پروپیگنڈہ کیا ہوتا ہے اور یہ کرتا کیا ہے؟

آئیے، پہلے جانتے ہیں کہ پروپیگنڈے کی اہمیت کیا ہے۔

یووال ہریری کی کتاب، ہومو سیپئنز، اک حیران کر دینے والی کتاب ہے۔ اس میں انسانی ارتقاء کی داستان کے علاوہ، منظم معاشرے اور منظم ریاست کی پُرکاریوں پر بھی بہت عمدہ اشارے موجود ہیں۔ اپنی کتاب میں وہ لکھتے ہیں کہ ہومو سیپئنز اصیل افریقن تھے اور اپنے ارتقاء کے عمل کے دوران ان میں موجود چند طاقتور افراد نے بنیادی طور پر اپنی طاقت اور کنٹرول کی حرکیات (The dynamics of power and control) کو دوام بخشنے کے لیے مختلف مقدس نظریات تخلیق کیے۔

Read more

جنرل قمر جاوید باجوہ صاحب کے نام کھلا خط

محترم جناب جنرل باجوہ صاحب:

آپ نومبر 1960 کی پیدائش ہیں، اور میں ستمبر 1972 کی۔ آپ کی اور میری عمر میں محض 12 برس کا ہی فرق ہے۔ مگر آپ کے اور میرے جہانوں میں فرق سات زمینوں اور سات آسمانوں سے بھی زیادہ ہے۔ آپ جہاں ہیں، وہاں خوش ہیں۔ میں جہاں ہوں، میں بھی وہاں بہت خوش ہوں۔ آپ کے نام پہلے بھی دو خط لکھنے کی جسارت کی، تیسرا بھی اسی لیے لکھ رہا ہوں کہ آپ کے اور میرے درمیان مراتب کے بے پناہ فرق کے باوجود، آپ کی اور میری جنریش ایک ہی ہے۔ کیونکہ جنریشن گیپ کی کلاسیکی تعریف، اک نسل کو تقریبا 30 برس پر محیط رکھتی ہے۔

Read more

شکریہ عمران خان: جنرل حاجی ضیا کا دور یاد آ گیا

کافی دنوں سے کچھ لکھا نہیں تو سوچا کہ ایویں میں پڑھنے والوں کو متاثر کرنے کی خاطر، اک عہد ساز امریکی ماہرِ عمرانیات، ایلون ٹافلر کا اک قول ہی سناتا چلوں (ماخوذ): سیکھنے سے زیادہ مشکل، سیکھے ہوئے کو ان-سیکھنا ہوتا ہے اور اس سے بھی زیادہ مشکل، دوبارہ سے اور درست سیکھنا ہوتا…

Read more

لڑکیاں شادی کب کریں؟

یہ خیال میں اپنی دونوں بیٹیوں، یسریٰ فاطمہ اور نور فاطمہ کے نام کرتا ہوں۔ مجھے ابھی تک باپ-بیٹی سے زیادہ خوبصورت رشتے کی تلاش ہے۔ اس تلاش میں، میں ناکام ہوں اور سوچ کا اک گوشہ کہتا ہے کہ میں ناکام ہی رہوں گا۔ ہمارے معاشرے کے بہت دلدر ہیں۔ بہت۔ شاید ہر اس…

Read more

پاکستانیو: نوکریاں آ نہیں رہیں، نوکریاں جا رہی ہیں!

آئیے کہ کچھ زمین کی سطح کے سچ پڑھتے ہیں۔

اسلام آباد میں اک جاننے والے، احمد مشہود صاحب، ایڈورٹائزنگ ایجنسی اور کمیونیکیشن کی خدمات والے کاروبار سے منسلک ہیں۔ سیلف میڈ آدمی ہیں اور اک لمبے عرصے کی جدوجہد کے بعد کاروبار اور مقامی معیشت میں اپنا نام بنایا ہے۔ کوئی دس دن قبل انہیں اک سخت فیصلے کا سامنا تھا: سٹاف میں کمی کریں یا تنخواہوں میں؟ ان کا اکثریتی سٹاف، ان کے ادارے جتنا ہی پرانا ہے، تو ان کو ملازمت سے نکالنے کا حوصلہ نہ تھا، مگر پچھلے ایک سال کی عظیم انقلابی حکومت کی شاندار معاشی پالیسیوں کی وجہ سے ادارے میں کاروبار اور معاش کی اتنی موجودگی باقی نہ تھی کہ اسی تعداد کے ساتھ کام چلایا جاتا رہے۔

Read more

مفتی پوپلزئی، پشتون معاشرت اور کیلا ریاست

اب ”پوپلزئی“ کے بارے میں کہا جا سکتا ہے کہ ”نام ہی گارنٹی ہے“ ایک دن پہلے چاند کی!
مگر بظاہر اس سادہ سے نظر آنے والے تماشے میں، جو کہ صرف رمضان اور عید کے موقع پر ہی لگتا ہے، کئی سنجیدہ اشارے اور اعشاریے چھپے ہوئے ہیں۔

