پنجابی مولوی کی خصوصیات

پنجاب کا مولوی ایک باشعور، غیرتمند، قوم پرست، عزت دار اور اپنی قوم کا ہمدرد انسان ہے۔  وہ اپنی قوم کو ہر وقت محفوظ اور خوشحال دیکھنے کا خواہش مند ہوتا ہے اس لیے اپنی قوم کو دوسرے ممالک اور اقوام کے ایجنڈے کے بھینٹ نہیں چڑھاتا۔ وہ اپنی قوم کو شدت پسندی اور شدت…

Read more

پاکستانی ہم جنس پرست

پاکستانی اپنے ملک سے بے پناہ پیار کرتے ہیں، لیکن شرط یہ ہے کہ وہ خود پاکستان سے باہر ہوں۔ ملک کے اندر کھل کر ہر پاکستانی جی بھر کر سارا دن اس ملک کو کوستا ہے۔ پاکستان میں سب سے بڑی کامیابی بھی پاکستان سے نکلنے اور مغربی ممالک یا امریکہ میں سیٹل ہونے کو سمجھا جاتا ہے۔ ہر صاحب ثروت کوشش کرتا ہے کہ اپنے اور اپنے بچوں کے لئے بیرون ملک کوئی ٹھکانہ بنادے۔ ہر سیاستدان، حکومت اور لوٹ مار، یہاں کرتا ہے۔ لیکن اس کی خواہش ہوتی ہے کہ برطانوی امریکی یا کم از کم یورپئین نیشنلٹی اپنے اور اپنے خاندان کے لئے حاصل کرے۔ اور یہی صورت حال ان کرتا دھرتاؤں کی بھی ہے۔ جن کا نام لیتے ہوئے ہر کوئی ڈرتا ہے لیکن جن کا نام لئے بغیر بھی اب ہر کوئی جانتا ہے۔

Read more

انسانی رویوں کو تبدیل کرنے والے عناصر و عوامل

خوبصورت چہروں، لمبے چمکدار بالوں، تلوار کی طرح کاٹتی اور مقناطیس کی طرح کھینچتی مسکانوں کے مالک عورتیں اور مرد، جنہیں ہم روز مختلف اشتہاری فلموں میں ٹی وی سکرینوں اور بل بورڈوں پر دیکھتے ہیں۔ جنہیں نت نئے انداز میں، مختلف مصنوعات کی فروخت کے لئے اشتہاری کمپنیاں استعمال کرتی ہیں۔ ان کا حسن، طرحداری اور کشش ان کا ذاتی، فطری اور خدا داد ہوتا ہے۔ یہ جس شیمپو، صابن، کریم اور کولڈ ڈرنک کی تعریف کرتے ہوئے نظر آتے ہیں۔

Read more

چار شکست خوردہ تاریخی کردار اور پاکستانی سیاسی جنگ

عمران خان صاحب کو اللہ لمبی عمر اور سکون کی زندگی دے۔ ان کا مایوسانہ تاریخی اظہاریہ بڑا دل شکن ہے۔ تاریخ سب کو اچھی لگتی ہے۔ بس شرط یہ ہے کہ بندے کی اپنی تاریخ اچھی ہو۔ ہماری تاریخ، بہادر اور فتحیاب کرداروں سے بھری پڑی ہے۔ اگرچہ ان میں زیادہ تر نے ہمیں یعنی برصغیر کے باشندوں کو شکستیں دی تھیں۔ لیکن شکست خوردہ تاریخ تھوڑی لکھتے ہیں۔ تاریخ تو فاتحین کی کہانی ہے۔ اس لیے ہم اپنے بچوں کے نام، خود کو شکست دینے والے غیر ملکی حملہ آوراور فاتح سکندر کے نام پر رکھتے ہیں۔ اور اس کا ذکر کرتے ہوئے آج بھی پوری عزت کے ساتھ اسے سکندر اعظم کہتے ہیں۔ اور اپنے پنجابی ہم وطن پورس کا نہ پورا نام یاد ہے نہ قوم اور قبیلہ، اور نہ آج تک پورس کسی کا نام سنا ہے۔

Read more

تقسیم ہند کے بارے میں چند معلومات اور مسائل

ریڈکلف نے چار لاکھ پچاس ہزار مربع کلومیٹر کا علاقہ جس میں آٹھ کروڑ اٹھاسی لاکھ لوگ رہائش پذیر تھے، محض پانچ ہفتوں میں تقسیم کرنا تھا۔ اتنے دنوں میں تو لوکل پٹواری کی نگرانی میں ایک گاؤں کی تقسیم ممکن نہیں۔ پنجاب بارڈر اور بنگال بارڈر کے درمیان دو ہزار کلومیٹر کا فاصلہ ہے اور یہ دونوں علاقے ریڈکلف نے پانچ ہفتوں میں تقسیم کرنے تھے۔ وقت کی قلت کے علاوہ برسات اور گرمی کی وجہ سے سفر اور تقسیم کے مقامات تک پہنچنا ناممکن تھا۔ یاد رہے ریڈکلف زندگی میں پہلی دفعہ انڈیا آیا تھا۔ یہاں کی گرمی حبس اور برسات اس کے لئے ناقابل برداشت تھی۔

