گجرات کی صحافت کا مشتاق ناصر رخصت ہو گیا

سابق صدر پریس کلب گجرات اور روزنامہ جنگ کے سابق نمائندہ خصوصی مشتاق ناصر طویل علالت کے باعث انگلینڈ میں انتقال کر گئے۔ ان کی عمر 67 برس تھی۔ انا للہ وانا الیہ راجعون۔ انکے فیملی ذرائع اور برادر نسبتی احمد شیراز نے تصدیق کی ہے کہ جگر اور سانس لینے میں دقت کے باعث ایک…

Read more

نیویارک میں کورونا رات کو سوتا ہے

آج کل کرونا کی وبا کے دنوں میں جب مجھ سمیت سبھی اپنے آپ کو گھروں میں قید کیے بیٹھے ہیں۔ ایسے میں، میں رات دیر گئے سیر کے لیے باہر نکلتا ہوں۔ اس گمان کے ساتھ کہ کرونا تو دن کے وقت ہوتا ہے۔ رات کو تو وہ آرام کرتا ہے اور خوب نیند…

Read more

نیویارک میں میرے چینی مسافر اور کرونا کا خوف

آج سے دو ماہ قبل 13 مارچ کا دن تھا اور وقت تھا رات دس بجے کا، جب اوبر کے ساتھ کام کے دوران میں نے ایک پسنجر کو نیویارک کے جے ایف کے ائرپورٹ کے ٹرمینل فور پر ڈراپ کیا۔ کہانی آگے بڑھانے سے پہلے ذرا ان دنوں کے ایمرجنسی حالات کی تھوڑی سی بیک گراؤنڈ بیان ہو جائے۔

یہ وہی دن تھے جب چین اور اٹلی میں تباہی پھیلانے کے بعد امریکہ میں کرونا وائرس کے نتیجے میں لاک ڈاؤن کے لیے دباؤ مسلسل بڑھ رہا تھا۔ تاہم ابھی تک نیویارک سمیت دیگر ریاستوں میں لاک ڈاؤن اور دیگر حفاظتی پابندیاں شروع نہیں ہوئیں تھیں۔

Read more

پروفیسر سید محفوظ علی شاہ : وزیر آباد کا ”ارسطو“ رخصت ہو گیا

رواں ہفتے میں نے گورنمنٹ سر سید ڈگری کالج گجرات میں سیاسیات کے سابق پروفیسر سید محفوظ علی شاہ کی خیریت دریافت کرنے کے لیے وزیر آباد ان کے گھر فون کیا۔ اور ان کے بڑے صاحبزادے سید ارشد علی شاہ (لیکچراراکنامکس، پنجاب کالج گجرات) سے بات ہوئی۔ سلام دعا کے بعد ان سے درخواست…

Read more

اپنے مرحوم کالج کی یاد میں (1963-2003)۔

سر سید احمد خاں نے بجا طور پر گجرات کی تعلیمی اور جغرافیائی حیثیت کو مدِنظر رکھتے ہوئے اسے خطہ یونان سے تعبیر کیا تھا۔ برصغیر پاک وہند کے مسلمانوں کے لیے گراں قدر خدمات کے اعتراف میں قیام پاکستان کے بعد یہاں تعمیر ہونے والے بہت سے تعلیمی اداروں کے نام سر سید احمد…

Read more

نیویارک میں موسمِ بہار

کرونا کے ڈر سے کئی دنوں سے گھر میں دبکے رہنے کے بعد آج چمکیلی دھوپ دیکھ کر رہا نہیں گیا۔ اور باہر نکل آیا۔ کرونا کا خوف اور دہشت اپنی جگہ مگر نیویارک میں آئی بہار اپنے پورے جوبن پر ہے۔ خوش رنگ پھولوں سے لدے درخت عجب سحر انگیز نظارہ پیش کر رہے…

Read more

جب خفیہ والوں سے واسطہ پڑا

1985ء کا سال تھا۔ میں ان دنوں بی اے کا امتحان دے کر فارغ تھا۔ وقت گزاری کے لیے واحد مشغلہ مقامی لائبریری سے نسیم حجازی کے ناول ختم کرنے کے بعد اب اگلی منزل رومانوی ناول تھے۔ محلے میں ہی رہائش پذیر میرے ایک دوست ندیم بی.ایس۔ سی کا امتحان دے کر فارغ ہوئے تھے۔…

Read more

نیویارک میں شب برات، بارش اور ایمبولینس

امریکہ میں اس وقت سات اور آٹھ اپریل کے موسمِ بہار کی درمیانی شب ہے۔ اور یہ شب، شبِ برات ہے۔ مسلمانوں کی اکثریت اپنے من کی مرادیں پوری ہونے، اپنے گناہوں کی بخشش اور آئندہ سال کے لیے خوش بختی کی دعاؤں میں مصروف ہوگی۔ کتنی ستم ظریفی ہے کہ اس سال کی شبِ برات…

Read more

کرونا نے امریکہ کی دھلائی کر دی ہے

کرونا کے نام سے آشنائی مجھے کوئی بیس سال پہلے امریکہ میں آ کر ہوئی تھی۔ وہ بھی اس طرح کہ شروع شروع میں جس سٹور پر بھی کام پر لگے وہاں دیگر مصنوعات کے ساتھ ساتھ نہ چاہتے ہوئے بھی امریکہ میں موسٹ پاپولر بئیر ”کرونا“ بھی سیل کرنا پڑتی تھی۔ اس کے علاوہ بہت بعد میں معلوم ہوا کہ امریکی ریاست کیلیفورنیا کے ایک شہر کا نام بھی کرونا ہے۔ ورنہ پاکستان میں تو ہم صرف ”کراؤن سینما“ کے نام سے ہی واقف تھے۔

Read more

سال 2019 : ریکارڈ 7957 پاکستانی طلباء امریکہ پڑھنے کے لیے گئے

گزشتہ چند سالوں، خصوصاً ڈونلڈ ٹرمپ کے صدر منتخب ہونے کے بعد سے امریکی امیگریشن قوانین میں دن بدن سختی اور تبدیلیاں لائی جا رہی ہے۔ جن کے اثرات امریکہ آنے والے تمام ممالک کے باشندوں پر پڑے ہیں۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق مسلم کمیونٹی کے مختلف حلقوں کی جانب سے نئے قوانین سے متعلق…

Read more