا بیل اور نیل کنٹھ

سولہویں صدی کا ابتدائی دور ہے۔ یورپ نشاة ثانیہ کے کشمکش سے نبرد آزما ہے۔ پاپائیت اپنی بقا کی آخری سانسوں پر ہے۔ لیونارڈو داونچی مونا لیزا کی مسکراہٹ تخلیق کر چکا ہے۔ ’دی لاسٹ سوپر‘ میں یسوع مسیح کی آخری ضیافت کی منظر کشی ہو چکی ہے۔ جس میں یسوع مسیح اپنے حواریوں سے…

Read more