ہے اپنا دل تو آوارہ۔ نجانے کس پہ آئے گا؟

ہائے سچی بات اتنی سی ہے کہ اس ظالم دل کو کسی پہ نہیں، مجھ پہ صرف مجھ پہ آنا چاہیے۔ ”چور مچائے شور“ یہ سب چور اسی لئے شور مچا رہے ہیں کہ یہ دل کا معاملہ ہے۔ صدیوں محنت کے بعد جس کوغلا م بنا کر، آپس میں لڑا کرکے، ایک دوسرے کے خلاف نفرت پیدا کر کے، ان عورتوں کو ایک دوسرے سے دورکر دیا۔ جبکہ سب نے بچپن میں پڑھا ہوا ہے ”اتقاق میں برکت ہے“ مگر اب یہ عورتوں کے اتفاق میں اتنی بے برکتی کیو ں دکھائی دے رہی ہے؟کس بات کا خوف ہے؟ جس کھلاڑی کوآج ہم نے وزیر اعظم بنایا ہے۔ یہ الزام تو اس کے سیاسی جلسو ں پہ بھی تھا۔ اب اتنے ماہ کتنے ایسے میلے دیکھ لئے آپ نے؟

Read more

بیٹی کا جہاں اور ہے، بہن کا جہاں اور

آج کے اس مبارک دن پہ پیش کرنے کو میرے پاس پھول نہیں ہیں کیو نکہ کوئی گما ن میرے خوابوں میں نہیں سویا کہ کوئی دن بھی ایک عام عورت کا دن ہے۔ اس لئے آج بھی چند دکھ بھری کہا نیاں ہیں۔ کہ بیٹی کا جہاں اور ہے، بہن کا جہا ں اور۔

”میرے پاس بتیس روپے تھے جب میں گھر سے نکلی۔ میرا میٹرک کا زرلٹ آیا تھا۔ کالج میں داخلہ لینا چاہتی تھی کہ رات کے وقت میرے بھائیوں نے میرے منہ پہ تکیہ رکھ کر مجھے مارنے کی کوشش کی۔ رات بہت تاریک تھی۔ میں کسی طور ان کے چنگل سے نکل کر باہر کی طرف بھاگی، میری بہن نے میری مدد کی اور وہ تلاش کرتے رہ گئے تاریک رات اور کھڑی فصل نے مجھے اپنی غوش میں چھپا لیا۔ اور صبح سے پہلے میں بس اسٹاپ پہ پہنچی اور پھر کبھی اس گھر نہیں گئی۔ آج میں پی ایچ ڈی اسکالر ہو ں۔ میرا گھر ہے۔ شوہر ہے بچے ہیں۔ اچھی جاب ہے“

Read more

جنگیں حکمت ِعملی اور جذبوں سے لڑی جاتی ہیں

جنگیں حکمت عملی اور جذبو ں سے لڑی جاتی ہے ہیں۔ اور حکمت عملی جذبات میں بہہ جانے کا نام نہیں ہے۔ لہذا یہ جو کچھ ہو رہا ہے۔ اس کو حکمت عملی کے باب میں رکھ کر سمجھئے سب سوالو ں کے جواب تاریخ کی کتاب میں خودبخود شامل ہو گئے ہیں۔ اب بات…

Read more

درویش نامہ

پاکستان کا مطلب کیا، مک مکا، مک مکا۔ ﷲ یہ میں نہیں کہا۔ یہ تو ایک کتاب کچھ دن قبل موصول ہوئی جس کا نام ہے ”درویش نامہ“ جس میں درویشی کا رنگ شگفتہ شگفتہ ہے۔ اور انتساب ”درویش“ کی مونث ”درویشی“ کے نام ہے۔ آئیے کتاب سے غزل سناتی ہوں۔ ہم کہ ٹھہر ے…

Read more

بچوں کی کامیابی کو کیسے یقینی بنائیں؟

ہم جب کسی بڑے سائنس دان، سیاست دان، مفکر، اداکار، ادیب، دانشور کو دیکھتے ہیں تو رشک کرتے ہیں اور خواہش و دعا کرتے ہیں کاش ہماری اولاد اس مقام پہ کھڑی ہو۔ اور ہمارا نا م روشن ہو جائے۔ اس کے ساتھ ساتھ وہ ایک خوش حال اور خوشگوار زندگی بھی گزارے۔ اس کے…