اس طرف مگر جانے سے قبل پوپلزئی بریگیڈ کے جانثاران سے پوچھنا مگر یہ ہے کہ ایک دن پہلے چاند کا جھگڑا باقی کسی اسلامی مہینے میں کیوں ظاہر نہیں ہوتا؟ رمضان و شوال کے علاوہ خیر سے دس مہینے مزید ہیں اسلامی، ان دس مہینوں میں چاند اتفاق کی چاندنی لیے کیوں ہوتا ہے؟ چاند بدل جاتا ہے، یا ویسی اشتہار بازی ملنے کی امید نہیں ہوتی جیسی رمضان و شوال کے مواقع پر ممکن ہوتی ہے؟ اس سارے قضیے میں بنیادی طور پر کون فائدہ اٹھا رہا ہے؟ مذہب کے اس ظاہری کسٹرڈ میں کس کس کے معاشی، سیاسی اور معاشرتی فوائد کی انگلیاں موجود ہیں؟

Read more

پی ٹی ایم کا کیا بنے گا؟

بحیثیت اک پنجابی، جب بھی بلوچ اور پشتون معاملات پر لکھا، بلوچ اور پشتون دوستوں کی جانب سے اکثریتی تبریٰ ہی موصول ہوا۔ لِکھ اور بول اس لیے دیتا ہوں کہ بلوچستان اور خیبر پختونخوا میں رگڑا کھانے اور بسا اوقات اپنی جان سے بھی چلے جانے والوں میں سے اکثریت مجھ جیسا ہی غربت، محرومی اور اک مسلسل کوشش کا سا پس منظر رکھتی ہے۔ بحثیت پنجابی قوم کے اک فرد، میں بلوچوں اور پشتونوں سے اگر کوئی تعلق نہ بھی بنا پاؤں، تو مارکسسٹ نظریہ یہی کہتا ہے کہ خود کو ایک ہی قوم کا فرد سمجھنے کے لیے سماجی، معاشرتی اور معاشی حوالہ جات کے مشترکات ہی کافی ہوتے ہیں۔

Read more

تحریک انصاف کی بیکار حکومت اور مسلم لیگ کی مزید بیکار اپوزیشن

مسلم لیگ نواز کو اب خود پر مسلط کردہ مسلسل سوگ کی کیفیت سے باہر نکلنا چاہیے اور اپنے لیے کوئی راہ متعین کر لینی چاہیے کہ کرنا کیا ہے۔

تصادم کی جس راہ پر ان کا خیال ہے کہ چل کر وہ پاکستان میں کوئی بہت بنیادی سیاسی، شہری اور جمہوری تبدیلی لا سکتے ہیں، تو یہ مکمل خام خیالی ہے، پاکستان کی شہری و دیہاتی سیاسی سماج نظریاتی طور پر تشکیل شدہ ہے ہی نہیں کہ جس میں عوام اور شہری اپنے آپ کو کسی بھی نظریہ کے ساتھ جڑا ہوا محسوس کرتے ہوں اور اس نظریہ کے تحفظ کے لیے وہ اندرونی جبر اور استبداد کی کسی بھی قوت کے سامنے اپنی جماعت کے لیے اٹھ کھڑے ہوں۔

یہ ممکن نہیں!

Read more

مسلسل تفریح پر مائے گارڈ، مائے لارڈ اور مائے ہینڈسم کا شکریہ

دنیا سے بانوے کو پیارے ہو جانے والے اک عظیم روحانی دانشور کے بقول، پاکستانی دنیا کی تیسری ذہین ترین قوم ہیں۔ ذہانت کے نالہ لئی چونکہ ہر طرف اور ہر روز ہی بکھرے دیکھنے کو مل جاتے ہیں تو افسوس ہوتا ہے کہ یہی قوم تیسرے نمبر پر ہونے کے ساتھ ساتھ پہلے اور دوسرے نمبر پر متمکن کیوں نہیں ہے۔ شاید کہ بانوے والوں کے تیل کے سرور میں، یہی عظیم روحانی دانشور یہ کام بھی کر گزریں۔

Read more

پی ٹی ایم اور ریاست کی سرخ لکیر

آج جناب آصف غفور صاحب نے پی ٹی ایم کو افغانستان اور انڈیا کی جانب سے فنڈنگ دینے کے حوالے سے واضح بات کر کے اک سرخ لکیر کھینچ دی ہے۔ میں پی ٹی ایم کا کبھی بھی معترف نہیں رہا، اور شروع دن سے اس بات کا اک سیاسی اندازہ رکھتا تھا کہ یہ…

Read more