Read more

دس لاکھ جو سانس سے بھی آزاد ہو گئے

آزادی کی جشن کی خوشیوں بھرا، اگست کا مہینہ، برصغیر کے باشندوں کے لئے تباہ کن تاریخی حیثیت رکھتا ہے۔ اس مہینے میں تقرہبا دس سے بیس لاکھ بے گناہ لوگ اپنے ہم وطنوں کے ہاتھوں مارے گئے تھے۔ اگر ایک مردے کی لمبائی ساڑھے پانچ فٹ مان لی جائے۔ اور یہ ساری لاشیں لمبائی…

Read more

اب مسئلہ کشمیر نہیں رہے گا

لگتا ہے کشمیر کے دیرپا حل پر اتفاق ہوگیا ہے۔ عجیب سا لگتا ہے۔ ہے نا! جب کشمیر میں انڈین فوج کی تعداد اور کریک ڈاون بڑھنے لگے ہیں۔ اور کوئی ایسی بات کرے۔ تو عجیب ہی لگے گا۔ تبدیلی سرکار نے تبدیلیاں لانے کا جو ایجنڈا بنایا تھا۔ اس پر عملدرآمد ابھینیندن کے حملے اور پھر واپسی سے شروع ہوا ہے۔ ابھینیندن کی واپسی سے مودی کو الیکشن میں تقریبا واک اوور مل گیا ہے۔ اور وہ اس پوزیشن میں واپس اگئے ہیں کہ کشمیر کے حل کے سلسلے میں فیصلہ کن اقدامات اٹھا سکے اور ساتھ ساتھ اسے اندورن ملک زیادہ مخالفت کا سامنا بھی نہ کرنا پڑے۔

Read more

امریکی دورہ اور نیا دور

دورہ دل کو ہو یا امریکہ کا، اثرات دور رس ہوتے ہیں۔ دل کا دورہ ان کو پڑنے والا ہے جو امریکہ کو پاکستان کا دشمن سمجھ کر پاکستان دشمنی پر سیدھے اتر ائے تھے۔ سپر پاور چھوٹے چھوٹے پراکسی پریشر گروپ بناکر ان کے ذریعے کم قیمت پر کام نہ کرنے والے کمزور لیکن…

Read more

قومی بے عزتی پر بے حسوں کے شادیانے

شاہد خاقان عباسی صاحب بائیس کروڑ پاکستانیوں، چھ لاکھ فوج، سینکڑوں ایٹم بموں اور خطرناک میزائلوں کے ملک پاکستان کے وزیراعظم تھے۔ امریکہ کے دورے پر گئے تو امریکہ نے بیلٹ اتروا کر ان کی تلاشی لی۔ جو وہاں پر 9 / 11 کے بعد ہر کسی کی لی جاتی ہے۔ خاصکر پاکستان جیسے ضرورت…

Read more

مصیبت میں گھرے مہاجرین کو دیکھ کر اپنا ناشکرا پن دکھائی دیتا ہے

میں جانتا ہوں پنجابیوں کے مفادات سندھیوں بلوچوں اور پختونوں کے مفادات سے ٹکراتے ہیں اور یہی صورت حال دوسری طرف بھی ہے۔ لیکن میں نے اپنی انکھوں سے سیالکوٹ اور فیصل آباد کے پنجابی صنعتکاروں اور سرمایہ داروں کو سوات آپریشن کے دوران مردان کے سکولوں میں عارضی رہائش پذیر سوات کے پختونوں کے درمیان دولت سے بھری ہوئی بوریاں اور بریف کیس تقسیم کرتے ہوئے دیکھا ہے۔ تین جدید لینڈ کروزروں میں سوار بے نام پنجابی بلال مسجد کے قریب پرائمری سکول میں ائے سکول کے دروازے بند کروائے۔

ہرآئی ڈی پی سے ماہانہ راشن کا کوپن جمع کیا اور بدلے میں نقد رقم دیدی اور بعد میں راشن کے کوپن بھی واپس کردیے۔ ایسا ہی نظارہ صدی کے بدترین سیلاب کے بعد میں نے نوشہرہ کے سڑکوں پربھی دیکھا ہے۔ جب پنجاب کے دولتمندوں نے کسی پبلسٹی کے بغیر اپنی جیبیں اور بریف کیس سیلاب کے متاثرین میں خالی کردئے اور دعاؤں کی گھٹڑیاں لے کر پنجاب روانہ ہوئے۔

Read more