غلام نبی ”گُل“۔ سندھی اور اُردو کے قابلِ قدر ادیب اور دانشور

یہ ایک کڑوی حقیقت ہے کہ اس سر زمین کے بہت سارے عظیم انسان اپنی ستائش کی تمنّا نہ ہونے کے پیشِ نظر خود کو نمایاں نہ رکھنے کی غرض سے بہت سارے لوگوں اور ذرائعِ ابلاغ سے دُور رہنے کی وجہ سے اپنے کام کی وہ ستائش نہیں پاسکے، جو اُنہیں ان کے کام…

Read more

پانچویں سَمت [ سندھی افسانے کا اردُو ترجمہ ]

افسانہ: منوّر سراج         ترجمہ: یاسر قاضی * * * * * ”سنو! ؟ “ ”ہُوں! “ ”جاگ رہی ہو؟ “ ”ہاں۔ “ ”ایک بات تو بتاؤ۔ “ ”ہُوں۔ کہو! “ ”وہ کون تھا؟ “ ”کون وہ؟ “ ”وہ، جو آیا تھا۔ “ ”کون آیا تھا؟ “ ”کوئی تو تھا۔ “ ”پتا نہیں۔…

Read more

تیرا میرا مول

[ سندھی افسانے کا اردُو ترجمہ ] (تحریر: امر جلیل | ترجمہ: یاسر قاضی) ہمارے اڑوس پڑوس والوں نے جب سے ڈِیپ فریزر خریدے ہیں، تب سے عید الاضحی کے موقع پر انہوں نے پابندی کے ساتھ ایک عدد جانور کی قربانی کرنے کا سلسلہ شروع کیا ہے۔ عید سے کچھ دن قبل ان کا…

Read more

شیخ ایاز۔ وفات کی بائیسویں یاد

28 دسمبر 2019 ء کو سندھی جدید ادب کے امام سمجھے جانے والے سندھی اور اردو کے نامور شاعر اور دانشور شیخ ایاز کو ہم سے بچھڑے 22 برس مکمل ہوئے۔ اس حوالے سے آج کی تحریر میں شیخ ایاز صاحب کی زندگی و ادبی خدمات کا مختصراً احاطہ کرنے کی کوشش کروں گا۔ شیخ…

Read more

کالم کہانی: میاں صاحب باہر جا رہے ہیں؟

”شیدے! “ ”بول میدے۔ “ ”میاں صاحب جاسی؟ “ ”اردو میں بول ناں۔ “ ”تینوں تے پتا اے، مینوں اردو نئیں آؤندی۔ “ ”اور مجھے پنجابی نہیں آتی۔ “ ”میں پوچھ ریاں آں۔ میاں صاحب جا رہے ہیں؟ “ ”جا رہے ہیں۔ “ ”کب؟ “ ”بس دو ایک دن میں۔ “ ”واپس آنے کے لیے؟…

Read more

حضورِاکرمﷺ اور سندھ

سندھ کو ”باب الاسلام“ کہہ کر جان چھڑانے والے یہ نہیں جانتے، یا دوسروں کو نہیں جاننے دینا چاہتے، کہ اس خطّے میں اسلام کا ظہور عربوں کے حملے سے بہت پہلے ہی ہو چکا تھا، جس کی متعدد دلیلوں میں سے ایک واضح دلیل بھنبھور میں واقع ایشیاء کی سب سے پرانی مسجد ہے،…

Read more

سعید میمن۔ جدید سندھی ادب کے نمائندہ، جواں مرگ شاعر

ویسے تو ہر نفس کی موت کا ایک دم مُعیّن ہے، مگر سندھی ادب ماضی قریب میں یکے بعد دیگرے جن شخصیات کے داغ ہائے مفارقت سے دو چار ہوا ہے، اُن شخصیات کے خلا بھرنے میں طویل مُدّتیں درکار ہوں گی۔ پچھلے چند ایک برس میں جہاں ڈاکٹرموتی پرکاش، مقصودگل، عبدالواحد آریسر، منیرسولنگی، بشیرسیتائی،…

Read more

عقيدہ

”بابا!“ ”جی بیٹا!“ ”بابا، بہت ٹھنڈ لگ رہی ہے۔“ ”بیٹا! الله کو پُکارو!“ ”پھر سردی نہیں لگے گی بابا؟“ ”ہاں بیٹا! پھر ٹھنڈ اتر جائے گی۔“ ”تو پھر کیا بارش بھی بند ہو جائے گی؟“ ”ہاں بیٹا! بارش بھی رُک جائے گی۔“ ”اور بابا! ہماری جھونپڑی کے اندر بارش کا پانی بھی نہیں آئے گا؟“…

Read more

شاہ عبد اللطیف بھٹائی ؒ کا دو سال قبل تخلیق شدہ مجسمہ

ایک دور تھا، جب مجسمہ سازی کو دنیا کے باقی خطّوں کی طرح دُنیا کے یہاں بھی قدر کی نگاہ سے دیکھا جاتا تھا، اور قیامِ پاکستان سے قبل موجودہ پاکستان کی جغرافیائی حدُود میں آنے والے کئی شہروں کے چوراہوں پر مختلف شعبہ ہائے زندگی میں اپنی نمایاں خدمات انجام دینے والی شخصیات کو…

Read more

چار دُشنام [ سندھی افسانے کا اردو ترجمہ ]۔

( افسانہ نگار: جبّار آزاد منگی | ترجمہ: یاسر قاضی ) آج مجھے دو جرائم کا فیصلہ سُنانا ہے۔ آج مجھے انصاف کرنا ہے۔ ایک قتل کا جرم، جس جرم میں ایک غریب کسان ملزم ہے، جس کے بیل کی ٹکر سے گاؤں کے سرغُنے کا بیٹا ہلاک ہو گیا ہے۔ ملک کے قانون نے…

Read more