ایویں مار نہ شاکر قسطاں وچ

عجیب زمانہ ملا ہے ہمیں جینے کو۔ اطلاعات ہیں کہ مینہ کی طرح برستی ہیں۔ اب کس کس خبر کی تحقیق کی جائے کہ سچ ہے یا جھوٹ۔ سچ یہ ہے کہ جھوٹ بھی جب کانوں سے ٹکراتا ہے تو سننے والے پر اثرات بہرحال مرتب کرتا ہے۔ بہرحال انفرمیشن کا یہ برستا پانی جب…

Read more

لال خان مالی

اس سلگتی سہ پہر میں سب کچھ وہیں تھا۔ پیڑ، پودے، گھاس، مٹی، کیاریاں۔ کچھ نہیں تھا تو زندگی کا احساس۔ ایک مردنی سی تھی، جیسے کوئی نزاع کے عالم میں نڈھال ہچکیاں لیتے ہانپتا ہو۔ انجیر، جامن، انار، آم کے تینوں پیڑ اور وہ دو بڑے سے درخت جو دن بھر ہری ہری نبولیاں سی اپنے نیچے بچھی گھاس پر گرایا کرتے ہیں، یہ آٹھوں تو خیر ہوش و حواس میں تھے کہ ان کی جڑیں دور زمین کے اندر سے نمی تلاش لاتی ہیں مگر دھنیا، پودینہ، ہری مرچوں، بینگن، ٹماٹر اور کئی قسم کے آرائشی پھولوں کے نازک نازک پودے برے حال میں تھے۔ ان کے پتے اور پھول لاغر ہو کر زمین کے رخ سر نیہوڑائے ہوئے تھے۔ کیاریوں میں دھول اڑتی تھی اور گھاس کی پھیکی ہریاول کے بیچ بیچ سے پیاسی زمین جھانکتی تھی۔ نہ کوئی تتلی، نہ بھنورا، ویرانی تھی اور زندگی کی راہ دیکھتا اضمحلال۔ یہ عید کا تیسرا دن ہے اور میرے گھر کے چمن کا نقشہ۔

Read more

کچھ دور اپنے ہاتھ سے جب بام رہ گیا

جتنے منہ ہیں، اگر گنے جاسکیں تو اتنی ہی باتیں۔ سوشل میڈیا کی والز پر وہ بھی طیارہ گرنے کے اسباب پر تکنیکی آراء دے رہے ہیں جنہوں نے کبھی جہاز چھو کر نہیں دیکھا۔ پائلٹ کی غلطی تھی، اڑان کی اجازت دینے سے قبل، سینتالیس ہزار ایک سو آٹھ گھنٹے پرواز کر چکنے والے طیارے کی مناسب پڑتال نہیں کی گئی، پرندے وجہ بنے یا کوئی دیگر معاملہ تھا، ان سب امور پر تحقیقات ہونی چاہئیں اور تادیب کی کارروائیاں بھی مگر ایک اور پہلو بھی بڑا اہم ہے۔

Read more

وبا کے دنوں کا رمضان

ایک زمانہ ہونے کو ہے آوارہ گردی اور بیٹھکوں کا شوق موقوف ہوئے۔ اب گھر میں سوا قرار ملتا ہے اور آسودگی۔ وگرنہ کوئی دن تھے کہ ملتان نامی اس شہر قدیم کی شب کا دوسرا، تیسرا پہر ہمیں شہر کی راہوں، شاہ راہوں کا سینہ روندتے پاتا یا پھر کسی شب زندہ دار چائے خانے کی نیم شکستہ کرسیوں اور بنچوں کی پشت پر۔ دو تین وجوہات ہیں اس کایا پلٹ کی۔ ایک تو وہ جو ندیم ہائے دیرینہ تھے اور راز داران شب و روزینہ، پتہ نہیں انہیں کیا جلدی تھی کہ قریباً سب کے سب ہی موت کا جام چڑھا گئے۔ اب آوارہ گردیوں میں قدم سے قدم ملانے والا کوئی نہیں رہا ماسوائے ملک فیاض اعوان کے، اللہ پاک اسے صحت و تندرستی کے ساتھ تادیر سلامت رکھے۔