Read more

شادی دو لوگوں کا مسئلہ ہے

”ارے یار تم میرے بھائی کی شادی پہ بلا شبہ کپڑے مت پہننا، مجھے کو ئی اعتراض نہیں ہو گا“ بینا کھلکھلا کے ہنس پڑیں ”او سچی۔ “ ”رابعہ شادی اصل میں دو لو گوں کا مسئلہ ہے جسے ہم نے سوسائٹی کا مسئلہ بنا دیا ہے۔ تین دن بعد ہاتھ میں طلاق کے پیپرز…

Read more

عمران بھائی (وزیر اعظم عمران خان) کے نام ایک کھلم کھلا خط

سلام عمران بھائی،

آپ قومی ہیرو تھے، ہیں اور ابھی بھی زیروساتھ لگنے سے قیمت میں کافی اضافہ ہو جاتا ہے۔ عمران بھائی پہلے تو راز کی بتاؤ ں کہ میں بھی پنکی جی سے بہت متاثر ہو ں اور ان سے استخارہ کرواناچاہتی تھی۔ مگر ان کے سابقہ استخاروں کی تعبیر نے مجھے بے حد خوف زدہ کر دیا ہے۔ لہذامیں نے ذاتی حد تک اس سے توبہ کر لی ہے۔ کیونکہ میں قوم جتنی بہادر و طاقت ور نہیں ہو ں۔

خیر عمران بھائی آپ ہماری نسل کے وہ ہیرو تھے کہ کسی ”لنگور عمران“ سے بھی اس دور میں کسی لڑکی کی شادی ہو جاتی تو وہ نکاح نامے پہ آپ کے تصور سے دستخط کر دیا کرتی تھی۔ اور اپنی سہیلیوں میں شرما کر کہا کرتی تھی کہ تمہارے بھائی جان کا نام ”عمران“ ہے۔ تب سے بہت سے مرد آپ سے حسد کرتے رہے ہیں۔ اب یہ وزیر، مشیر، فقیر آپ سے پرانی حسد کابدلہ لے رہے ہیں۔ مگر یہ بات خواب ختم ہونے کے بعد سمجھ آتی ہے۔ کہ انڈوں کی قیمت کیا ہوتی ہے اور مرغا کتنے انڈے دیتا ہے۔

Read more

نظریہ ضرورت

”ڈیئر سٹوڈنٹس سقوطِ ڈھاکہ 1971 ء میں بظاہر ہوا لیکن تاریخ پر طائرانہ نگاہ رکھنے والے اس کی جڑیں اور شاخسانے بہت دور تلاش کرتے ہیں۔ وہاں کہ جہاں بظاہر کوئی گمان بھی نہیں گزرتا۔ ۔ ۔ ۔ ۔ “ ”سر! یہ طائرانہ نگاہ کیا ہے؟ “ ”بیٹا جیسے پرندہ بہت آگے تک دیکھ سکتا…

Read more

عقل مند مرد، عقل کے ہاتھوں مارا جاتا ہے

آپ نے مشاہدہ کیا ہو گا کہ کم عقل مند اور ذرا بے وقوف مردوں کی زندگی مزے میں ہوتی ہے۔ ان کے آس پاس والے اکثر ان سے خوش نظر آتے ہیں۔ یہ اپنے ازدواجی اور محبوبائی معاملات میں بھی خوش نصیب ٹھہرتے ہیں۔ ان کی زوجہ اور محبوبہ ان سے خوش ہوتی ہیں۔…

Read more

شعبہ اردو جی سی یونیورسٹی لاہور اور شعبہ اردو انقرہ یونیورسٹی ترکی

دوروزہ عالمی کانفرنس

Spring of Wisdom and Love

یہ نومبر کی بہار تھی۔ نومبر دسمبر دو ایسے مہینے ہیں جو کسی ایک تاریخ کو تاریخ کا حصہ بنا دیتے ہیں۔ چودہ، پندر ہ نومبر بھی ایسے ہی دو دن تھے۔ جو تاریخ کو متاثر کرنے جارہے تھے۔ اگر مجھے اس تاریخ کو چند لفظوں میں قید کرنا ہوتا تو میں تب بھی کلاسیک کا سہارا لیتی۔ چارلس ڈکنز کے شہرہ آفاق ناول کے چند جملے اس کانفرنس کی منظر نگاری کے لئے کافی ہیں۔

It was the best of times…, it was the age of wisdom …, it was
the season of light…, it was the spring of hope….
….

Read more