Read more

ایک مکالمہ: کیا تم اگلی زندگی پر یقین رکھتے ہو؟

انسان جب موت کو لبیک کہتا ہے تو کیا ہوتا ہے؟ وہ کہاں چلا جاتا ہے؟ کیا پھر سے کسی صورت میں کوئی زندگی اس کی منتظر ہوتی ہے؟ یہ ایسے سوال ہیں جن کے جواب انسانی عقل و دانش ایک مدت سے تلاش کررہی ہے۔ اتنے طویل علمی سفر کے بعد تین چار بڑے بڑے نظریات سامنے آئے ہیں۔ ایک تو مذہبی ہے جو زرتشت سے لے کر ادیان ابراہیمی تک مماثل چلا آتا ہے کہ دنیا دارالامتحان ہے، یہاں اپنے عمل سے جو لکھا اس کے نتائج ایک خاص دن کو نکلیں گے جب پھر سے زندہ کر کے اٹھایا جائے گا، پھر جنت یا جہنم کی مکانیت اور ایک لامحدود زندگی۔

Read more

روزے: گر قبول افتد۔ ۔ ۔ ۔ ۔

یہ سطریں آپ کی نظروں کا التفات پاتی ہیں تو رمضان اپنا نصف سفر مکمل کرچکنے کو ہے۔ ایک اور رمضان بیت جانے کو ہے اور میں اپنا گریبان کھولے اندر جھانکتا ہوں۔ یہ سینہ کبھی بے بال تھا، پھر اس کے مساموں سے بال پھوٹے اور اب تو ان بالوں کو وقت کی دھوپ سہتے اتنی مدت ہوگئی کہ ان میں سے اکثر کا رنگ زائل ہوکر سفید پڑگیا ہے مگر اس ڈھیر سارے دورانیے میں آنے والے اتنے سارے رمضان ہائے کی وہ قدر مجھ سے نہ ہوسکی جو ان کا حق تھا۔

Read more

اعتماد کا قتل

سنتے ہیں کہ زمانہ ماقبل تاریخ میں مادرسری نظام ہوا کرتا تھا کہ جس میں عورت حکمراں تھی اور مرد محکوم۔ ہوتا ہوگا، جو زمانہ ریکارڈ پر ہی نہیں اس کے بارے جو جی میں آئے کہتے رہئے، مگر معلوم تاریخ بتاتی ہے کہ مرد کا ہر روپ جبر سے عبارت ہے۔ خاوند، باپ، بھائی…

Read more

کرونا، لاک ڈاؤن اور اذانیں

ملک میں لاک ڈاؤن کو دو دن اوپر ایک ماہ پورا ہو چکا ہے۔ پابندی کی زنجیریں پڑی ہوں تو وقت بھی جیسے رک سا جاتا ہے۔ یوں لگتا ہے کہ ساری عمر گویا اسی کیفیت میں گزر گئی۔ وہ دن زندگی کا حصہ ہی نہیں لگتے جب ہم آزادانہ گھوما کرتے تھے، ہر سطح…

Read more

ہم بڑے ہو گئے

مسکراہٹ، تبسم، ہنسی، قہقہے سب کے سب کھو گئے ہم بڑے ہو گئے ذمہ داری مسلسل نبھاتے رہیں بوجھ اوروں کا خود ہی اٹھاتے رہیں اپنے دکھ سوچ کر روئیں تنہائی میں محفلوں میں مگر مسکراتے رہیں کتنے لوگوں سے اب مختلف ہو گئے ہم بڑے ہو گئے اور کتنی مسافت ہے باقی ابھی زندگی…

Read more

اللہ کریسی چنگیاں

مجھے نہیں پتہ کہ قضا و قدر بارے آپ کے خیالات کیا ہیں اور قسمت، نصیب ایسی اصطلاحات پر آپ کس قدر یقین رکھتے ہیں۔ تاہم میں نصیب کو مانتا ہوں۔ یہ مجھے میرے تجربات نے سکھایا ہے۔ ہمارے ایک کالم نگار دوست کا تو فتویٰ ہے کہ انسان سب کچھ کتابوں سے سیکھتا ہے…

Read more